انٹر نتائج:افسران کیخلاف مقدمات قائم کیے جائیں ،حافظ نعیم

انٹر نتائج:افسران کیخلاف مقدمات قائم کیے جائیں ،حافظ نعیم

کراچی (اسٹاف رپورٹر )امیرجماعت اسلامی کراچی حافظ نعیم الرحمن نے کہا ہے کہ نگراں وزیر اعلیٰ مقبول باقر کی انٹر سال اول ے نتائج کے سلسلے میں قائم کردہ کمیٹی کی رپورٹ کے مطابق امتحانی کاپیوں کی جانچ کا عمل غیر شفاف تھا۔۔۔

بیشتر عملہ غیر تربیت یافتہ اور اسٹینڈرڈ آپریٹنگ سسٹم سے ناواقف تھا، امتحانات کے پیٹرن کی تبدیلی، اس تبدیلی کے ممکنہ نتائج سے عدم آگاہی اور کسی گائیڈ لائین کی غیر موجودگی کے باعث ایگزامنر نے من مانے نمبرز دیئے ، بیشتر کاپیاں گھروں پر چیک کی گئیں۔ ہمارا مطالبہ ہے کہ اس عمل میں ملوث تمام نا اہل و کرپٹ افسران کو برطرف کر کے مقدمات قائم کیے جائیں۔ ہم کراچی کے طلبہ و طالبات کے لیے آئینی،قانونی اور جمہوری جدوجہدکریں گے ۔ بیان میں انہوں نے مزید کہا کہ کراچی کے طلبہ و طالبات کے ساتھ زیادتی ہوئی ہے ، ہم کراچی کے نوجوانوں کا مستقبل تباہ نہیں ہونے دیں گے ۔ چند گریس مارکس دینے سے ازالہ نہیں ہو گا۔ اس لیے ضروری ہے کہ ان نتائج کو منسوخ کیا جائے اور بارہویں جماعت کے امتحانات اور نتائج مکمل شفاف بنائیں جائیں او ر اسی کی بنیاد پر گیارہویں جماعت کے نتائج کا فیصلہ کیا جائے ۔پورے سندھ میں بارہویں جماعت کا پیپر ایک ہی ہونا چاہیئے اور اسی بنیاد پر میڈیکل و انجینئرنگ کے داخلے دیئے جائیں۔ انہوں نے کہاکہ جب سندھ ٹیکسٹ بک بورڈکا نصاب ایک ہی ہے تو پرچہ اور امتحانات الگ الگ کیوں ہوتے ہیں۔ 

 

Advertisement
روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں