نیوز الرٹ
  • بریکنگ :- وزیراعظم سے 115ویں نیشنل مینجمنٹ کورس کےافسران کی ملاقات
  • بریکنگ :- وزیراعظم عمران خان کی افسران سے گفتگو
  • بریکنگ :- سرکاری ملازمین عوامی خدمت کی بڑی ذمہ داری نبھاتےہیں، وزیراعظم
  • بریکنگ :- ترقی اورعزت کمانےکاراستہ ہمیشہ چیلنجزسےبھراہوتاہے،وزیراعظم
  • بریکنگ :- نوجوانوں کااخلاقی معیاربلندکرناہماری ترجیح ہے،وزیراعظم
  • بریکنگ :- آپ کےسامنےبطورفیصلہ ساز2راستےہوں گے،وزیراعظم
  • بریکنگ :- ایک راستہ بدعنوانی اورتباہی کی طرف لےجاتاہے،وزیراعظم
  • بریکنگ :- دوسراراستہ عزت اورترقی کاہےجوچیلنجزسےبھراہے،وزیراعظم
  • بریکنگ :- ہمارےنظام تعلیم نےطبقاتی تفریق پیداکی،وزیراعظم
  • بریکنگ :- حکومت ملک بھرمیں یکساں نصاب تعلیم لارہی ہے،وزیراعظم
  • بریکنگ :- یکساں نصاب تعلیم سےہمارےبچوں کومضبوط بنیادمل سکے گی،وزیراعظم
  • بریکنگ :- رحمت اللعالمین ﷺاتھارٹی کےقیام کامقصدمعاشرے کااخلاقی معیاربلند کرنا ہے،وزیراعظم
  • بریکنگ :- بچوں کوموبائل فون کےذریعےہرقسم کےموادتک رسائی ہے،وزیراعظم
  • بریکنگ :- حکومت نوجوانوں اوربچوں کوایک متبادل فراہم کرےگی،وزیراعظم
  • بریکنگ :- طاقت کااستعمال انتہاپسندی کےخاتمےکاحل نہیں،وزیراعظم
  • بریکنگ :- اخلاقی اقدارکےفروغ سےمعتدل اورترقی پسندمعاشرہ تشکیل پائے گا،وزیراعظم
  • بریکنگ :- سابق حکومتوں کی بدعنوانیوں سےبھاری قرضےورثےمیں ملے،وزیراعظم
  • بریکنگ :- کوروناکےباوجودپاکستان نےاپنی معیشت کوسنبھالا،وزیراعظم
  • بریکنگ :- ہماری حکومت نے 10 ڈیموں کی تعمیرکاکام شروع کیا،وزیراعظم
  • بریکنگ :- حکومت تمام شعبوں میں طویل المدتی اصلاحات کےنفاذکیلئےپرعزم ہے،وزیراعظم
  • بریکنگ :- پاکستان جلدخطےکااہم ملک بنےگاجیسا 70 کی دہائی میں تھا،وزیراعظم
Coronavirus Updates
"DVP" (space) message & send to 7575

’راشٹر منچ‘ کی ناکامی

ترنمول کانگریس کے نائب صدر اور سابق مرکزی وزیر یشونت سنہا نے پہل کی اور اپنے 'راشٹر منچ‘ کی جانب سے ملک بھر کی سیاسی جماعتوں کا اجلاس طلب کیا۔ حزب اختلاف کی جماعتوں کے اس اجلاس پر ایک ہفتے سے اخبارات میں بڑے پیمانے پر تبادلہ خیال کیا جا رہا تھا۔ کہا جا رہا تھا کہ تمام اپوزیشن جماعتوں کا ایک مضبوط اتحاد تشکیل پائے گا، جو اگلے عام انتخابات میں نریندر مودی اور بی جے پی کو حیرت زدہ کر دے گا۔ لیکن کیا ہوا؟ کھودا پہاڑ اور چوہیا بھی اس سے باہر نہیں نکلی۔ میں یہ اس لیے کہہ رہا ہوں کہ اس ملاقات کے بعد اس کا ترجمان بالکل بدلا بدلا نظر آیا۔ سب سے بڑی بات جو انہوں نے کہی‘ یہ تھی کہ انہوں نے متبادل حکومت بنانے کے لیے یہ اجلاس نہیں بلایا تھا اور اس کا مقصد بی جے پی حکومت کی مخالفت کرنا نہیں ہے۔ اگر ایسا ہی ہے تو، اجلاس کیوں بلایا گیا؟ اس میں تمام چھوٹی پارٹیوں کو بلایا گیا تھا لیکن منتظمین بی جے پی کو کیسے بھول گئے؟ بی جے پی کو اس میں کیوں نہیں بلایا گیا؟ کیا وہ ملک کی حالت کو بہتر بنانے میں اپنا کردار ادا نہیں کر سکتی؟ کیا وہ اس قابل بھی نہیں کہ اپنی کچھ تعمیری تجاویز قومی فورم کے عظیم قائدین کو دے سکے؟ ملک کی اس حکمران جماعت کی نظراندازی فطری تھی، لیکن سب سے بڑی حیرت کی بات یہ بھی تھی کہ ملک کی مشہور ترین اپوزیشن جماعت نے بھی اس اجتماع میں حصہ نہیں لیا۔ کانگریس کے پانچ رہنمائوں کو دعوت نامے بھیجے گئے تھے لیکن پانچوں نے لکھا کہ وہ بہت مصروف ہیں۔ ان سے پوچھیں کہ وہ کس چیز میں مصروف تھے؟ کیا آپ ماں بیٹے کی خوشی میں مصروف تھے؟ نہیں، وہ جانتے تھے کہ اس میٹنگ میں شرکت کا کوئی فائدہ نہیں ہے۔ اس میٹنگ میں ملک کی دونوں بڑی آل انڈیا پارٹیوں کا ایک معمولی رہنما بھی موجود نہیں تھا۔ اس میں حصہ لینے والی آٹھ جماعتوں کے قائد صوبوں میں سکڑ رہے ہیں اور ان رہنمائوں کو بھی عظیم قائدین نہیں سمجھا جاتا ہے، حالانکہ ان میں بہت سے ذہین لوگ ہیں۔ دوسرے لفظوں میں، سیاسی نقطہ نظر سے، یہ ملاقات اپنی اہمیت کھوتی نظر آئی، لیکن یہ اطمینان کی بات ہے کہ اس اجلاس میں تقریباً نصف درجن دانشور موجود تھے۔ ان حضرات کی اپنی فکری اور اخلاقی اہمیت ہے لیکن ان کی یہ خوبی یہ ہے کہ وہ خود کونسلر کا انتخاب بھی نہیں جیت سکتے۔ دوسرے لفظوں میں، یہ منصوبہ متبادل سیاسی اتحاد بنانے کے معاملے میں ناکام ثابت ہوا ہے۔ کوئی متبادل منصوبہ تبھی کامیاب ہو سکتا ہے جب اس کے پاس بی جے پی سے بہتر منشور ہو۔ اس کی غیر موجودگی میں، اس طرح کا زبانی جمع خرچ جاری رہے گا اور بی جے پی کو بدستور فائدہ ہوتا رہے گا۔
بائیڈن اور پیوٹن: اب آگے کیا ہو گا؟
جنیوا میں امریکی صدر جو بائیڈن اور روسی صدر ولادیمیر پیوٹن کے مابین ہونے والی ملاقات نہ صرف ان دونوں سپر پاورز کے لیے اہم ہے بلکہ عالمی سیاست کے نقطہ نظر سے بھی یہ ایک اہم واقعہ ہے۔ سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور پیوٹن کے مابین پہلے سے جاری گٹھ جوڑ کی کہانیاں کافی مشہور ہو چکی تھیں اور جب انہوں نے 2018 میں ہیلنسکی میں بات چیت کی تو ان کی ملاقات کا ماحول بہت گرم تھا، لیکن بائیڈن اور پیوٹن دونوں ملنے سے پہلے بہت محتاط اور تذبذب کا شکار تھے۔ اس کے باوجود یہ اعتراف کرنا پڑے گا کہ دونوں رہنمائوں کے درمیان ملاقات بہت ہی مثبت رہی۔ پہلا واقعہ یہ ہوا کہ دونوں ممالک نے اپنے سفیروں کو ایک دوسرے کے دارالحکومت واپس بھیجنے کا اعلان کیا۔ بائیڈن کی طرف سے پیوٹن کے لیے ''قاتل‘‘ کا لفظ استعمال کرنے کے بعد دونوں ممالک نے اپنے سفیروں کو واپس بلا لیا تھا۔ بائیڈن نے روسی حزبِ اختلاف کے رہنما الیکسی ناوالنی کے حوالے سے سخت موقف اختیار کیا اور صحافیوں کو بتایا کہ اگر جیل میں قید ناوالنی کو مارا گیا تو اس کے نتائج سنگین ہوں گے۔ یہ میری رائے میں ایک انتہائی ردِ عمل ہے۔ آپ کسی بھی ملک کے اندرونی معاملات میں اپنی رائے کا اظہار تو کر سکتے ہیں لیکن ان میں ٹانگ اڑانے کی کوشش کرنا کس حد تک ٹھیک ہے؟ دونوں رہنمائوں نے جوہری اسلحے پر قابو پانے کے متعدد معاہدوں اور سائبر حملوں کی روک تھام پر بھی غور کرنے کا عزم کیا ہے۔ پیوٹن نے یوکرائن کی مشرقی سرحد پر روسی افواج کو اکٹھا کرنے اور کچھ روسیوں کو سائبر حملوں کا ذمہ دار قرار دینے کے امریکی رویے کو بھی مسترد کر دیا لیکن ان اختلافات کے باوجود دونوں رہنمائوں کے مابین چار گھنٹے کی گفتگو میں کسی بھی معاملے پر کوئی بھی بات چیت نہیں ہوئی۔ بعد میں صحافیوں کو جاری کیے گئے اعلامیے کے مطابق‘ دونوں عالمی طاقتوں کے مابین بامقصد بات چیت کا آغاز ہو چکا ہے۔ دونوں کو اس ملاقات سے زیادہ کی توقع نہیں تھی لیکن اب اس ملاقات نے دونوں کے مابین بات چیت کے دروازے کھول دیے ہیں۔ بائیڈن کا بیان قابل ذکر ہے کہ وہ روس کے خلاف نہیں ہیں لیکن وہ امریکی عوام کے مفادات کے حق میں ہیں۔ بائیڈن پیوٹن کو ''قاتل‘‘ کہنے کے باوجود ان سے ملنے پر راضی ہو گئے، اس کی اصل وجہ میرے خیال میں چین ہے۔ امریکہ چین سے سخت ناراض ہے۔ وہ کس طرح دو سپر پاوروں کو اپنے خلاف متحد ہونے کی اجازت دے گا؟ فی الحال اگر سرد جنگ کو روکنا ہے تو روس امریکہ تعلقات کا ہموار رہنا بہت ضروری ہے۔ اس میں کوئی تعجب نہیں کہ بائیڈن پیوٹن بات چیت بائیڈن اور چینی صدر شی چن پنگ کے پرانے واقف کار ہونے کے باوجود، بین الاقوامی سیاست میں ایک نئی راہ پیدا کر سکتی ہے۔
جی سیون اور بھارت
جی سیون کی چند روز قبل ہونے والی کانفرنس کے مشترکہ بیان اور قائدین کی تقاریر میں سب سے زیادہ زور اس بات پر دیا گیا کہ یہ گروہ دنیا میں جمہوریت کا سب سے مضبوط حامی ہے۔ یہ سچ ہے کہ ان تمام ممالک میں جمہوری نظام موجود ہے۔ آمریت نہیں ہے۔ یہ ایک کثیر جہتی نظام ہے۔ حکومتیں ووٹوں کی بنیاد پر وہاں الٹتی پلٹتی رہتی ہیں۔ سب سے پہلے، یہ سات ممالک کون سے ہیں؟ یہ امریکہ، برطانیہ، فرانس، جرمنی، اٹلی، کینیڈا اور جاپان ہیں۔ ان ممالک میں سے بیشتر نے ایشیا، افریقہ اور لاطینی امریکہ میں آمریت کو فروغ دیا۔ آج بھی ان کے غیر جمہوری ممالک کے ساتھ گہرے تعلقات ہیں۔ وہ اپنے قومی مفادات کے تابع ہیں۔ ان ممالک میں ان کا نظام حکومت سے کوئی لینا دینا نہیں ہے۔ جب وہ خود کو جمہوری گروپ کہتے ہیں تو ان کی انگلیاں چین، روس، ایران اور کیوبا کی طرف ہوتی ہیں، کیونکہ آج یہ ان کے حریف ہیں۔ یہ ایک طرح سے چلنے والی سرد جنگ ہے۔ یہ سچ ہے کہ فرانسیسی صدر ایمانویل میکرون نے فرانس کو غیرجانبدار قرار دیا، لیکن یہ جی7 کانفرنس چین مخالف اجتماع کے طور پر سامنے آئی۔ اگرچہ چند روز پہلے ہونے والی حالیہ کانفرنس میں ماحولیاتی بہتری کیلئے 100 بلین ڈالر خرچ کرنے، کووڈ ویکسین کو آفاقی بنانے، ملٹی نیشنل کمپنیوں سے 15 فیصد ٹیکس جمع کرنے وغیرہ کے معاملات پر بھی قراردادیں منظور کی گئی ہیں، لیکن اگر آپ قائدین کی تقاریر کا جائزہ لیں تو اس کے چاقوئوں کی تیز دھار صرف چین پر ہی چلی۔ انہوں نے چین کے ایغور، ہانگ کانگ، تائیوان اور کووڈ پھیلانے والے معاملات پر اس قدر زور دیا کہ گویا اس کانفرنس کو صرف چین کی مخالفت کیلئے بلایا گیا تھا، لیکن ہندوستانی وزارت خارجہ کے عہدیداروں نے تحمل دکھایا۔ انہوں نے مودی کی تقریر میں ایک لائن بھی نہیں لکھی، جس کا مطلب یہ ہواکہ ہندوستان کسی بھی ملک کی ٹانگ کھینچنے کیلئے اس کانفرنس میں شامل ہوا ہے۔ مودی نے تینوں فورموں میں اپنی تقاریر میں ماحولیات کے تحفظ کیلئے تعمیری تجاویز پیش کیں اور دنیا کے ضرورت مند ممالک کو اینٹی کورونا ویکسین دلوانے کی وکالت کی۔ ہندوستان نہ پہلے کسی فوجی گروپ میں شامل ہوا ہے اور نہ ہی اب وہ کسی بھی سیاسی گروپ میں شامل ہونے کی غلطی کرے گا۔

Advertisement
روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں