سابق امریکی نائب صدر مائیک پینس کے گھر سے بھی خفیہ دستاویزات برآمد

واشنگٹن : ( ویب ڈیسک ) امریکی حکومت میں اعلیٰ عہدوں پر خدمات سرانجام دینے والے حکام کے گھروں سے خفیہ دستاویزات برآمد ہونے کا سلسلہ جاری، سابق امریکی نائب صدر مائیک پینس کے گھر سے بھی خفیہ دستاویزات برآمد ہو گئیں۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق گزشتہ ہفتے ایک وکیل کی طرف سے سابق نائب صدر مائیک پینس کے انڈیانا کے گھر سے برآمد ہونے والی دستاویزات فیڈرل بیورو آف انویسٹی گیشن (ایف بی آئی ) کے حوالے کر دی گئی ہیں۔

رپورٹس کے مطابق وکلاء کو کچھ دستاویزات ملی ہیں جو ممکنہ طور پر حساس یا خفیہ معلومات پر مشتمل ہو سکتی ہیں جنہیں سابق نائب صدر نے ایک سیف میں بند کر رکھا تھا۔

مائیک پینس کے نمائندوں نے نیشنل آرکائیوز کو ایک خط بھیجا جس میں انہیں دستاویزات کے حوالے سے آگاہ کیا گیا ہے۔

دوسری جانب سابق صدر ٹرمپ نے پینس کے دفاع میں بیان جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ معصوم آدمی ہیں، انہوں نے اپنی زندگی میں کبھی بھی جان بوجھ کر بے ایمانی نہیں کی۔

خیال رہے کہ امریکی قوانین کے تحت صدارتی ریکارڈز ایکٹ کے تحت انتظامیہ ختم ہونے کے بعد وائٹ ہاؤس کے ریکارڈ کو نیشنل آرکائیوز میں جانا چاہیے، ایسی دستاویزات کو قواعد و ضوابط کے مطابق محفوظ طریقے سے رکھنا ضروری ہے۔

واضح رہے کہ صدر جو بائیڈن اور سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی خفیہ دستاویزات کے حوالے سے تحقیقات جاری ہیں جبکہ ٹرمپ کو کاغذات میں مبینہ طور پر غلط استعمال کے الزام میں مجرمانہ تحقیقات کا بھی سامنا ہے۔ 

Advertisement
روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں