نیوز الرٹ
  • بریکنگ :- مرکز،ایئرڈیفنس جنگی پیچیدگیوں کےمطابق تشکیل اورتیاری میں معاون ہے،آئی ایس پی آر
  • بریکنگ :- پاک فوج کےایئرڈیفنس نےگزشتہ چندسال میں غیرمعمولی ترقی کی،آئی ایس پی آر
  • بریکنگ :- ایئرڈیفنس نظام ملکی فضائی سرحدوں کےتحفظ کیلئےتیارہے،آئی ایس پی آر
  • بریکنگ :- ایئرڈیفنس دشمن کی مہم جوئی سےنمٹنےکیلئےمہلک نظام ہے،آئی ایس پی آر
  • بریکنگ :- آرمی چیف نےجدیدترین سینٹرآف انٹیگریٹڈایئرڈیفنس بیٹل مینجمنٹ کاافتتاح کردیا
  • بریکنگ :- کمانڈرآرمی ایئرڈیفنس کمانڈلیفٹیننٹ جنرل حمودالزمان خان کی بریفنگ،آئی ایس پی آر
  • بریکنگ :- آرمی چیف کوایئرڈیفنس جنگی انتظام کےطریقہ کارسے متعلق آگاہ کیاگیا
  • بریکنگ :- پاک آرمی ایئرڈیفنس جدید،انتہائی درست،مہلک ہتھیاروں سےلیس ہے،آئی ایس پی آر
  • بریکنگ :- جدیدایئرڈیفنس جنگ میں اعلیٰ کمان سےانفرادی سطح پرہم آہنگی کوتقویت دےگا،آئی ایس پی آر
  • بریکنگ :- مرکزہتھیاروں کےنظام کےدرمیان مطابقت اورمربوط ماحول فراہم کرےگا
  • بریکنگ :- مرکزمیں سیمولیٹرکمپلیکس متحرک منظرناموں کوپیش کرنےکی صلاحیت رکھتاہے
  • بریکنگ :- آرمی چیف نےجوانوں کی پیشہ ورانہ صلاحیتوں کوسراہا،آئی ایس پی آر
  • بریکنگ :- آرمی چیف کاآپریشنل تیاریوں پرمکمل اطمینان کااظہار،آئی ایس پی آر
  • بریکنگ :- مستقبل کی جنگی پیچیدگیوں،چیلنجزسےنمٹنےکیلئےتعاون،ہم آہنگی ناگزیرہے،آرمی چیف
Coronavirus Updates

ڈاکٹر ماہا کیس ، زیادتی کی دفعات خارج کرنے کی درخواست مسترد

 ڈاکٹر ماہا کیس ، زیادتی کی دفعات خارج کرنے کی درخواست مسترد

دنیا اخبار

ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج کی عدالت نے ڈاکٹر ماہا شاہ کے مبینہ خود کشی کیس میں ملزمان کی جانب سے مقدمے سے زیادتی کی دفعات خارج کرنے کی درخواست مسترد کردی

کراچی (اسٹاف رپورٹر)پیر کو ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج جنوبی نے ملزمان ڈاکٹر وقاص رضوی اور ڈاکٹر جنید کی درخواست پر محفوظ کیا ہوا فیصلہ سنا دیا۔ عدالت نے فیصلے میں کہا کہ مقدمے میں زیادتی کی دفعات بھی فرد جرم میں شامل رہیں گی۔ جرم ثابت کرنا استغاثہ کی ذمہ داری ہے۔ ملزمان نے مقدمے سے زیادتی کے دفعات خارج کرنے کی درخواست دائر کی تھی۔ دائر درخواست میں موقف اپنایا گیا تھا کہ ایف آئی آر اور عبوری چالان میں زیادتی کے دفعات شامل نہیں تھیں۔ 7 ماہ بعد زیادتی کی دفعات شامل کی گئیں۔ ڈاکٹر ماہا کا پوسٹ مارٹم 72 روز گزرنے جانے کے بعد کیا گیا۔ ہائیکورٹ نے مقدمے سے ناقابل ضمانت دفعات ختم کیں تو پولیس نے زیادتی کی دفعات شامل کیں۔

Advertisement
روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں