نیوز الرٹ
  • بریکنگ :- حکومت ملی توملک قرضوں کی دلدل میں پھنساہواتھا،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- عمران خان ملکی ترقی وخوشحالی کیلئےکوشاں ہیں،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- سابق حکمرانوں نےملکی پیسہ لوٹ کربیرون ملک جائیدادیں بنائیں،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- برآمدات میں تیزی سےاضافہ ہورہاہے،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- (ن)لیگ دورمیں پاورلومزکوتالےلگےتھے،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- دنیانےکورونامیں پاکستان کی اسمارٹ لاک ڈاؤن پالیسی کوسراہا،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- برطانوی وزیراعظم نےماحولیات سےمتعلق عمران خان کےاقدامات کی تعریف کی،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- پوری دنیامیں مہنگائی کا50 سالہ ریکارڈٹوٹ گیا،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- 10کروڑلوگوں کوکوروناویکسین لگاچکےہیں،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- پیپلزپارٹی ،(ن)لیگ نےاقتدارمیں آکرصرف اپنےبچوں کاسوچا،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- عمران خان اپنےمحلات نہیں غریب کوگھربناکردےرہاہے،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- گھروں کےلیے 90ارب کےقرضےمنظورہوچکےہیں،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- یہ لوگ ووٹ کوعزت دینےکی بات کرتےتھے،فرخ حبیب
  • بریکنگ :- 2،2ہزارروپےمیں ووٹ کوعزت دےرہےتھے،فرخ حبیب
Coronavirus Updates

فضل خالد اچھے ایڈمنسٹریٹر نہیں، چیئرمین ہائرایجوکیشن نہیں رہ سکتے : چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ

فضل خالد اچھے ایڈمنسٹریٹر نہیں، چیئرمین ہائرایجوکیشن نہیں رہ سکتے : چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ

دنیا اخبار

سیکرٹری ہائر ایجوکیشن آپ کیا جھک مارتے ہیں؟ اساتذہ کی تعداد مکمل نہ ہونا کوئی بڑا ایشو نہیں ہے :چیف جسٹس قاسم خان ، کمیٹی 25مارچ تک حتمی فیصلہ کر کے لائے ،چیئرمین،سیکرٹری نتائج بھگتنے کو تیار رہیں،کالجز کے الحاق کے کیس میں ریمارکس

لاہور (کورٹ رپورٹر،این این آئی)چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ محمدقاسم خان نے کہاکہ فضل خالد اچھے ایڈمنسٹریٹر نہیں،چیئرمین ہائرایجوکیشن نہیں رہ سکتے ،نجی یونیورسٹیزکیساتھ کالجز کا الحاق نہ کرنے کیخلاف درخواست پر لاہور ہائیکورٹ نے عدالتی احکامات پر عملدرآمد کیلئے چیئرمین ہائرایجوکیشن کو 25مارچ تک مہلت دیدی ،چیف جسٹس لاہورہائیکورٹ قاسم خان نے سماعت شروع کی تو چیئرمین ہائر ایجوکیشن ڈاکٹر فضل خالد اور سیکرٹری ہائرایجوکیشن عدالت میں پیش ہوئے ، چیف جسٹس قاسم خان بعض یونیورسٹیز کے ساتھ امتیازی سلوک کرنے پرچیئرمین اور سیکرٹری ہائر ایجوکیشن کمیشن پر برس پڑے اور کہا جس نے آپ کی گردن پر پاؤں رکھ دیا اس کا کام کر دیا، چیئرمین ہائر ایجوکیشن نے استدعا کی کہ ہمیں 3 ہفتوں کیلئے مہلت دے دی جائے ، چیف جسٹس نے کہاپہلے آپ کی تقرری کا نوٹیفکیشن معطل کرتا ہوں پھر مہلت دیتا ہوں۔ ڈاکٹر فضل خالد !آپ چیئرمین ہائر ایجوکیشن کے عہدہ پر نہیں رہ سکتے ، سرکاری وکیل نے کہاعدالتی حکم پر من وعن عمل ہوگا، چیف جسٹس نے کہاڈاکٹر فضل خالد صاحب ! آپ ادارہ چلانے کے قابل نہیں، چیف جسٹس نے 3 ہفتوں کی مہلت کی استدعا مسترد کرتے ہوئے حکم دیاکہ کمیٹی 25 مارچ تک حتمی فیصلہ کرکے لائے ، کمیٹی کا فیصلہ آئین اور قانون کے مطابق ہو،کسی سے امتیازی سلوک نہ کیا جائے ، چیئرمین اور سیکرٹری ہائر ایجوکیشن کو سمجھ آنی چاہیے میں کیا کہہ رہا ہوں، سیکرٹری ہائر ایجوکیشن آپ کیا جھک مارتے ہیں؟ اساتذہ کی تعداد مکمل نہ ہونا کوئی بڑا ایشو نہیں ،ایچ ای سی میں جتنے لوگ بیٹھے ہیں کسی کو عقل نہیں ایچ ای سی کا اپنا کوئی دماغ نہیں ہے ، حکومت نے اداروں کی تباہی کر دی ،چیئرمین اور سیکرٹری ہائر ایجوکیشن آپ نتائج بھگتنے کو تیار رہیں،جو ادارے کام کر رہے ہیں ان کو بھی کام کرنے سے روکا جا رہا ہے ، آپ کو اچھے انسانوں کی قدر نہیں، چیف جسٹس نے حکم دیا کہ تمام فریق آئندہ سماعت پر خود پیش ہوں کسی کو حاضری معافی نہیں ملے گی، چیف جسٹس نے گورنر پنجاب کے پرنسپل سیکرٹری کو بھی طلب کر لیا اور کہا ہر روز اجلاس کرکے سیکرٹری ہائر ایجوکیشن کو میٹنگ منٹس جمع کروائیں۔ چیف جسٹس قاسم خان نے کہاکہ پوری دنیا میں ہر کام ایک منٹ میں ہو جاتا ہے ،عدالت نے کارروائی 25مارچ تک ملتوی کرتے ہوئے عمل درآمد رپورٹ طلب کرلی ۔

روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں
Advertisement