خدیجہ شاہ نظر بندی ، درخواست چیف جسٹس ہائیکورٹ کو ارسال

خدیجہ شاہ نظر بندی ، درخواست چیف جسٹس ہائیکورٹ کو ارسال

لاہور (کورٹ رپورٹر، اپنے خبر نگار سے) پی ٹی آئی رہنما خدیجہ شاہ کی نظر بندی کے خلاف لاہور ہائیکورٹ میں درخواست جسٹس شہرام سرور چودھری نے فائل چیف جسٹس کو ارسال کردی۔

لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس شہرام سرور نے کیس کی سماعت کی ۔ گرفتار سوشل ایکٹوسٹ خدیجہ شاہ کے شوہر جہانزیب امین نے نظر بندی کو چیلنج کیا۔درخواست میں وفاقی حکومت ،ڈپٹی کمشنرلاہور سمیت دیگر کو فریق بنایا گیا ۔درخواست گزار نے استدعا کی کہ عدالت خدیجہ شاہ کو لاہور کی حدود سے باہر لیکر جانے سے روکنے کا حکم دے اور عدالت نظر بندی کے نوٹیفکیشن کو غیر قانونی قرار دے ۔لاہور کی انسداد دہشت گردی عدالت نے عسکری ٹاور کے مقدمے میں 30 ملزموں کی ضمانتیں منظور کرلی ۔انسداد دہشت گردی عدالت کی ایڈمن جج عبہر گل خان نے فیصلہ سنایا ۔ ضمانت منظور ہونے والے ملزموں میں محمد سعید ،انس ایاز ،سعد قدیر ،فیضان حسن سمیت 35 شامل ہیں ۔وکلا نے موقف اختیار کیا کہ ملزمان جوڈیشل ریمانڈ پر جیل میں ہیں ، مزید تفتیش کی ضرورت نہیں ہے عدالت ضمانت بعدازگرفتاری منظور کرے ، عدالت نے کارروائی کرتے ہوئے 35 ملزموں کی ایک لاکھ روپے مچلکوں کے عوض ضمانتیں منظور کرلیں جبکہ عدالت نے ڈاکٹر یاسمین راشد سمیت دو ملزموں کی ضمانت پر کارروائی 29 نومبر تک ملتوی کردی ۔انسداد دہشت گردی عدالت نے سانحہ نو مئی، سابق پرائم منسٹر ہاؤس توڑ پھوڑ کرنے اور لڑائی جھگڑے کے ،کیس پر سماعت کی ۔عدالت نے یاسمین راشد اور عمر سرفراز چیمہ کو جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج دیا ۔عدالت نے تفتیشی افسر کی ملزمان کو جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کرنے کی استدعا مسترد کر دی ۔عدالت نے ملزمان کو 4 دسمبر کو دوبارہ عدالت پیش کرنے کا حکم دے دیا ۔

Advertisement
روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں