نیوز الرٹ
  • بریکنگ :- وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت اجلاس
  • بریکنگ :- مریم نوازکی پیشی سےپہلےکچھ لوگوں کوالہام ہونے لگتا ہے،وزیراعظم
  • بریکنگ :- مافیااپنےبچاؤکیلئے رشوت دےگایابلیک میل کرےگا، وزیراعظم
  • بریکنگ :- بلیک میلنگ سےجویہ چاہتےہیں انہیں نہیں ملےگا، وزیراعظم
  • بریکنگ :- ہماری معاشی گروتھ (ن)لیگ کی طرح دکھاوانہیں،وزیراعظم
  • بریکنگ :- برآمدات بڑھ گئی ہیں خسارےختم ہو رہے ہیں، وزیراعظم
  • بریکنگ :- زرمبادلہ ذخائربلندترین سطح پرہیں ،آٹوسیکٹرخوشحال ہو رہا ہے، وزیراعظم
  • بریکنگ :- 4 فصلوں کی ریکارڈپیداوارہوئی،کسان حکومتی اقدامات سے مطمئن ہیں،وزیراعظم
  • بریکنگ :- (ن)لیگ جو 5 سال میں نہیں کرسکی ہم نے 3سال میں کردیا،وزیراعظم
Coronavirus Updates

سیالکوٹ واقعہ کی اعلیٰ سطح پر تحقیقات کرائی جائے، ثروت قادری

سیالکوٹ واقعہ کی اعلیٰ سطح پر تحقیقات کرائی جائے، ثروت قادری

ملزمان کاہنگامی بنیادوں پر ٹرائل کر کے سزا کے عمل کو فوری یقینی بنایا جائے،شدت پسندی کے خاتمے کے لیے عالمی سطح پر قوانین بنانے ہوں گے ،بیان

کراچی (اسٹاف رپورٹر) سربراہ پاکستان سنی تحریک محمد ثروت اعجاز قادری نے کہا ہے کہ سیالکوٹ میں غیر ملکی منیجر کے قتل کی اعلیٰ سطح کی تحقیقات کرائی جائے، توہین رسالت اور توہین مذہب کے کیسز میں ملوث ملزمان کا ہنگامی بنیادوں پر ٹرائل کر کے سزا کے عمل کو فوری یقینی بنایا جائے، شدت پسندی کے خاتمے کیلئے عالمی سطح پر قوانین بنانے ہونگے ۔ ایک بیان میں انہوں نے مزید کہا کہ سیالکوٹ فیکٹری واقعہ میں پولیس کا موقع پر نہ پہنچنا بھی سوالیہ نشان ہے ، ملک سے انتہا پسندی کا خاتمہ چاہتے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ شعائر اسلام کی توہین یا دین اسلام کی توہین کو کوئی بھی برداشت نہیں کرسکتا، غیر ملکی میڈیا کے مطابق صبح سے ہی فیکٹری میں خبریں گردش کر رہی تھیں کہ سری لنکن منیجر نے مبینہ طور پر توہین مذہب کی ہے، اس حساس معاملے پر فیکٹری انتظامیہ نے قانون نافذ کرنیوالے اداروں کو کیوں نہیں بلایا۔ انہوں نے کہا کہ ہمارا حکومت سے مطالبہ ہے کہ اس واقعہ کی اعلیٰ سطح پر تحقیقات کرائی جائے ، آئین و قانون کی بالادستی کو ہر حال میں یقینی بنایا جائے ، اعلیٰ سطح کی تحقیقات میں اگر منیجر پر توہین مذہب کا الزام جھوٹا ثابت ہو تو اس قتل میں ملوث افراد کے خلاف قانونی کارروائی عمل میں لائی جائے ، شفاف تحقیقات کے لئے ضروری ہے کہ حکومت سپریم کورٹ کے حاضر سروس ججز پر مشتمل کمیشن سے اس واقعہ کی تحقیقات کرائے۔

Advertisement
روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں