نیوز الرٹ
  • بریکنگ :- حکومت نےبجلی 4 روپے 74 پیسےفی یونٹ مہنگی کردی
  • بریکنگ :- اسلام آباد:نیپراکی جانب سےنوٹیفکیشن جاری کردیاگیا
  • بریکنگ :- بجلی اکتوبرکی فیول پرائس ایڈجسٹمنٹ کی مدمیں مہنگی کی گئی،نوٹیفکیشن
  • بریکنگ :- صارفین سےاضافہ دسمبرکےبجلی بلوں میں وصول کیاجائےگا،نوٹیفکیشن
  • بریکنگ :- بجلی صارفین پر 60 ارب روپےسےزائدکااضافی بوجھ پڑےگا
  • بریکنگ :- کےالیکٹرک اورلائف لائن صارفین پراطلاق نہیں ہو گا
Coronavirus Updates
"DVP" (space) message & send to 7575

بھارت کو ٹرمپ کی میٹھی گولیاں

ہندوستان کے بارے میں امریکی پالیسی بھی عجیب ہے۔ ایک طرف وہ ہمیں چین کے خلاف اکسانے کی کوشش کر رہا ہے اور ہر طرح کی مدد کو لٹکا رہا ہے اور دوسری طرف وہ امریکہ میں تعلیم حاصل کرنے والے ہندوستانی طلباء اور تارکین وطن کو تباہ کرنے پر تلا ہوا ہے۔ امریکی حکومت نے ابھی ایک نیا حکم جاری کیا ہے، جس کے مطابق آج کل 'آن لائن‘ تعلیم لینے والے تمام ہندوستانی طلباء کے ویزے منسوخ کر دیئے جائیں گے۔ امریکہ میں، کورونا نے ایسی خوفناک شکل اختیار کر لی ہے کہ تقریباً تمام یونیورسٹیوں نے اپنے طلبا کو انٹرنیٹ کے ذریعے گھر سے ہی تعلیم دینا شروع کر دیا ہے۔ اس وقت امریکہ میں ہندوستان سے دو لاکھ طلبا ہیں۔ اگر ان کے ویزے منسوخ کر دیئے گئے ہیں تو ان سب کو فوری طور پر ہندوستان آنا ہو گا۔ ٹرمپ انتظامیہ سے پوچھیں کہ ان لاکھوں افراد کو ہندوستان کون لائے گا؟ جو فیس انہوں نے ادا کی ہے وہ کون واپس کرے گا؟ انہوں نے اپنے گھروں کا جو ایڈوانس کرایہ دیا ہے اس کا کیا ہو گا؟ کیا وہ طلباء جو لاک ڈائون کی پہلی چھٹی کے دوران ہندوستان آئے تھے، وہ امریکہ جاکر اپنے کیمپ کا احاطہ کرکے ہندوستان واپس آئیں گے؟ ٹرمپ نے ان بھارتی طلباء کے سروں پر تلوار لٹکا دی ہے۔ اس سے پہلے اس نے H-1B ویزا منسوخ کردیا تھا۔ انہوں نے یہ سب کیوں کیا؟ ایک طرف انہوں نے ہمارے وزیر اعظم نریندر مودی سے بہت زیادہ مکر کیا ہے اور دوسری طرف وہ این آر آئیوں پر تیزاب چھڑکنے سے باز نہیں آ رہے ہیں۔ اصل وجہ ان کا انتخاب ہے، جو نومبر میں ہونا ہے۔ وہ اس میں اپنی لٹیا غرق ہوتے دیکھ رہے ہیں۔ وہ امریکی رائے دہندگان کو یہ پیغام دینا چاہتے ہیں کہ وہ ہندوستانیوں کو بھگا کر امریکی عوام کو ملازمتیں دلا رہے ہیں۔ یہ سچ ہے کہ امریکہ میں مقیم غیر ملکیوں میں ہندوستانی سب سے زیادہ تعلیم یافتہ اور متمول کمیونٹی ہیں، لیکن یہ بھی سچ ہے کہ امریکہ کی خوشحالی میں ان کا حصہ تمام تارکین وطن میں سب سے زیادہ ہے۔ اگر تمام ہندوستانی آج ہی امریکہ چھوڑنے کا فیصلہ کرتے ہیں تو امریکہ گھٹنوں کے بل رینگنا شروع کر دے گا۔ یہی وجہ ہے کہ امریکہ کے 136 کانگریس مین اور 30 سینیٹرز نے ٹرمپ انتظامیہ کو سنبھلنے کا انتباہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ کیا اس کورونا دور میں ٹرمپ انہیں یونیورسٹیوں میں کلاسز شروع کرنے پر مجبور کریں گے۔ بہت ساری یونیورسٹیوں نے اس حکومتی من مانی کے خلاف عدالتوں سے رجوع کیا ہے۔ اگر انہیں راحت نہیں ملتی تو پھر انہیں غیر ملکی طلباء سے ملنے والے 45 ارب ڈالر کا نقصان برداشت کرنا پڑے گا۔ کیا کریں؟ کیا انہیں ان یونیورسٹیوں کی آمدنی کی فکر کرنی چاہئے یا انہیں اپنی کرسی بچانی چاہئے؟ کوووڈ19 نے ان کی کرسی ہلا دی ہے۔ ہندوستانی حکومت ٹرمپ کے اس بے جا اقدام کی مخالفت نہیں کرے گی کیونکہ امریکی رہنما ہر دوسرے دن چین مخالف میٹھی گولیاں ہمارے وزیر اعظم، وزیر خارجہ اور وزیر دفاع کو دیتے رہتے ہیں۔
نیپال میں بھارتی چینلوں پر پابندی
نیپال نے بھارت کے ٹی وی چینلوں پر پابندی عائد کردی ہے۔ صرف دور درشن ہی چلتا رہے گا۔ یہ پابندی اس لئے عائد کی گئی ہے کہ ہمارے کچھ ٹی وی چینلوں نے نیپال کے وزیر اعظم کھڈگ پرساد اولی اور چین کی خاتون سفیر یانکی کے بارے میں کچھ قابل اعتراض تبصرے کردیئے تھے اور کسی اخبار نے اولی پر ایک مزاحیہ کارٹون بھی شائع کردیا تھا۔ اولی حکومت کا یہ جارحانہ ردعمل فطری ہے، کیونکہ ان کی جان اس وقت بحران میں پھنسی ہوئی ہے لیکن نیپال کی اس کارروائی کا پیغام ہمارے چینلوں کے لئے واضح ہے۔ پہلی بات تو یہ ہے کہ نیپال نے دور درشن پر پابندی کیوں نہیں لگائی؟ اسے جاری کیوں رکھا؟ یہ حقیقت ہے کہ دور درشن کے مقابلے غیر سرکاری چینلوں کے ناظرین کی تعداد زیادہ ہوتی ہے۔ کیوں ہوتی ہے؟ کیونکہ وہ اپنے کروڑوں شائقین کو لبھانے کے لئے چٹ پٹے، جذباتی مناظر اور مواد دکھاتے ہیں۔ ان پر ہونے والی بحثوں میں سیاسی پارٹیوں کے ترجمان ایک دوسرے پر حملے کرتے ہیں۔ اکثر وقار اور شائستگی کی خلاف ورزی کرتے ہیں۔ جس موضوع پر بحث ہوتی ہے، اس کے ماہرین اور دانشور تو کبھی کبھی ہی دکھائی پڑتے ہیں۔ ٹی وی کے بکسے کو امریکہ میں پچاس سال پہلے 'ایڈیٹ باکس‘ یعنی (بے وقوف بکسا) کہا جاتا تھا، وہ آج کل براہ راست دیکھنے کو ملتا ہے۔ ان دنوں کولمبیا یونیورسٹی کے پروفیسر اسے 'بے وقوف بکسا‘ کیوں کہتے تھے، یہ بات آج کل سمجھ میں آتی ہے۔ اس میں شک نہیں کہ بھارتی چینلوں اور اینکروں کا رویہ مثالی نہیں ہے۔ نیپال حکومت اس وقت بحران میں لٹکی ہوئی ہے۔ وہ کچھ نیپالی چینلوں پر بھی روک لگانے والی ہے۔ اسی لئے اس نے بھارتی چینلوں کے خلاف اتنا سخت قدم اٹھا لیا ہے لیکن اولی مخالف نیپالی لیڈر بھی بھارتی چینلوں پر روک لگانے کی حمایت کر رہے ہیں۔ یہ ناممکن نہیں کہ کچھ چینلوں پر نیپال ہتک عزت کا مقدمہ بھی چلا دے۔ بہتر تو یہی ہے کہ اس وقت اولی اپنی حکومت بچانے پر توجہ دیں۔ چینلوں پر بولے جانے والے جملوں اور چلنے والی نوٹنکیوں پر شائقین بھی کتنا دھیان دیتے ہیں؟ ادھر بولا ادھر ہوا میں اڑا۔
کیا کسی لیڈر میں اتنی طاقت ہے؟
بھارت کا چین کے ساتھ وادی گلوان میں مقابلہ ہوا، لیکن دیکھئے یہاں دنگل بی جے پی اور کانگریس کے مابین جاری ہے۔ دونوں جماعتیں ایک دوسرے پر اس طرح حملہ آور ہیں کہ ہندوستانی اور چینی رہنمائوں نے ایک دوسرے پر حملہ نہیں کیا۔ کانگریس قائدین نے وزیر اعظم کا نام تبدیل کیا اور چین کے سامنے گھٹنے ٹیکنے کا الزام لگاتے ہوئے کہا کہ 'پی ایم کیئرز فنڈ‘ میں بی جے پی نے ایک چینی کمپنی سے7 کروڑ روپے کا عطیہ لیا ہے۔ اس پر بی جے پی اور حکومت کا بھڑک اٹھنا فطری تھا۔ اس نے اب سونیا پریوار کے تین ٹرسٹوں پر تفتیش بٹھا دی ہے اور ان پر چینی حکومت اور چینی سفارت خانے سے کروڑوں روپے لینے کا بھی الزام عائد کیا ہے۔ کانگریس قائدین بی جے پی حکومت پر الزام لگا رہے ہیں کہ وہ چین کو شکست نہ دے سکنے کا نزلہ کانگریس پر اتار رہی ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ وزیر اعظم کیئرز فنڈ میں کتنا پیسہ آیا ہے، کیوں آیا اور کہاں استعمال کیا گیا، سب کچھ بتایا جائے۔ اس کے علاوہ انہوں نے یہ بھی مطالبہ کیا ہے کہ مودی سرکار بی جے پی سے وابستہ متعدد ٹرسٹوں اور تنظیموں کی جانچ پڑتال سے کیوں بھاگ رہی ہے؟ سوال صرف یہ نہیں ہے کہ ان سیاسی تنظیموں کے پاس یہ رقم کہاں سے آئی ہے، کہیں یہ رقم غیر ملکی بینکوں میں چھپائی تو نہیں گئی ہے اور کیا خیراتی ادارے کا بھی غلط استعمال ہوا ہے؟ ہر حکومت کو ان امانتوں پر گہری نظر رکھنی چاہئے جن میں سیاسی جماعتیں اور قائدین ملوث ہیں، لیکن اصل مسئلہ یہ ہے کہ سیاست بدعنوانی کے بغیر نہیں چل سکتی۔ امانتوں کا کام بلا تعطل جاری ہے، لہٰذا ان کے کنبہ کے افراد اور ممبران ٹرسٹ پر قابض ہیں۔ قانون کے تحت لازمی قرار دیا جانا چاہئے کہ ان ٹرسٹوں کی آمدنی اور اخراجات کی مکمل تفصیلات ہر سال عام کی جائیں اورصرف ایک خاندان کو کسی ٹرسٹ میں نہ رکھا جائے۔ یہ بھی غور طلب امر ہے کہ آیا امداد دینے والے کی اہلیت دیکھی جاتی ہے یا نہیں؟ کوئی مجرم، خود غرض، کوئی ملک مخالف یا غیر اخلاقی شخص جو آپ کے ٹرسٹ میں عطیہ کرناچاہتا ہے اس کا عطیہ قبول کیا جائے یا نہیں؟ یہ ایک بڑا مسئلہ ہے۔ ایسے افراد کے ذریعے دیئے گئے عطیات کو قبول کرنے کی اہلیت انہیں میں ہو سکتی ہے جن کے سینے میں مہارشی دیانند سرسوتی کا دل دھڑکتا ہو، جنہوں نے اپنے سرپرست جودھ پور کے راجہ کو ڈانٹتے ہوئے کہا تھا ''خود کو سنگھ کہتے ہو اور طوائف کی پالکی کو کندھا دیتے ہو؟‘‘ اسی طوائف ننھی جان نے اپنے باورچی جگن ناتھ کو پٹا کر دیانند جی کے کھانے میں زہر ملایا تھا۔ کیا کسی لیڈر میں اتنی طاقت ہے؟

Advertisement
روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں