فلسفئہ مغرب اسپائی نواز: فلسفے کا شہزادہ

تحریر : ظفر سپل


اسپائی نوزا 24نومبر1632ء کو ایمسٹرڈیم میں پیدا ہوا۔ ایک مختصر سی زندگی کا پروانہ ہاتھ میں لے کر آنے والے فلسفیوں کے شہزادے نے ساری عمر ایک صوفی، درویش اور ولی کے طور پر گزاری۔وہ اپنے درون میں ایک گہرا مذہبی آدمی تھا، مگر ظاہراً کسی معروف عقیدے کا پیروکار نہ ہونے کی پاداش میں تمام مذاہب کے پیروکاروں نے اسے شدید مذہبی تنقید کا نشانہ بنایا۔ اس کی تحریروں پر پابندی لگائی گئی، انہیں نذر آتش کیا گیا اور بے حرمتی کی گئی۔ اس کے ساتھ یہ سب کچھ اس لئے کیا گیا کہ وہ سچائی تک عقیدے کی طاقت کی بجائے اپنے ریاضیاتی طریقہ کار کے ذریعے پہنچنا چاہتا تھا۔

تاجر باپ کے بیٹے کو کاروبار سے کوئی دلچسپی نہیں تھی۔ اس کی بجائے وہ اپنا زیادہ وقت ہیکل میں گزارتا تھا۔ اس وقت کے یہودی تعلیمی دستور کے مطابق وہ گھنٹوں تو رات اور تالمود (یا تلمود) کے مطالعہ میں گزارتا اور انتہائی بور کر دینے والے اس تعلیمی نصاب سے باقاعدہ لطف اندوز ہوتا۔ سکول کے اوقات کے بعد وہ اپنا وقت لاطینی اور قدیم یونانی زبان سیکھنے میں گزارتا تھا۔ گھر میں تو ظاہر ہے یہ لوگ پرتگالی زبان بولتے تھے لیکن اسپائی نوزا نے دلندیزی، فرانسیسی اور ہسپانوی زبان بھی سیکھی۔ لاطینی زبان سیکھنے کا شوق اسے بیس برس کی عمر میں، 1653ء میں فرانسس وان ڈن اینڈن کے قریب لے آیا۔ عیسائی وان ڈن اینڈن شاعر، ڈرامہ نگار تھا اس نے ہی اسپائی نوزا کو فلسفے کے متکلمانہ نظام، جدید فلسفے اور خصوصاً ڈیکارٹ سے متعارف کروایا۔

اب جب اسپائی نوزا نے لاطینی زبان پر دسترس حاصل کر لی تو پھر اس فکری میراث تک پہنچنا بہت آسان تھا جو ڈیموکری ٹس ، سقراط، افلاطون، ارسطو اور ایپی کیورس کی تالیفات اور زینو کی رواقیت کی صورت میں موجود تھی۔ اس نے موسیٰ بن میمون ابن جرسون اور ذرا غیر معروف فلسفی چسدائی کرس کاس کے خیالات تک رسائی حاصل کی۔

اسپائی نوزا نے ساری زندگی ایک درویش اور ولی کے طور پر گزاری اور یہ کہنا درست ہوگا کہ ماڈرن دنیا میں اسپائی نوزا کے علاوہ آج تک کسی نے فلسفیوں والی آئیڈیل زندگی نہیں گزاری۔ وہ اپنی ساری زندگی حقیر دنیا سے لاتعلق رہا۔ صرف اپنے آپ سے جڑا ہوا، اکیلا اور اپنے خیالات میں گم۔ کبھی کبھی تو وہ اپنے کمرے سے تین تین ماہ تک باہر نہ نکلتا۔ یہ سنگل کمرہ جہاں وہ پڑھتا لکھتا، عدسے رگڑتا اور تھکتا تو سو جاتا۔ وہ کبھی کبھی کہتا ’’میں نے اپنی زندگی اس سانپ کی طرح گزاری ہے جس کی دم اس کے منہ میں ہو‘‘۔ اس کے ایک سوانح نگار کیلیرس کے مطابق’’وہ غربت کے باوجود اپنے لباس کے بارے میں محتاط تھا، مگر یہ بھی ٹھیک ہے کہ وہ اس معاملے میں نمود و نمائش سے ماورا تھا۔ یہی وجہ ہے کہ ایک بار جب حکومت کا ایک نہایت اہم نمائندہ اس سے ملاقات کیلئے آیا تو وہ اس وقت ایک معمولی سا صبح کا گائون پہن کر بیٹھا ہوا تھا۔ اس پر رکن موصوف نے ناگواری کا مظاہرہ کیا اور اسے ایک قیمتی لبادہ پیش کیا مگر اسپائی نوزا نے کہا: ’’ اچھا لباس پہن کر انسان کی قدرو قیمت تو نہ بڑھ جائے گی اور جس چیز کی کوئی قدرو قیمت ہی نہ ہو، اس پر قیمتی غلاف چڑھانا نامعقولیت ہے‘‘۔

اسپائی نوزا اب 43برس کا ہو چلا تھا۔ دنوں کو عدسوں کی رگڑائی کی مشقت کا کام تھا اور سردیوں کی لمبی سیاہ راتوں میں اس کے اپنے خیالات کی آندھی۔ عدسوں کے شیشے کے باریک براوے نے اس کے پھیپھڑوں کو چھلنی کر دیا تھا اور ظاہر ہے اسے ٹی بی ہو گئی تھی۔ سردیاں ذرا زیادہ  بڑھیں تو اس کی صحت مزید بگڑ گئی اور وہ بستر مرگ پر دراز ہو گیا۔

21فروری 1677ء اتوار کا دن،اسپائی نوزا کی زندگی کا آخری دن ہے۔ اس وقت اس کا مالک مکان چرچ گیا ہوا تھا اور اس کا دوست ڈاکٹر میئر اس کے پاس تھا۔ ظاہر ہے، اسپائی نوزا نے کچھ زیادہ ورثہ نہیں چھوڑا ہو گا، مگر کہا جاتا ہے کہ سینکڑوں عد سے تھے جو ڈاکٹر میئراس کے مرنے کے فوراً بعد اٹھا کر رفوچکر ہو گیا۔ بعد میں اس نے یہ عد سے قدیم کلاسیکی اشیاء کے ڈیلر کارمیلیس کے ہاتھوں بیچ کر کافی رقم بنائی۔ اسپائی نوزا نے 160کتابوں پر مشتمل لائبریری بھی چھوڑی۔ چمڑے کی جلد والی یہ کتابیں جو پڑھنے کے علاوہ آرائش کیلئے بھی استعمال ہو سکتی تھیں، ان دنوں کے حساب سے کم نہیں تھیں۔ اسپائی نوزا نے اپنا کافی غیر مطبوعہ کام بھی چھوڑا تھا جس میں اس کی شاہکار کتاب ’’اخلاقیات‘‘ بھی شامل تھی۔ یہ کتاب اس کی وفات کے ایک سال بعد یا اسی سال مؤلف کے نام کے بغیر شائع ہوئی اور اس کے فلسفی دوستوں میں بانٹ دی گئی۔اسپائی نوزا کی زندگی میں اس کی صرف دو کتابیں شائع ہوئیں، ایک اس کے نام کے ساتھ اور دوسری اس کے نام کے بغیر۔

اپنی پہلی کتاب ’’ڈیکارٹ کے فلسفے کے اصول‘‘ کو اسپائی نوزا نے اپنے تمام فلسفیانہ اور سائنسی نظریات سے بھر دیا ہے۔ اس کتاب میں اس نے ڈیکارٹ کے نظریات کو جیو میٹری سے ثابت کرنے کی کوشش کی ہے۔اس کی دوسری کتاب ’’مذہب اور مملکت پر رسالہ‘‘ ایک متنازعہ کتاب ہے۔

اسپائی نوزا کی شاہکار کتاب ’’اخلاقیات‘‘ پڑھنے میں مشکل اور پیچیدہ کتاب ہے۔ نظریات کو نثرمسلسل میں بیان کرنے کی بجائے اسے جیو میٹری کی طرز پر مندرجہ ذیل ٹکڑوں میں بانٹ کر بات سمجھانے کی کوشش کی گئی ہے:(1)تعریف، (2)اصول، (3)دعویٰ، (4)ثبوت،گویا یہ فلسفے کی نہیں، جیومیٹری اور اقلیدس کی کوئی کتاب ہے۔ دراصل ڈیکارٹ کے زیر اثر اسپائی نوزا کا خیال ہے کہ فلسفے میں قطعیت اس وقت تک پیدا نہیں ہو سکتی جب تک کہ اس کا اظہار ریاضیاتی اصولوں پر مبنی نہ ہو۔

اسپائی نوزا کی کتاب ’’سیاسیات‘‘ ایک نامکمل کتاب ہے جو وہ اپنے آخری دنوں میں تحریر کر رہا تھا۔ اس کتاب میں اس نے انگریز فلسفی ہوبز کے ردعمل میں اپنے سیاسی خیالات پیش کئے ہیں۔ وہ کہتا ہے ’’جمہوریت ہی حکومت کی مکمل ترین شکل ہے۔ اس طرز حکومت میں فرد اپنے اعمال اور افعال کا اختیار حکومت کے سپرد کردیتا ہے لیکن اپنی رائے اور فیصلے کا حق اپنے پاس رکھتا ہے‘‘۔ وہ مزید کہتا ہے ’’جمہوریت میں صرف ایک عیب ہے اور وہ یہ کہ ادنیٰ درجے کے لوگ برسراقتدار آ جاتے ہیں اور اس کے مضمرات سے بچنے کی صورت یہ ہے کہ عہدے اپنے فن میں تربیت یافتہ لوگوں کے سپرد کئے جائیں‘‘۔

 

 

 

 

 

روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں

عید الاضحی:صبرووفا،اطاعت ربانی کی عظیم داستان

عید الاضحی ایک اسلامی تہوار ہے اور عبادت و خوشی کے اظہار کا دن بھی ہے۔ ہر قوم میں خوشی کے اظہار کے کچھ دن ہوا کرتے ہیں۔ زمانہ جہالیت میں بھی سرکار دوعالم ﷺجب ہجرت کرکے مدینہ منورہ تشریف لے گئے تو وہاں کے لوگ دو دن ناچ گانے کھیل کود میں گزارا کرتے۔

عید کے دن کیسے گزاریں؟

ادیان عالم میں ہر مذہب سے وابستہ ہر قوم اپنا ایک مذہبی تہوار رکھتی ہے۔ جس میں وہ اپنی خوشی کے اظہار کے ساتھ ساتھ اپنے جداگانہ تشخص کا اظہار بھی کرتی ہے۔مسلمانوں کی عید دیگر مذاہب و اقوام کے تہواروں سے بالکل مختلف حیثیت رکھتی ہے۔اہل اسلام کی عید اپنے اندر اطاعتِ خداوندی،اسوہ نبوی ،جذبہ ایثار و قربانی، اجتماعیت،غریب پروری، انسانی ہمدردی رکھتی ہے۔ جانور کی قربانی کرنا دراصل اسلامی احکامات پر عمل کرنے کیلئے خواہشات کی قربانی کا سنگ میل ہے۔

فلسفہ قربانی:تاریخ،اسلامی اور معاشی حیثیت

اقوام عالم کی تاریخ کا مطالعہ کرنے سے یہ بات سامنے آتی ہے کہ ہر قوم میں قربانی کا تصور کسی نہ کسی شکل میں موجود رہا ہے۔ ہزاروں سال پہلے جب انسان اپنے حقیقی خالق و مالک کو بھول چکا تھا اور اپنے دیوتاؤں کی خوشنودی حاصل کرنے کیلئے یا ان کے نام کی نذر و نیاز مانتے ہوئے جانور کو ذبح کر کے ان کے سامنے رکھ دیتا تھا اور یہ عقیدہ رکھتا کہ اب دیوتا مجھے آفات سے محفوظ رکھیں گے۔

پیغمبروں کی عظیم قربانی

ماہ ذوالحجہ قمری سال کا آخری مہینہ ہے، رب ذوالجلال نے جس طرح سال کے بارہ مہینوں میں سے رمضان المبارک کو اور پھر رمضان المبارک کے تین عشروں میں سے آخری عشرہ کو جو فضیلت بخشی ہے بعینہ ماہ ذوالحجہ کے تین عشروں میں سے پہلے عشرہ کو بھی خاص فضیلت سے نوازاہے۔

گرین شرٹس کو واپسی

آئی سی سی مینز ٹی20ورلڈکپ کے گزشتہ 8 ایڈیشنز میں تین بار سیمی فائنل اور تین بار فائنل کھیل کر ایک بار ورلڈ چیمپئن بننے والی پاکستان کرکٹ ٹیم امریکہ اور ویسٹ انڈیز میں جاری ٹی20ورلڈ کپ کے 9ویں ایڈیشن میں گروپ مرحلے سے ہی آئوٹ ہو گئی ہے اور یہ پہلا موقع ہے کہ ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ میں متاثر کن ریکارڈ کا حامل پاکستان فائنل یا سیمی فائنل تو بہت دور کی بات، سپرایٹ مرحلے کیلئے بھی کوالیفائی نہ کر سکا۔

ٹی 20 ورلڈ کپ 2024 اب تک کے ریکارڈز

بہترین بلے بازورلڈ کپ 2024ء میں اب تک سب سے زیادہ رنز بنانے والے کھلاڑی افغانستان کے رحمت اللہ گرباز ہیں، جنہوں نے 3 میچ کھیل کر 167رنز بنائے ہیں۔ اس فہرست میں امریکہ کے ارون جونز141 رنز کے ساتھ دوسرے، آسٹریلیا کے وارنر 115 رنز کے ساتھ تیسرے، افغانستان کے ابراہیم زردان 114 رنز کے ساتھ چوتھے اور امریکہ کے غوث 102 رنز کے ساتھ پانچویں نمبر پر ہیں۔