بڑھیا کے بال کھانا کتنا خطرناک ہو سکتا ہے

بڑھیا کے بال کھانا کتنا خطرناک ہو سکتا ہے

کاٹن کینڈی، جسے ‘فیئری فلاس’ یا ‘بڑھیا کے بال’ بھی کہا جاتا ہے کو بھارتی ریاست تامل ناڈو کی حکومت نے لوگوں کی صحت کیلئے خطرناک قرار دیدیا ہے۔

 ریاستی حکومت نے اس کی پروڈکشن اور فروخت پر پابندی لگا دی ہے ۔ضلع پڈوچیری میں اس کاٹن کینڈی میں زہریلے کیمیکلز، بشمول ‘روڈامائن بی’ جیسا کیمیائی مادہ پایا گیا ہے ۔ یہ مادہ صحت کے سنگین مسائل سے پیدا کرتا ہے ۔سپن شوگر سے بننے والی کاٹن کینڈی سبھی لوگوں خاص طور سے بچوں کی ایک مقبول مٹھائی ہے ۔ تاہم، حالیہ تحقیق کے نتائج میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ کچھ لوگ اسے رنگین بنانے کے لیے روڈامائن بی جیسے خطرناک کیمیکلز کا استعمال کر رہے ہیں۔ تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ اگر طویل عرصے تک روڈامائن بی کا استعمال کیا جائے یا کسی طرح اس کے رابطے میں رہا جائے تو کینسر اور جگر کی خرابی جیسے صحت کے سنگین مسائل پیدا ہوسکتے ہیں۔

Advertisement
روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں