نیوز الرٹ
  • بریکنگ :- وزیراعظم ہرمعاملےمیں عوام کےدل کی ترجمانی کرتےہیں،فوادچودھری
  • بریکنگ :- ماضی میں کبھی کسی لیڈرنےاس طرح کشمیرکامقدمہ نہیں لڑا،فوادچودھری
  • بریکنگ :- ممبئی حملوں کےبعدپاکستان کیخلاف عالمی سازش شروع کی گئی،فوادچودھری
  • بریکنگ :- وزیراعظم عمران خان نےمودی کوللکاراجوپہلےکبھی نہیں ہوا،فوادچودھری
  • بریکنگ :- کلبھوشن یادیوکوگرفتارکیاتونوازشریف نےکہاتبصرہ نہیں کروں گا،فوادچودھری
  • بریکنگ :- نوازشریف جیسےسیاستدانوں کواپنی ذات کےعلاوہ کچھ نظرنہیں آتا،فوادچودھری
  • بریکنگ :- نوازشریف اوراشرف غنی ایک جیسی زندگی گزاررہےہیں،فوادچودھری
  • بریکنگ :- نوازشریف اوراشرف غنی پیسہ لےکربیرون ملک فرارہوئے،فوادچودھری
  • بریکنگ :- جہلم:ایک دبئی اوردوسرالندن میں بیٹھاہے،وزیراطلاعات فوادچودھری
  • بریکنگ :- جہلم:ان دونوں کاعوام سےکوئی تعلق نہیں تھا،وفاقی وزیرفوادچودھری
  • بریکنگ :- ن لیگ اورپیپلزپارٹی بکھرگئی ان کےپاس ٹکٹ لینےوالےامیدوارنہیں،فوادچودھری
  • بریکنگ :- انہوں نے 5،5کروڑکی آفردی ہمارے ٹکٹ پرالیکشن لڑیں،فوادچودھری
  • بریکنگ :- مسلم لیگ(ن)اورپیپلزپارٹی کایہ آخری الیکشن ہوگا،فوادچودھری
  • بریکنگ :- عمران خان جیت کردوبارہ حکومت بنائیں گے،فوادچودھری
  • بریکنگ :- آئندہ انتخابات میں پی ٹی آئی دوتہائی اکثریت سےحکومت بنائےگی،فوادچودھری
  • بریکنگ :- عالمی لیڈرشپ عمران خان کودیکھ رہی ہےیہ حسدکاشکارہیں،فوادچودھری
  • بریکنگ :- انہوں نےآئندہ 5سال بھی ایسےروتےہوئےگزارنےہیں،فوادچودھری
  • بریکنگ :- دورہ منسوخی سے متعلق حقائق سامنےلائےتوانگلینڈبورڈپردباؤبڑھا،فوادچودھری
  • بریکنگ :- برطانوی وزیراعظم نےانگلش بورڈپرناراضگی کااظہارکیا،فوادچودھری
  • بریکنگ :- الیکشن کمیشن کےنوٹس کامعاملہ،کئی باراختلافات بھی ہوجاتےہیں،فوادچودھری
  • بریکنگ :- الیکشن کمیشن کےساتھ کوئی ذاتی جھگڑانہیں ہے،فوادچودھری
  • بریکنگ :- الیکشن کمیشن کےساتھ معاملات بہترہوجائیں گے،فوادچودھری
  • بریکنگ :- نئےچیئرمین نیب کی تعیناتی میں شہبازشریف سےمشاورت نہیں کریں گے،فوادچودھری
Coronavirus Updates
"HRC" (space) message & send to 7575

ایں دفترِ بے معنی؟

زندگی مچھلیاں پکڑنے کی مہم نہیں کہ لہروں تلے ڈھونڈلی جائیں۔ موتی گہرائی میں ہوتے ہیں… اور قلب و جان میں دعا کی پکار چاہیے ۔ حق نہیں ہے نہ سہی، تیری سخاوت کے حضور ہے مرا کام تمنّا کی جسارت کرنا اُجالا پھیل چکا او ر پرندے ٹہنیوں میں دبک گئے تو یارِ طرح دار وصی شاہ کا پیغام ملا۔ کیا ضروری ہے ، سیاست پہ لکھیں؟کیوں نہ کچھ آج محبت پہ لکھیں ۔ موصوف کا موضوع یہی ہے اور ہنر بھی یہی ۔ 17لاکھ ، جی ہاں، ان کے شعرے مجموعے سترہ لاکھ کی تعداد میں چھپ چکے ۔ ہمیں خود کو تھامنا پڑتا ہے ۔ کہیں چلے جائیے، کسی سے بات کیجیے، یہی ایک موضوع ہے ۔ عمرِ عزیز کے سترہ برس اس کام کی نذر ہو گئے ۔ اب پلٹ کر دیکھتا ہوں تو اپنی حماقتیں یاد آتی ہیں اور وہ عرب خطیب ، جس نے کہا تھا : حسنِ ظن ایک بھنور ہے اور بدگمانی بجائے خود ایک تحفظ۔ بدگمانی تو ہرگز کوئی قابلِ رشک نہیں ۔ کیسے کیسے روشن دماغ اس بنا پر ہلاک ہوئے ۔ جل بھی چکے پروانے، ہو بھی چکی رسوائی اب خاک اڑانے کو بیٹھے ہیں تماشائی حد سے بڑھی خوش گمانی بھی لیکن تباہی لاتی ہے ۔ 1996ء میں جب ایک سپنا دیکھا تو چاروں اور گھٹا ٹوپ اندھیرا تھا۔امید کی کوئی مشعل فروزاں نہ تھی ۔ عمران خان کو میں دیکھتا تھاکہ بنیادی سیاسی حقائق اور اپنے سماج کے تانے بانے سے نا آشنا ہیں ۔ اس کے باوجود اگر کچھ امید تھی تو اس لیے کہ وہ سچا دکھائی دیتا تھا اور پرعزم بھی ۔ تحریکِ انصاف ایک سیاسی جماعت نہ تھی،اس کے مدّاحوں کا ایک انبوہ ۔ اکثر کا اندازِ فکر یہ تھا کہ اس کی ناراضی مول نہ لی جائے ۔اب خیر خواہ وہ شخص نہیں ہوتا ، جو محبت جتلاتا اور تائید کرتا رہے بلکہ وہ جو کھری بات بھی کہہ دے ۔ جو آدمی سب سے بڑا اثاثہ تھا ، وہی سب سے بڑا مسئلہ بھی ۔ ہر ایک کو وہ قابلِ اعتبار سمجھتا اور آنکھیں بند کر کے بھروسہ کر لیتا۔ سیاست میں جی لگانے کی کوشش تو کی مگر بے دلی سے ۔ کامل یکسوئی کبھی پیدا ہی نہ ہو سکی ؛حالانکہ وہی مطلوب تھی ۔ عہدِ جاہلیت کے عرب شاعروں سے مماثلت رکھنے والے ، اپنے زمانے تک سے بے نیاز وہ منفرد شاعر منیرؔ نیازی دنیا سے اٹھے تو تعزیتی تحریر کے لیے ڈاکٹر خورشید رضوی سے رہنمائی کی درخواست کی ۔ کچھ دوسرے سوالات کے علاوہ ، ایک استفساریہ کیا : کیا مرحوم کبھی سیاست پہ بات کیا کرتے ؟ کسی پارٹی یا رہنما سے وابستگی کی جھلک کبھی ان کے اظہارِ خیال میں جھلک اٹھی ہو ؟ بے ساختہ ڈاکٹر صاحب نے کہا : کیا دلچسپی ہوتی ؟ ایک سطحی چیز سے انہیں کیا شغف ہوتا؟ ہم سب کا مسئلہ یہی ہے ۔ صدیاں گزر گئی ہیں کہ زندگی کے دو اہم ترین شعبوں ، دین اور سیاست کو ہم نے ادنیٰ لوگوں کے سپرد کر رکھا ہے۔ جنرل اشفاق پرویز کیانی نے ایک بار اس ناچیز سے کہا: حقیقت یہ ہے کہ سیاست سے مجھے کراہت ہے ۔ عرض کیا : ہمارا حال بھی یہی ہے مگر کیا کریں ؟ سیاست تو خیرکہ بالآخر معاشرے کے وہ طبقات بھی اس طرف متوجہ ہیں ، مستقل جو اس سے گریزاں رہا کرتے۔ یوں اُجالے کا کچھ امکان پیدا ہو اہے ۔ دین کا حال یہ ہے کہ اچھے بھلے پڑھے لکھے لوگ بھی یا تو اسے عمومی مذہبی فرائض میں دیکھتے ہیں یا کرامات کی تلاش میں ۔ کرامات ؟ سیدنا ابوبکرصدیقؓ سے لے کر، عمر بن عبد العزیزؓ تک ، کون کرامات دکھایا کرتا؟ ہاں ! ایک غیر معمولی لگن ، خلوص، حصولِ علم کی ہمیشہ برقرار رہنے والی ایک بے تاب تمنّا اور اپنی تراش خراش کا عزم۔ دین ایک آموختہ نہیں کہ ازبر کر لیا اور دُہراتے رہے بلکہ زندگی کا فہم ۔ آدمی کیا ہے اور کائنات کیا ؟ اس سے بھی پہلے یہ کہ کیا ا س کائنات کا کوئی رب ہے ؟ کوئی خالق اور پروردگار ؟ کیا واقعی وہ حیّ و قیوم ہے اور قادرِ مطلق ، جس کے حکم بنا ایک پتہ بھی ہلتا نہیں؟اس کے قوانین کیا ہیں ؟ بائیس برس ہوتے ہیں ، شعبان کی آخری شام تھی ۔ مصوّر،مقرر ، نثر نگار اور سیاست کار محمد حنیف رامے مرحوم سے عرض کیا : اگر آپ گوارا کریں تو آپ سے آپ کے بارے میں بات کی جائے ؟ وہ کون سے عوامل تھے کہ کامیاب و کامران ہو کر بھی حقیقی اطمینان حاصل نہ ہو سکا؟ ان کے الفاظ تو یہ نہ تھے مگر مفہوم یہی : کیسے بے رحم آدمی ہو ، اس رسان سے اتنا سنگین سوال کرتے ہو؟ ازراہِ کرم آمادہ ہو ئے مگر جذبات سے لرزتی آواز اور جو کچھ ارشاد کیا ، اس کاخلاصہ یہ تھا۔ اسے ڈھونڈتے میرؔ خود کھو گئے کوئی دیکھے اس جستجو کی طرف بولے : غور و فکر توبہت کیا۔ ساری دنیا کا ادب پڑھ ڈالا مگر یکسوئی نہ ہوسکی ۔ اشفاق احمد کی طرح ان کا مسئلہ بھی یہ تھاکہ جب للک جاگتی تو کوئی بابا تلاش کرتے ۔ نیک خصلت ، صداقت شعار، محوِ عبادت لوگ ۔ مٹی کے دئیے ، جو اُجالا کرتے مگر ایک محدود سی دنیا ہی میں۔ تاریخِ انسانی سے بے نیاز ، اپنے عہد سے بھی ۔ مغرب و مشرق کی برپا اور مٹ جانے والی تہذیبوں سے نا آشنا ۔ ممتاز مفتی قدرے مختلف تھے ۔ وہ ڈٹے رہے اور آخر کار خود شناسی تک پہنچے۔ انشاء اللہ کبھی ان کی کہانی لکھنے کی کوشش کروں گا۔ ان کے مرشدِ گرامی قدرت اللہ شہاب آخر تک کہانی نویس ہی رہے کہ خود سے جدا ہونے کی تاب نہ رکھتے تھے ۔ سودائے عشق اور ہے، وحشت کچھ اور شے مجنوں کا کوئی دوست فسانہ نگار تھا ہم ناچیز اور بے خبر دہقان زاد، ہم کہاں کے دانا تھے ، کس ہنر میں یکتا تھے ۔ ایک وقت البتہ ایسا آیا کہ کرید بڑھی اور پتہ چلا کہ سب آدم زاد بعض اعتبار سے ایک جیسے ہی ہوتے ہیں۔ دیوتا کوئی نہیں۔ مردِ کامل کہانیوں میں ہوتے ہیں ، زندگی میں ہرگز نہیں۔ خود اپنے ذہن سے سوچنے کی کوشش کی تو گمان ہونے لگا کہ حقیقتِ کبریٰ کی ایک جھلک شاید پا لی ہے ۔ آنکھ ہو تو آئینہ خانہ ہے دہر منہ نظر آتے ہیں دیواروں کے بیچ کافی نہیں ہوتا ۔ مشاہدہ کافی نہیں ہوتا۔ خود کو ایک سانچے میں ڈھالنا تھا ، وہ قیمتی وقت صحافت اور سیاست کی نذر ہو گیا ۔اس منفرد اور قادر الکلام شاعر افتخار عارف کا شعر یہ ہے: ؎ اک چھوٹی موٹی لہر ہی تھی میرے اندر اس لہر سے کیا طوفان اٹھا سکتا تھا میں؟ بہت سا قیمتی وقت حیاتِ اجتماعی کے تیور سنوارنے کی آرزو میں بربا دکیا ۔ خو د کو دیکھنا چاہیے تھا ، خود کو ۔ اپنے آپ سے ملاقات کی ہوتی ۔ خود سے بات کی ہوتی ۔ ایک چھوٹا سا دیا البتہ جل اٹھا ۔ دکھ دینے والا ملال زندگی سے رخصت ہوا اور مایوسی بھی ۔ا س خیال سے قدرے اطمینان ہونے لگا کہ سیاست میں ایک نئی راہ تراشنے کی آرزو تھی ، وہ بہرحال پوری ہوئی۔ جس شام کپتان سے تلخی ہوئی ، اپنے دل کو ٹٹولا تو اللہ کا شکر اداکیا کہ کوئی زخم نہیں ۔ کوئی غم ، ہرگز کوئی افسردگی نہیں ۔یہی کیا کم ہے کہ لاکھوں نوجوان میدان میں اتر آئے ہیں ۔ لوٹنے کے بہرحال وہ نہیں ۔ اگر ان کی تربیت کی جا سکے تو ملک کا مستقبل منور ہو سکتاہے ۔ خیالات میں البتہ ایک محشر بھی برپا ہوا۔ کچھ نہ تھا یاد بجز کارِ محبت اک عمر وہ جو بگڑ ا ہے تو اب کام کئی یاد آئے الحمد للہ کہ فکر و خیال کی بزم روشن ہے۔ ایک سبق اچھی طرح سے پڑھ لیا ہے کہ محض سیاست سے قوم کا بھلا ہو سکتاہے اور نہ اپنا۔ زندگی مچھلیاں پکڑنے کی مہم نہیں کہ لہروں تلے ڈھونڈلی جائیں۔ موتی گہرائی میں ہوتے ہیں…اور قلب و جان میں دعا کی پکار چاہیے۔ بوند ہوں کامِ صدف تک مجھے پہنچا دینا شورشِ موج میں خود میری حفاظت کرنا دل کو دریوزہ کثرت میں نہ الجھا دینا مجھ کو ہر حال میں تنہا تو کفایت کرنا حق نہیں ہے نہ سہی ،تیری سخاوت کے حضور ہے مرا کام تمنّا کی جسارت کرنا

Advertisement
روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں