نیوز الرٹ
  • بریکنگ :- افغانستان کی تاریخ سے واقف ہوں،وزیراعظم عمران خان
  • بریکنگ :- پہلےہی کہہ دیاتھا افغان مسئلےکاکوئی فوجی حل نہیں،وزیراعظم
  • بریکنگ :- امریکاافغان مسئلےکاحل نکالنےمیں ناکام رہا،وزیراعظم عمران خان
  • بریکنگ :- طالبان افغانستان میں پیش قدمی کررہےہیں،وزیراعظم عمران خان
  • بریکنگ :- اب افغانستان میں طویل خانہ جنگی ہوتی ہےتوپاکستان پردوہرےاثرات کاخدشہ ہے
  • بریکنگ :- ہمارےہاں پشتون کثیرتعداد میں ہیں،وزیراعظم عمران خان
  • بریکنگ :- پشتون اس خانہ جنگی کاشکارہوسکتےہیں ،وزیراعظم عمران خان
  • بریکنگ :- پاکستان میں کوئی عسکریت پسندطالبان نہیں تھے،وزیراعظم
  • بریکنگ :- افغانستان میں 40سال سے خانہ جنگی ہے،وزیراعظم عمران خان
  • بریکنگ :- اشرف غنی کےصدربننےکےبعدطالبان ان سےمذاکرات کےلیےآمادہ نہیں تھے
  • بریکنگ :- پاکستان 30لاکھ سے زائدافغانیوں کی میزبانی کررہا ہے،وزیراعظم
  • بریکنگ :- نائن الیون اور نیویارک واقعےمیں کوئی پاکستانی ملوث نہیں تھا،وزیراعظم
  • بریکنگ :- دہشت گردی کےخلاف جنگ میں70ہزارلوگوں اپنی جانیں قربان کیں،وزیراعظم
  • بریکنگ :- دہشت گردی کےخلاف جنگ میں پاکستانی معیشت کو150ارب ڈالرکانقصان ہوا،وزیراعظم
  • بریکنگ :- وزیراعظم عمران خان کاامریکی نشریاتی ادارےکوانٹرویو
  • بریکنگ :- پاکستان محسوس کرتاہے اس جنگ سےہماراکوئی تعلق واسطہ نہیں،وزیراعظم
  • بریکنگ :- اب پاکستان کاموقف بالکل واضح ہے،وزیراعظم عمران خان
  • بریکنگ :- ہم نےفریقین کوقریب لانےکےلیےبہت کچھ کیا،وزیراعظم
  • بریکنگ :- اب ہماراملک کسی محاذآرائی کامتحمل نہیں ہوسکتا،وزیراعظم عمران خان
  • بریکنگ :- میرےخیال میں افغان مسئلے کاحل سیاسی ہے،وزیراعظم عمران خان
  • بریکنگ :- پاکستان کسی تنازع کاحصہ نہیں بن سکتا،وزیراعظم عمران خان
  • بریکنگ :- پاکستان افغانستان میں امن کےلیےسہولت کاری کررہا ہے،وزیراعظم
  • بریکنگ :- اب آدھے سےزیادہ افغانستان طالبان کے کنٹرول میں ہے،وزیراعظم
  • بریکنگ :- اشرف غنی کاانتخابات میں تاخیرنہیں کرنی چاہیے تھے،وزیراعظم
Kashmir Election 2021
اداریہ
WhatsApp: 0344 4450229

قومی سیاسی وقار کا مسئلہ

قومی اسمبلی میں بجٹ اجلاس کے دوران پیدا ہونے والی بد مزگی کی دھول ابھی پوری طرح بیٹھی نہ تھی کہ بلوچستان اسمبلی میں بجٹ کے روز ارکان کے طرزِ عمل نے ملکی جمہوری نظام پر لاحق تشویش کو بلند تر سطح پر پہنچا دیا ہے۔ قومی اسمبلی میں جو کچھ ہوا‘ ممکن ہے آنے والے چند روز میں عوامی حافظے سے محو ہو جاتا مگر بلوچستان اسمبلی کی واقعات نے راکھ میں دبی ان چنگاریوں کو ہوا دے دی ہے؛ چنانچہ آنے والے مزید کئی دن ملک کا جمہوری سیٹ اپ عوامی گفتگو کا موضوع رہے گا۔ یہ واضح ہے کہ پارلیمانی اداروں کا وقار قائم کرنے کے حوالے سے حالیہ دنوں ذرائع ابلاغ اور عوامی حلقوں میں جو کچھ کہا گیا بلوچستان اسمبلی کے ارکان نے اس سے کوئی سبق نہیں سیکھا۔ اس سے پہلے بھی بجٹ عام طور پر گرما گرم ماحول ہی میں پیش ہوا کرتے تھے‘ مگر جو کچھ اس بار دیکھنے میں آیا ہے اس کی مثال ملکی پارلیمانی تاریخ میں بہت کم ملے گی؛ چنانچہ ضروری ہے کہ ان واقعات کو محض اپوزیشن کا ہنگامہ قرار دے کر نظر انداز کرنے کے بجائے باقاعدہ تحقیقات کروا لی جائیں تاکہ آنے والے وقت میں ایسے ناخوشگوار طرزِ سیاست سے بچا جا سکے۔ قومی اسمبلی کی سطح پر بد مزگی کے اس کیس کو جس جلد بازی سے نمٹایا گیا‘ اس کا اگرچہ یہ فائدہ ہوا کہ بجٹ اجلاس کے باقی روز رہنما ایوان میں تشریف رکھنے اور نچلا بیٹھنے پر آمادہ ہو گئے‘ اس طرح بجٹ پر گفتگو کی رسم پوری ہونے کا امکان پیدا ہوا‘ مگر اس جلد بازی نے ایوان کا ماحول خراب کرنے کے اسباب کا تعین نہیں کیا؛ چنانچہ ارکان میں مڈ بھیڑ کے محرکات جوں کے توں ہیں اور یہ خدشہ موجود ہے کہ ایوانِ پارلیمان میں غصے کا آتش فشاں کسی وقت بھی پھٹ سکتا ہے۔ یہ قضیہ اصلاح کی ایک جامع کارروائی کا متقاضی تھا تاکہ حکومتی ایوانوں کی تضحیک کے بجائے معزز ارکان یہاں اپنے کارِ منصبی یعنی قانون سازی پر توجہ دیں۔

حکومت کو حزب اختلاف سے شکایت ہو یا فریق ثانی کو فریقِ اول سے‘ ہماری فصیح و بلیغ قومی زبان میں تہذیب کے دائرے میں رہ کر ما فی الضمیر بیان کیا جا سکتا ہے۔ وفاقی پارلیمان کے ارکان ہوں یا صوبائی اسمبلیوں کے‘ ان رہنماؤں کو سنجیدہ فکر اور مہذب ہونا چاہیے۔ یہی ان کا مقام ہے۔ گریبان پکڑتے‘ گالیاں دیتے اور سطحی مفادات کی خاطر معقولیت کی حد سے گرتے ہوئے ارکانِ اسمبلی اچھے نہیں لگتے۔ جو کچھ کوئٹہ میں گزشتہ روز دیکھا گیا کیا ایک اسمبلی کے ارکان کو یہ زیبا ہے؟ بظاہر حکومت نے بھی معاملات کو سنبھالنے میں کوتاہی کی۔ اگر حکومت بلوچستان کی جانب سے حزب اختلاف کے کارکنوں کے لیے اسمبلی میں جانے کے راستے بند کیے گئے تو یہ بھی نہیں ہونا چاہیے تھا۔ حکومت بجٹ پیش کرنے جا رہی تھی تو اصولی طور پر حکمران اور حزب اختلاف کی جماعتوں کے نمائندگان کے ذریعے افہام و تفہیم پیدا کرنے کی ضرورت تھی۔ اگر یہ اقدامات بر وقت کیے ہوتے تو جو تماشا گزشتہ روز اسمبلی کی عمارت کے باہر لگایا گیا کم از کم اس سے بچنا ممکن تھا‘ لیکن ہمارے ہاں حکمران طبقہ مخالف فریق کا وجود کہاں تسلیم کرتا ہے اور حکومتوں کے اس ’اکیلے کھیلنے‘ کے مزاج نے جمہوریت کو مذاق بنا دیا ہے۔ یہ اسی کا نتیجہ تھا کہ سپیکر بلوچستان اسمبلی کو احتجاجی اپوزیشن نے اسمبلی کے احاطے میں داخل ہونے سے روک دیا جبکہ وزیر اعلیٰ کو داخلے کے لیے پولیس کی مدد لینا پڑی۔ یہ سارا دنگل‘ اپوزیشن جماعتوں کے رہنماؤں کے بقول‘ حکومت کی جانب سے ان کے مطالبات منظور نہ کرنے کے ردِ عمل میں تھا۔ یہ کوئی حیرانی کی بات نہیں کیونکہ ہمارے ملک میں سیاست اکثر سیاسی حلقے کے نام پر ترقیاتی فنڈز کے گرد ہی گھومتی ہے۔ ہر دور میں قومی اور صوبائی اسمبلیوں کے ارکان اربوں روپے ترقیاتی فنڈز کے نام پر لے جاتے ہیں۔ ملک کے کسی بھی علاقے کے صوبائی یا قومی اسمبلی کے حلقے کے نام پر پچھلی تین‘ چار حکومتوں کے دوران کتنے فنڈ جاری کیے گئے اور ان رقوم سے کسی علاقے میں کتنا ترقیاتی کام ہوا‘ ان منصوبوں کی کیا افادیت ہے‘ لوگ ان سے کس حد تک استفادہ کر رہے ہیں؟

یہ آڈٹ سرکاری سطح پر کروایا جانا چاہیے اور اس کے نتائج عوام کے لیے جاری کرنے چاہئیں۔ اسمبلیوں میں بیٹھے رہنما اپنے حلقوں کے عوام کی نمائندگی کرتے ہیں‘ اس لیے انہیں ان عوام کے مفادات کے تحفظ کی جدوجہد ضرور کرنی چاہیے‘ مگر کسی دور میں کسی ایک علاقے کو دی جانے والی رقوم کے اثرات کا جائزہ بھی لیا جانا چاہیے تا کہ کم از کم یہ تو سامنے آئے کہ اس رقم سے کیا مقاصد حاصل ہوئے۔ نیز یہ کہ ملک کے وہ دور دراز علاقے جہاں بنیادی سہولیات کا نشان بھی نہیں ملتا‘ کیا انہیں ملکی تاریخ میں کبھی کوئی ترقیاتی فنڈ جاری نہیں ہوئے؟ ترقیاتی فنڈز کے گرد گھومنے والی سیاست کا قبلہ درست کرنے کے لیے لوکل گورنمنٹ کا نظام ناگزیر ہے۔ اصولی طور پر قومی اور صوبائی اسمبلی میں بیٹھے معزز ارکان کو قانون سازی اور اس اونچی سطح کے کام زیب دیتے ہیں جبکہ ترقیاتی منصوبوں کی تعمیل کے لیے بنیادی جمہوری اداروں کو بروئے کار لایا جائے۔ ہمارے ملک میں لوکل گورنمنٹ کے نظام کا خانہ خالی رکھ کر نہ ہم ملکی سطح پر جمہوری اقدار قائم کر پا رہے ہیں اور نہ بہترین طرزِ حکومت کا خواب شرمندہ تعبیر ہوتا دکھائی دیتا ہے۔ اس خلا میں عملی طور پر جو ہو رہا ہے وہ ہمارے سامنے ہے کہ کہیں معزز ارکان پارلیمان للکارے مارتے‘ گالیاں دیتے اور ایک دوسرے پر کیچڑ اچھالتے ہیں اور کہیں صوبائی ارکان اسمبلی گیٹ کو تالا لگا کر سسٹم ہی یرغمال بنا لیتے ہیں۔ یہ ہمارے یک رخے جمہوری نظام کی ناکامی کا ثبوت ہے۔ 

 

روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں
Advertisement