بھاری گیس بلوں کے خلاف شہری سوئی سدرن آفس پہنچ گئے

بھاری گیس بلوں کے خلاف شہری سوئی سدرن آفس پہنچ گئے

میرپور خاص(بیورو رپورٹ)بھاری بھر کم گیس بلوں سے عوام کی چیخیں نکل گئیں،بڑی تعداد میں سوئی سدرن گیس آفس پہنچ گئے ۔ تفصیلات کے مطابق رواں ماہ فروری میں سوئی سدرن گیس کمپنی کی جانب سے بھیجے جانے والے بھاری بھر کم بلوں نے عوام کے ہوش ٹھکانے لگادیے ۔۔

جس کے خلاف شہریوں کی بڑی تعداد سوئی گیس آفس پہنچ گئی اور بلوں کی درستگی اور ریلیف کے لیے افسران کی منت سماجت کی ۔ آ فس میں موجود صارفین آفتاب،اختر اور رمیض و دیگر کا کہنا تھا کہ سابق اور نگران حکومت نے ہم سے جینے کا حق چھین لیا ہے ،ہم مزدوروں کے چھوٹے گھروں کا بل 6 سے 7 ہزار روپے بھیجا گیا ہے ،ہم روانہ اجرت کماکر بچوں کا پیٹ پال رہے ہیں ،اشیا ئے خورونوش تو مہنگی ہیں ہی اب بجلی اور گیس کے بلوں نے بھی چیخیں نکال دی ہیں جائیں تو کہاں جائیں اور کس سے فریاد کریں ۔اختر نامی ایک صارف نے اپنا بل دکھاتے ہوہے بتایا کہ میرے چھوٹے سے گھر کا بل 17 ہزار روپے آ یا ہے ، میں فروٹ کا ٹھیلہ لگا کر گھر چلاتا ہوں ،کس طرح گیس کا بھاری بھرکم بل ادا کروں گا ۔صارف کا کہناتھاکہ یہاں آفس آیا تو افسران لیکیج کا بہانہ کرکے بل درست نہیں کررہے ہیں ۔اسی طرح اکثر شہریوں نے سابق پی ڈی ایم اور نگران حکومت پر اپنا غصہ نکالتے ہوئے کہا کہ 2 سال میں بڑھتی ہوئی مہنگائی نے عوام کا بھرکس نکال کر رکھ دیا ہے ، گیس استعمال کرو یا نا کرو 400 روپے فکس ٹیکس کے ساتھ 40 روپے میٹر کا کرایہ بل میں لگ کر آرہا ہے ،90 یونٹ پر 400 اور 91 یونٹ پر ایک ہزار روپے فکس ٹیکس عوام کو مارنے کے مترادف ہے ۔ شہریوں نے چیف جسٹس آف پاکستان اور چیف جسٹس سندھ سے فوری طور پر گیس کے بلوں میں اضافہ اور بلا جواز ٹیکس ختم کرنے کا مطالبہ کیا ۔

 

Advertisement
روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں