نیوز الرٹ
  • بریکنگ :- لاہور:پنجاب میں بلدیاتی انتخابات کامعاملہ
  • بریکنگ :- پنجاب حکومت کی پہلےمرحلےمیں 4ڈویژنزمیں انتخابات کرانےکی تجویز
  • بریکنگ :- ڈی جی خان،ملتان،بہاولپوراورگوجرانوالہ ڈویژنزمیں انتخابات کی تجویز
  • بریکنگ :- لاہور:وزیراعظم اوروزیراعلیٰ پنجاب نےمنظوری دےدی
  • بریکنگ :- پنجاب حکومت یکم فروری کوالیکشن کمیشن کوباضابطہ تجویزپیش کرےگی،ذرائع
  • بریکنگ :- پنجاب حکومت پہلےمرحلےمیں 4ڈویژنزمیں انتخابات کی تجویزدےگی،ذرائع
  • بریکنگ :- لاہور:تجویز پرحتمی فیصلہ الیکشن کمیشن کرے گا ،ذرائع
  • بریکنگ :- پنجاب حکومت 15مئی کوانتخابات کےپہلےمرحلےکااعلان کرچکی ہے
Coronavirus Updates
"IYC" (space) message & send to 7575

’’چلو خود قصہ صاف کرتے ہیں‘‘

''چلو خود قصہ صاف کرتے ہیں‘‘۔ 3 دسمبر جمعۃ المبارک کے روز ان الفاظ کی گونج کے ساتھ سیالکوٹ میں ایک افسوسناک واقعہ پیش آیا۔ ایک مشتعل ہجوم نے مبینہ طور پر مذہبی جذبات مجروح کرنے کی پاداش میں ایک شخص کی جان لے لی۔ پہلے تو اسے لاٹھیوں اور ڈنڈوں سے مار مار کر قتل کیا۔ خونیں انتقام کی آگ اس سے بھی نہ بجھی تو مرنے کے بعد اس کی لاش کو آگ لگا دی۔ جان سے جانے والا شخص ایک فیکٹری کا منیجر تھا اور اس کی جان لینے والے فیکٹری ملازم تھے۔ مقتول پریانتھا کمارا سری لنکن شہری تھا۔ جمعۃ المبارک ویسے تو ایک مقدس اور احترام والا دن ہے لیکن 3 دسمبر کی تاریخ کے ساتھ جڑا گزشتہ جمعہ، ان دنوں میں سے ایک دن ہے جو بطور قوم ہمارا سر شرم سے جھکاتا رہے گا۔ پھر سوچتا ہوں کہ ہماری قوم اب تک ایسے اتنے دن دیکھ چکی ہے کہ سمجھ میں نہیں آتا‘ مستقبل میں ابھی اس طرح کے کتنے دلسوز اور بربریت پر مبنی واقعات سے ہمارا سر مزید کتنی بار اور کتنا جھکے گا؟ کہیں ایسا تو نہیں کہ ہم واقعی کوئی قوم نہیں رہے؟ کیا اب ہم محض ایک ہجوم ہیں؟ اس دن جو ہوا اس کی دل دہلا دینے والی ویڈیوز سوشل میڈیا پر بغیر کسی سنسر کے شیئر کی جاتی رہی ہیں۔ مقامی صحافیوں اور عینی شاہدین نے اس دن کا جو احوال بتایا وہ کچھ یوں ہے کہ جمعہ کی صبح سے فیکٹری میں افواہیں گرم تھیں کہ پریانتھا کمارا نے مبینہ طور پر مذہب کی توہین کی ہے۔ فیکٹری ملازمین نے اس بات پر احتجاج کیا، کئی لوگوں نے اشتعال انگیز تقاریر کیں، اسی دوران کوئی بولا کہ 'چلو خود قصہ صاف کرتے ہیں‘۔ بس پھر مشتعل ہجوم فیکٹری میں داخل ہوا اور اس کے بعد جو ہوا وہ دیکھنے کے قابل ہے نہ کسی طرح سے بیان کیا جا سکتا ہے۔ ہسپتال والوں کے مطابق ان تک انتہائی بری طرح جلی ہوئی لاش پہنچی جو تقریباً راکھ بن چکی تھی۔
سیالکوٹ میں اس سے پہلے بھی ایک افسوسناک واقعہ پیش آچکا ہے۔ اگست 2010ء کی بات ہے جب سیالکوٹ کے ایک گاؤں میں مشتعل ہجوم نے دو سگے بھائیوں کو ڈاکو قرار دے کر تشدد کرکے مار ڈالا تھا۔ بعد میں ان کی لاشیں چوک میں لٹکا دی گئی تھیں۔ اس موقع پر پولیس اہلکار بھی وہاں پر موجود تھے۔ مارے جانے والے مغیث اور منیب حافظ قرآن تھے۔ اپریل 2017ء میں مردان میں بھی ایسا ہی ایک افسوسناک واقعہ پیش آیا، جب عبدالولی خان یونیورسٹی میں شعبہ صحافت کے طالب علم مشال خان کو قتل کیا گیا۔ مقتول پر مبینہ طور پر توہین مذہب کا الزام لگایا گیا تھا۔ مشتعل طلبا اور دیگر افراد نے ہوسٹل میں اسے تشدد کے بعد جان سے مار دیا۔ اس واقعے کے بہت سے درد ناک پہلو ہیں لیکن مشال کی والدہ کا یہ جملہ آج بھی دماغ میں گونجتا ہے کہ جب انہوں نے اپنے بیٹے کا ہاتھ تھامنے کی کوشش کی تو اس کی انگلیاں بھی ٹوٹی ہوئی تھیں۔ مذہب انتہائی حساس معاملہ ہے اور مذہبی حوالے سے کسی بھی قسم کی گستاخی واقعی قابل برداشت نہیں ہوتی۔ سابق گورنر پنجاب سلمان تاثیر کو ان کے محافظ نے مبینہ طور پر مذہبی توہین کے الزام میں قتل کر دیا تھا۔ 2016ء میں سلمان تاثیر کے قاتل کو سزائے موت دی گئی، بعد میں ان کے جنازے میں ہزاروں لوگ شریک ہوئے‘ اور ایک طویل عرصے تک یہ سوال موضوع بحث بنا رہا کہ ان کو قاتل کہا جائے یا ہیرو تسلیم کیا جائے؟ سوال یہ نہیں کہ ہیرو کون تھا‘ سوال یہ ہے کہ دو لوگ جان سے گئے۔
اسلامی جمہوریہ پاکستان ایک ایسی ریاست ہے جس میں مہذب زندگی گزارنے کے حوالے سے قوانین موجود ہیں۔ قوانین بناتے ہوئے اسلامی اصولوں اور مذہبی اقدار کا خاص طور پر خیال رکھا گیا ہے۔ قانون نافذ کرنے والے ادارے ہیں اور انصاف مہیا کرنے کے لیے عدالتیں موجود ہیں۔ ان اداروں کو اپنا کام کرنے دیا جائے تو ایسا دن دیکھنے کو شاید نہ ملے لیکن نہ جانے کیوں لوگ 'خود قصہ صاف کرنے‘ والی سوچ کو پسند کرتے ہیں۔
برصغیر میں توہین مذہب کے قوانین انگریز نے 1860ء میں بنائے اور پھر 1927ء میں ان قوانین میں کچھ اضافہ ہوا۔ ان قوانین کا مقصد ہندوؤں اور مسلمانوں کے درمیان مذہبی تشدد کی روک تھام تھا۔ ان قوانین کے مطابق کسی مذہبی اجتماع میں خلل ڈالنا، بغیر اجازت کسی قبرستان میں جانا، کسی کے مذہبی عقیدے کی توہین کرنا، کسی عبادت گاہ یا عبادت کی کسی چیز کی توہین کرنا جرم تھا۔ اس وقت ان جرائم کی زیادہ سے زیادہ سزا دس سال قید اور جرمانہ تھی۔ پاکستان میں جنرل ضیاالحق کے دور حکومت میں 1980ء اور 1986ء میں ان قوانین میں مزید شقیں شامل کی گئیں۔ 1980ء میں اسلامی شخصیات کے خلاف توہین آمیز بیانات کو جرم قرار دیا گیا اور تین سال قید کی سزا مقرر کی گئی۔ 1982ء میں جان بوجھ کر قرآن کی بے حرمتی کی سزا پھانسی مقرر کر دی گئی۔ 1986ء میں پیغمبرِ اسلام کی توہین کی سزا بھی موت یا عمر قید مقرر کر دی گئی۔ ان میں سے اکثر قوانین کے تحت جب الزام عائد کیا جاتا ہے تو پولیس کو اختیار ہے کہ وہ کسی وارنٹ کے بغیر ملزم کو گرفتار کر سکتی ہے اور اپنی تحقیقات کا آغاز کر سکتی ہے۔ اس سب کے باوجود لوگ ہیں کہ 'خود ہی قصہ نمٹانے‘ چل پڑتے ہیں۔
مذہب، بلاشبہ ایک ایسا معاملہ ہے کہ جس پر پاکستانیوں کی اکثریت جذباتی ہو جاتی ہے۔ رسول پاک صلی اللہ علیہ وسلم کی ذاتِ مبارک اور ان کی آل کے حوالے سے اپنی، اپنے ماں باپ اور اولاد کی جان اور مال کو قربان کرنا ہم اپنے ایمان کا حصہ سمجھتے ہیں اور بلاشبہ اس پر فخر بھی کرتے ہیں‘ لیکن میرے نزدیک سوچنے اور سمجھنے کی بات یہ ہے کہ کیا ہمارا مذہب، ہمیں اس طرح بغیر کسی مقدمہ کے، بغیر کسی سماعت کے، بغیر کسی ثبوت کے اور بغیر کسی گواہی کے، خود سے سب کچھ اخذ کرکے اس طرح وحشیانہ اور بربریت پر مشتمل سزا کا حق دیتا ہے؟ کیا ریاست پاکستان کسی بھی شہری کو توہین مذہب کے نام پر یوں مار دینے کا وزن برداشت کر سکتی ہے؟
وزیراعظم عمران خان نے سیالکوٹ میں سری لنکن شہری کے ساتھ پیش آنے والے واقعے کی شدید مذمت کرتے ہوئے اسے پاکستان کے لیے ایک شرمناک دن قرار دیا ہے۔ انہوں نے ایک ٹویٹ میں کہا کہ 'سیالکوٹ میں مشتعل گروہ کا ایک کارخانے پر گھناؤنا حملہ اور سری لنکن منیجر کا زندہ جلایا جانا پاکستان کے لیے ایک شرمناک دن ہے۔ میں خود تحقیقات کی نگرانی کر رہا ہوں اور دوٹوک انداز میں واضح کر دوں کہ ذمہ داروں کو کڑی سزائیں دی جائیں گی، گرفتاریوں کا سلسلہ جاری ہے‘۔
آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے بھی اس واقعے کی شدید مذمت کرتے ہوئے اسے انتہائی شرمناک واقعہ قرار دیا اور کہا کہ ایسے ماورائے عدالت اقدام قطعاً ناقابل قبول ہیں۔ قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف شہباز شریف نے کہا کہ یہ بہت اندوہناک واقعہ ہے۔ انہوں نے ذمہ داران کے خلاف سخت سے سخت قانونی کارروائی کا مطالبہ کیا ہے۔ پاکستان مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز شریف نے ٹویٹر پر اپنے ردعمل میں کہا ہے کہ سیالکوٹ میں ہونے والے 'دل خراش واقعے نے دل چیر کر رکھ دیا‘۔
کیا یہ بیانات کافی ہیں یا اب اس سے آگے بھی کچھ ہونا چاہیے؟ اگر ہم اس سارے عمل پر غور کریں تو میرے نزدیک یہ ریاست کی ناکامی ہے کہ اس نے ایک جنونی معاشرہ تشکیل دے دیا ہے جہاں اس قسم کے غیر انسانی واقعات ہوتے ہیں۔ ایسے واقعات نئے نہیں بلکہ اس سے پہلے بھی ہم دیکھ چکے ہیں کہ اس قسم کے ہجوم نے قانون کو کب کب اور کس کس طرح سے اپنے ہاتھ میں لیا۔ قانون کی بالادستی شاید ایک خواب بن گئی ہے۔ اس سے یہ بھی پتا چلتا ہے کہ معاشرے میں قانون کا خوف بھی ختم ہو گیا ہے جس کی بنا پر اس طرح کے درندگی کے واقعات دیکھنے میں آتے ہیں۔ شاید یہی وجہ ہے کہ قوم کے نام پر ایک ایسا ہجوم بن رہا ہے جو روز بروز مزید مشتعل ہوتا جارہا ہے۔

Advertisement
روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں