نیوز الرٹ
  • بریکنگ :- کوئٹہ:وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال کاایوان میں اظہارخیال
  • بریکنگ :- یہ پہلی بارنہیں ماضی میں بھی عدم اعتمادکی تحریکیں آچکی ہیں،جام کمال
  • بریکنگ :- کوئٹہ:یہ سیاست کاحصہ ہےچلتاہے،وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال
  • بریکنگ :- جب حکومت میں ہوں توزیادہ ناراضگیاں ہوتی ہیں،جام کمال
  • بریکنگ :- تعلقات قائم رہیں گے،ہم ملتےجلتےرہیں گے،وزیراعلیٰ جام کمال
  • بریکنگ :- یہ سب سیاست کاحصہ ہےذاتیات تک نہیں جاناچاہیے،جام کمال
  • بریکنگ :- اپوزیشن کوساڑھے3سال سےگلےشکوےہیں،جام کمال
  • بریکنگ :- کوئٹہ:میں نہیں کہتاہم سب ٹھیک کررہےہیں،جام کمال
  • بریکنگ :- بلوچستان کےہرضلع میں کام ہورہاہے،وزیراعلیٰ جام کمال
  • بریکنگ :- کوئٹہ:سیاست میں کسی کواغوانہیں کیاجاتا،جام کمال
  • بریکنگ :- ناراض ارکان سےقلمدان واپس لےسکتےتھے،جام کمال
  • بریکنگ :- کسی کوناراض ہونےسےروک نہیں سکتے،وزیراعلیٰ جام کمال
  • بریکنگ :- رائےشماری کےروزہونےوالےفیصلےکوقبول کروں گا،جام کمال
  • بریکنگ :- کوئٹہ:میں استعفیٰ نہیں دوں گا،وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال
Coronavirus Updates

خسرہ،روبیلا سے بچائوکیلئے ویکسی نیشن مہم کاآئندہ ماہ آغاز

خسرہ،روبیلا سے بچائوکیلئے ویکسی نیشن مہم کاآئندہ ماہ آغاز

دنیا اخبار

15سے 27 نومبر تک مہم میں نوماہ سے 15سال تک کے بچوں کو ٹیکے لگائے جائینگے،طبی ماہرین سمیت 15ہزارسے زائد ورکرزحصہ لیں گے ، کمشنرکی زیرصدارت اجلاس

کراچی (اسٹاف رپورٹر) کراچی میں خسرہ روبیلا سے بچاؤ کے لئے ویکسی نیشن مہم 15 نومبر سے شروع ہو گی، یہ مہم عالمی ادارہ صحت، حفاظتی ٹیکوں کے لئے عالمی پارٹنر گاوی اور یونیسیف کے تعاون سے شروع کی جارہی ہے ۔کمشنر کراچی محمد اقبال میمن کی زیر صدارت منعقدہ جائزہ اجلاس میں مشن کے ارکان نے شرکت کی۔ انہوں نے کمشنر کو خسرہ کے پھیلاؤ کے خدشات سے آگاہ کیا اور اس سے بچاؤ کی منصوبہ بندی اور کراچی میں خسرہ بچاؤ مہم کی تفصیلات کے بارے میں بریفنگ دی۔ اجلاس میں ڈائریکٹر جنرل محکمہ صحت ڈاکٹر جمن بہوٹو، پی ڈی ای پی آئی ڈاکٹر ارشاد میمن، ایمر جنسی آپریشن سینٹر کے ارکان، محکمہ صحت کے سینئر افسران، اسسٹنٹ کمشنر جنرل اعجاز حسین رند اور دیگر بھی مو جو د تھے ۔ ویکسی نیشن مہم 15 نومبر سے شروع ہوکر 27 نومبر تک جاری رہے گی۔کمشنر کو بتایا گیا کہ نو ماہ سے پندرہ سال تک کے بچوں کو خسرہ اور روبیلا سے بچاؤ کے ٹیکے لگائے جائیں گے۔ طبی تکنیکی ماہرین اور لیڈی ہیلتھ ورکرز سمیت پندرہ ہزار سے زائد ورکرز کام کریں گے ۔ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ سرکاری اسپتالوں اور ای پی آئی کے دیگر مراکز پر ٹیکے لگائے جائیں گے۔ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ سیکیورٹی کے خصوصی اقدامات کئے جائیں گے۔ کمشنر نے ڈپٹی کمشنرز سے کہا کہ وہ مہم کی کامیابی کے لئے موثر کردار ادا کریں۔

Advertisement
روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں