Coronavirus Updates
"DVP" (space) message & send to 7575

بھارت میں گینگ ریپ کے واقعات

ہاتھرس کی دلت لڑکی کے ساتھ چاردرندوں نے جس حیوانیت کامظاہرہ کیااس نے نربھیا کے زخموں کو پھرسے ہراکردیاہے۔ یہ عصمت دری اور قتل دونوں ہے۔ 14 ستمبر کو چاردرندوں نے اپنے ہی گاؤں کی ایک دلت لڑکی کو درندگی کا نشانہ بنایا ‘ اس کی زبان کاٹ کر اسے دوپٹے سے باندھ کر گھسیٹا۔ ہاتھرس کے ہسپتال میں اس کا صحیح علاج نہیں ہوا۔ آخر کار 29 ستمبر کو اس نے دہلی کے ایک ہسپتال میں دم توڑدیا۔ ہاتھرس کی پولیس نے تقریباً ایک ہفتہ تک اس گھناؤنے جرم کی رپورٹ نہیں لکھی۔ اور اب پولیس نے آدھی رات کو بچی کی لاش کو نذرِآتش کردیا۔ اس کے اہل خانہ نے اس کی اجازت نہیں دی تھی اور ان میں سے کوئی بھی وہاں موجود نہیں تھا۔دوسرے الفاظ میں ‘ محکمہ پولیس کے اعلیٰ عہدیداروں نے اس گھنائؤنے جرم کو نظرانداز کیا۔ اب اگر ہاتھرس کے مقامی پولیس سٹیشن کے تھانے دارکاتبادلہ کردیا گیا ہے تو یہ معمولی اقدام ہے۔ جہاں تک چاروں درندوں کا تعلق ہے ‘ ان کی نشاندہی خود مقتولہ نے کی تھی اور انہیں گرفتار کرلیا گیا ہے۔ اب ان پر مقدمہ چلایا جائے گا اور ہمیشہ کی طرح برسوں لگیں گے۔ جب تک اسے سزا دی جائے گی لوگ سارا معاملہ بھول جائیں گے ‘ جیسا کہ نربھیا کے معاملے میں ہواتھا۔ ان کے مجرموں کو یقینا موت کی سزا سنائی گئی تھی ‘ لیکن وہ لگ بھگ بے معنی تھا کیونکہ دوسرے معاملات میں بھی سزائے موت واقع ہوتی ہے ‘ اسی طرح اس معاملے میں بھی ہوئی۔کیااس سزانے لوگوں کو متاثر کیا؟ کیا آئندہ عصمت دری کرنے والوں کے دلوں میں خوف پیدا ہوا؟ کیا اس سزا کے بعد ملک میں عصمت دری کے واقعات کم ہوئے ؟ کیا اب ہماری ماؤں‘ بہنوں کو پہلے سے زیادہ تحفظ کا احساس ہے ؟ بالکل نہیں۔ نربھیا کے قاتلوں کو خاموشی سے جیل میں لٹکا دیا گیا۔ جنگل میں کون رقص کررہاہے‘ کس نے دیکھا؟ یہ قاتل ‘ یہ سفاک اور جانور ‘ ان درندوں کو اس طرح سزا دی جانی چاہئے کہ مجرموں کی ہڈیاں کانپ جائیں۔ انہیں جیل کے اندر نہیں بلکہ ہاتھرس کے مصروف ترین چوراہے پر لٹکایا جانا چاہئے۔ عوامی رائے تو یہ ہے کہ ان کی لاشوں کو کتوں سے کٹوا کر جنگل میں پھینک دینا چاہئے۔ اس پورے منظر کو بھارت کے تمام ٹی وی چینلز پر براہ راست نشر کیا جانا چاہئے ‘ تبھی اس دلت بچی کے قتل کاانصاف ملے گا۔ اسے حقیقی انصاف ملے گا اور آئندہ ریپ کے ارتکاب سے قبل مجرم کی روح کانپے گی۔
زراعت قانون، کانگریس کے تضادات
کانگریس پارٹی نے پارلیمنٹ کے منظور کردہ زرعی قوانین کا مذاق اڑایا ہے۔ کانگریس اس معاملے پر تضادات کاشکار ہے ‘ کیونکہ اس نے اپنے 2019 ء کے انتخابی منشور میں کاشتکاری اور کاشتکاروں کے بارے میں جو وعدہ کیا تھا وہ آج ان کے برعکس بات کہہ رہی ہے۔ سونیا گاندھی کانگریس ریاستوں کے وزرائے اعلیٰ سے مرکزی حکومت کے قانون کو نظر انداز کرنے اور منڈی کے نظام کو پہلے سے کہیں زیادہ مضبوط بنانے کیلئے کہہ رہی ہیں۔ راہل گاندھی نے کہا ہے کہ مودی سرکار نے کسانوں کو یہ سزائے موت دی ہے۔ کانگریس صوبوں کی حکومتیں اپنے کسانوں کو مشتعل کرنے کیلئے پوری کوشش کر رہی ہیں۔ وہ اس قانون کے خلاف سپریم کورٹ بھی جا رہی ہیں۔اس مطالبے کا جواز پیش کیا جاسکتا ہے کہ کسانوں کی فصل کی کم سے کم قیمت کو قانونی حیثیت دی جائے تاکہ انہیں بڑی نجی کمپنیوں کے ذریعے دھوکہ نہ دیا جائے ‘ بلکہ کانگریس قائدین اپنے منشور کو غور سے پڑھیں۔ اس کے کسانوں کے وعدوں میں ‘ 11 ویں اور 12 ویں شق وہ ہیں جن پر حکومت عمل کر رہی ہے۔ انہوں نے واضح طور پر کہا ہے کہ کانگریس منڈی نظام (اے پی ایم سی ایکٹ) کو ختم کردے گی اور زرعی اجناس کی برآمدات اور بین الریاستی پابندیوں کو یکسر ختم کردے گی اور وہ کسانوں کو بھی کم سے کم قیمتیں دینے کا پختہ وعدہ کررہی ہے۔ وہ صرف انہیں اپنا سامان اوپن مارکیٹ میں فروخت کرنے کی اجازت دے رہی ہے تاکہ وہ زیادہ سے زیادہ رقم کما سکیں۔ یہ حکومت وہ نہیں کررہی جو کانگریس اسے بڑے پیمانے پر قرار دے رہی ہے اور جس کا انہوں نے خود سے وعدہ کیا تھا۔ پھر کانگریس اتنا شور کیوں مچا رہی ہے؟ یہی وجہ ہے کہ اس مفلوج پارٹی کو یہ وہم ہو گیا ہے کہ ملک کے کسان بھولے ہیں‘ انہیں غلط فہمی کا شکار بنانا آسان ہے۔ کسانوں کو بتایا جارہا ہے کہ ملک کے بڑے سرمایہ دار انہیں اپنا بندھوامزدور بنائیں گے ‘ وہ پیداوار میں سے کم رقم دیں گے اور منڈیاں ویران ہوجائیں گی۔ انہیں یہ نہیں بتایا جارہا کہ ملک کی کل پیداوار کا صرف 6 فیصد منڈیوں میں فروخت ہوتا ہے ‘ جس پر حکومت اور ایجنٹ آٹھ فیصد تک ٹیکس کھاتے ہیں۔ اب کسان چاہے تو اس سے آزاد ہوگا۔ اس کی پیداوار کو دوگنا اور چارگنا کرنے اور جدید بنانے کیلئے اس کے پاس باہر کے وسائل ہوں گے۔ اس کے باوجود اگر کسان کی پیداوار کی لاگت کم ہے یا اس کو دھوکہ دیا گیا ہے تو کیا ہماری پارلیمنٹ ماسک لگاکر بیٹھی ہوگی؟ تب اس حکومت کو دگنی رفتار سے بھاگ کر کسان کو بچانا ہوگا۔ وہ بچائیں گے ‘ کیونکہ وہ ایک ہزار‘ دو ہزار کمپنیوں سے نہیں 50 کروڑ کسانوں کے ووٹوں سے دوبارہ اقتدار میں آسکیں گی۔
سری لنکا کی دال میں کچھ کالا
سری لنکا اور ہندوستان کے مابین گزشتہ برسوں میں تعلقات میں بہت زیادہ اتار چڑھائو آیا ہے ‘ لیکن اب جبکہ سری لنکا میں ایک بھائی بھائی راج ہے ‘ یعنی گوٹابایا اور مہندرا راجاپکشا بالترتیب صدر اور وزیر اعظم ہیں ‘ تو ایسا لگتا ہے کہ تعلقات میں بہتری آرہی ہے۔ مہندرا راجاپکشا کچھ عرصہ قبل تک سری لنکا کے طاقتور صدر کی حیثیت سے حکمرانی کرچکے ہیں۔ انہیں تامل عسکریت پسندوں اور دہشت گردوں کا صفایا کرنے کا سہرا مل چکاہے۔ وہ سنہالی لوگوں کے سپر ہیرو ہیں‘لیکن ہندوستان کے ساتھ ان کے دو اختلافات ہیں‘ پہلا یہ کہ وہ تامل مخالف سمجھے جاتے ہیں۔ سری لنکا میں ‘ تاملوں نے ایک علیحدہ ملک بنانے کیلئے تحریک شروع کی تھی۔ جے وردھن اور شری ماو بنڈرنائیک کی حکومتیں اس پر قابو نہیں رکھ سکیں‘لیکن مہندرا راجاپکشا نے بھی تامل مخالف جنگ کی وجہ سے ہندوستان سے فاصلہ برقرار رکھا۔ہندوستان کی تمام حکومتیں سری لنکا کے تامل اقلیتوں کیلئے انصاف کا مطالبہ کرتی رہی ہیں اور انہیں خودمختاری دینے کی حمایت کرتی ہیں۔ اسی وجہ سے ‘ ہندوستان کا پڑوسی ہونے کے باوجود سری لنکا چین سے قریب ہوتاگیا ‘ لیکن مہند راجاپکشا کی حکومت نے اب پہلے ہندوستان کا نعرہ لگایا ہے۔ مہندرا راجاپکشا اور نریندر مودی کے درمیان بات چیت 26 ستمبر کو ہوئی تھی ‘ یہ ہندوستان کی نظر سے بہت اچھا تھا‘ لیکن تازہ ترین خبر یہ ہے کہ اس گفتگو کے بعد جو مشترکہ بیان سامنے آیا ہے وہ سری لنکا کی حکومت کی گفتگو سے غائب ہے۔ وزیر اعظم مودی نے راجاپکشا سے سری لنکا کے آئین کی 13 ویں ترمیم کو صحیح طور پر نافذ کرنے کی درخواست کی تھی‘ یعنی تاملوں کو وفاقی حقوق فراہم کریں‘ اختیارات کو یقینی بنائیں۔ ہماری وزارت خارجہ کے مطابق مہندرا راجاپکشا نے اس سے اتفاق کیا ‘ لیکن یہ معاہدہ سری لنکا کی حکومت کے بیان سے غائب ہے۔مہندر راجاپکشا کے بڑے بھائی اور صدر گوٹابایاراجا پکشا پہلے ہی کہہ چکے ہیں کہ ہماری حکومت اختیارات کے بجائے ترقی پر توجہ دے گی۔ یہ حکمراں سنہالی پارٹی کی مجبوری ہے کیونکہ سری لنکا کے بائیس کروڑ افراد میں سے 75 فیصد سنہالی ہیں اور تامل صرف 11تا12 فیصد ہیں۔ سری لنکا کے تامل اپنے حقوق کے تحفظ کیلئے ہندوستان اور خاص طور پر تامل ناڈو کی طرف دیکھ رہے ہیں۔اب صدر گوٹابایاراجا پکشا کا کہنا ہے کہ نیا آئین تشکیل دیا جائے گا جہاں سے 13 ویں ترمیم کو ختم کردیا جائے گا۔ یہ معاملہ نہ صرف سری لنکا کے سنہالیوں اور تاملوں کے مابین تناؤ پیدا کرے گا بلکہ اس سے ہندوستان اور سری لنکا کے مابین بھی تناؤ پیدا ہوگا۔

Advertisement
روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں