نیوز الرٹ
  • بریکنگ :- کراچی:کوروناکاپھیلاؤ،ضلع وسطی کے 4ٹاؤنزمیں مائیکرواسمارٹ لاک ڈاؤن
  • بریکنگ :- کراچی:ڈی سی سینٹرل نےاسمارٹ لاک ڈاؤن کےنفاذکانوٹیفکیشن جاری کردیا
  • بریکنگ :- کراچی:مائیکرواسمارٹ لاک ڈاؤن 5 فروری تک برقراررہےگا
  • بریکنگ :- گلبرگ،نارتھ کراچی،لیاقت آباد،نارتھ ناظم آبادکے مختلف رہائشی یونٹس شامل
  • بریکنگ :- متاثرہ رہائشی یونٹس میں آنےجانےوالےافرادکوماسک پہننالازمی ہوگا
  • بریکنگ :- کراچی:شہریوں کی غیرضروری نقل وحرکت پرپابندی ہوگی،نوٹیفکیشن
Coronavirus Updates

پیاز کی کہانی ڈاکٹر بینگن کی زبانی

تحریر : محمد آفتاب


دورکسی جگہ ایک سر سبز اور زرخیز میدان میں مختلف سبزیوں کی حکمرانی تھی یہاں کسی انسان کا گزر نہیں تھا۔ وہ آزادی سے کھیلتی کودتی تھیں۔ سب میں بڑا اتحاد تھا صرف ایک پیاز ہی تھی جس سے سب دور رہتے تھے۔

 وہ سوچتی کہ شاید مجھ سے کوئی خطا ہوئی ہے ، اس لیے کوئی سبزی دوستی اور محبت کا ہاتھ نہیں بڑھاتی۔ جب بھی پیاز ان کے قریب آتی تو سب ناک بھنویں چڑھا کر بھاگ جاتے۔ 

ہری مرچ بیگم تو ہمیشہ کہتی: ’’ آئے ہائے اس میں سے تو بدبو آتی ہے۔‘‘ اور ناک سکیڑ کر چلی جاتی۔ خالو ٹماٹر بھی کم نہیں تھے۔ ہاں میں ہاں ملاتے اور کہتے : ’’ جب بھی پیاز ہمارے پاس آتی ہے تو ہماری آنکھوں میں جلن ہونے لگتی ہے۔‘‘ یوں ہر سبزی کو پیاز سے کوئی نہ کوئی شکایت تھی۔پیاز یہ سب سن کر افسردہ ہوجاتی اور رونے لگتی۔ 

ایک دن کھیت میں کھیلتے ہوئے آلو میاں اپنی آنکھیں ملنے لگے۔’’ ارے کیا ہوا آلو میاں! تمہاری آنکھیں سرخ کیوں ہورہی ہیں؟‘‘ بی بی پالک نے خوفزدہ ہوکر پوچھا۔جب آلو میاں نے آئینہ دیکھا تو ان کی بے اختیار چیخ نکل گئی اور انہوں نے ادھر ادھر لڑھکتے ہوئے کہا ’’ہائے! یہ کیا ہوا، میری آنکھوں کو‘‘ اور پھر تکلیف سے رونا شروع کر دیا۔ ’’ارے یہ تو آنکھوں کی وبا لگتی ہے۔‘‘ بی بی پالک نے کہا۔

 ایک دن شدید گرمی تھی۔ ہری مرچ بیگم چکراتی ہوئی آئیں اور گر گئیں۔ گرمی کی شدت سے لو لگ گئی۔ابھی آلو میاں اور مرچ بیگم تکلیف سے ہائے ہائے کر ہی رہے تھے کہ بھنڈی چلاتی ہوئی آئی، ارے بچائو!مجھے شہد کی مکھی نے کاٹ لیا۔ ارے ہے کوئی جو ہماری ان تکلیفوں کا علاج کرے۔بھنڈی نے زاروقطار روتے ہوئے کہا تو سارے علاقے میں شور مچ گیا۔آخر نانی گاجر نے گھبرا کر ڈاکٹر بینگن کو ساری سبزیوں کی بیماری تفصیل سے بتائی۔

 ڈاکٹر بینگن نے سب حال غور سے سنا اور فوراً مریضوں کے پاس پہنچے۔ڈاکٹر بینگن نے ایک ایک کر کے دوبارہ سبزیوں کی بیماری پوچھی اور نتیجہ یہ نکلا کہ ا ن سب بیماریوں اور تکالیف کا علاج پیاز میں موجود ہے۔یہ سن کر تمام سبزیاں حیرت میں پڑگئیں۔ 

ڈاکٹر بینگن نے سب کو پیاز کے فائدے بتائے کہ پیاز بہت مفید اور طاقتور ہوتی ہے۔ اس کے کھانے سے خون صاف ہوتا ہے اور گرمی میں کھانے سے یہ لو کے اثرات سے بچاتی ہے۔‘‘ پیاز بھی خاموشی سے سنتی رہی۔ ڈاکٹر بینگن نے مزید بتایا کہ ہماری پیاری دوست پیاز میں یہ خوبی ہے کہ یہ آنکھوں کیلئے بھی مفید ہوتی ہے اور آنکھوں میں جراثیم کا خاتمہ کرتی ہے۔اس کو گھس کر لگانے سے شہد کی مکھی کے ڈنک کا زخم بھی ٹھیک ہوجاتا ہے۔ ڈاکٹر بینگن نے بتایا کہ پیاز کی طاقت جان کر یونان کا بادشاہ جنگ سے پہلے اپنے سپاہیوں کو پیاز کھانے کو دیتا تھا۔

 دیکھا قدرت نے پیاز میں کتنے فائدے رکھے ہیں۔ یہ سب سن کرساری سبزیاں شرمندہ ہوئیں اور سب نے پیاز سے دوستی کر لی ۔ پیاز نے سب کو گلے لگایا اوران کی بیماریاںدور کیں۔ ڈاکٹر بینگننے بھی اطمینان کی سانس لی۔پھر تمام سبزیوں نے ڈاکٹر بینگن اور پیاز کے ساتھ صحت یابی کا جشن منایا۔

روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں
Advertisement

چالاک باز

کوّے کی ملا قات فضا میں اڑ تے ہوے ایک باز سے ہوئی جو بہت دن سے کسی اچھے شکا ر کی تلاش میں تھا کو ّے نے اپنی کہا نی با ز کو سنائی اور اسے کہا وہ بھی یہ تر کیب اپنے شکار پر آزما کر دیکھے۔

کنکریاں

ایک قافلہ سفر کررہا تھا اوردوران سفر ان کا گزر ایک اندھیری سرنگ سے ہو رہا تھا کہ اچانک ان کے پیروں میں کنکریوں کی طرح کچھ چیزیں چبھیں۔

بچوں کا انسائیکلو پیڈیا

بادل اتنی مختلف شکلوں میں کیوں ہوتے ہیں؟بادل بہت سی مختلف شکلوں کے ہوتے ہیں۔ ان کا انحصار ان کی اونچائی اور اس ہوا پر ہوتا ہے جس میں وہ موجود ہوتے ہیں۔ چھوٹے دھوئیں کی طرح کے بادل آسمان کی اونچائی پر جما دینے والی ہوا میں بنتے ہیں۔ سر مئی کمبل جیسے بادل گرم اور نم دار ہوا سے، جو زمین کے نزدیک ہوتی ہے، بنتے ہیں۔ اپنی اونچائی اور شکل کی بنا پر بادلوں کے مختلف نام رکھے گئے ہیں۔

ذرا مسکرائیے

ایک سال بہت بارش ہوئی، ایک محفل میں کسی نے کہا: ’’ زمین میں جو کچھ بھی ہے اس دفعہ باہر نکل آئے گا۔‘‘ ملا نصیر الدین سخت گھبرا کر بولے:’’ اگر میری تین بیویاں نکل آئیں تو کیا ہوگا۔‘‘

تعصب و عصبیت، معاشرتی عدم استحکام کے بڑے اسباب

سماجی اعتبار سے عصبیت کے ظہور سے سیاسی عدم استحکام اور فرقہ واریت کو فروغ ملتا ہے، اے لوگو! ’’ہم نے تمہیں ایک مرد اور ایک عورت سے پیدا کیا، اور تمہارے خاندان اور قومیں بنائیں تا کہ تم ایک دوسرے کو پہچان سکو ‘‘ (الحجرات:13)

کسبِ حلال: عین عبادت، پاکیزہ مال کمانا دُنیا و آخرت کی حقیقی خوشی و کامیابی

نبی کریم ﷺ نے ارشاد فرمایا ’’حلال مال کا طلب کرنا ہر مسلمان پر واجب ہے‘‘ (المعجم الاوسط للطبرانی:8610)،اپنے کھانے کو پاک کرو! جب کوئی شخص حرام کا لقمہ پیٹ میں ڈالتا ہے تو 40 دن تک اللہ تعالیٰ اس کا عمل قبول نہیں کرتا‘‘(المعجم الاوسط للطبرانی:6495)