اشعار کی صحت!

تحریر : حیات عبداللہ


کالموں میں لکھے گئے غلط اشعار کا تعاقب کرنا اور پھر تحقیق کے بعد درست شعر تلاشنا کسی صحرا نوردی اور آبلہ پائی سے کم ہر گز نہیںہوتا۔ نوآموز قلم کاروں کو کیا دوش دیں کہ ہمارے بزرگ صحافی بھی اکثر و بیشتر اپنے کالموں میں نہ صرف غلط اشعار لکھتے ہیں بلکہ ان ہی غلط اشعار کو اپنی تحریروں میں دہراتے بھی رہتے ہیں۔ کلاسیکل شعراء کے کلام پر جس طرح ستم ڈھایا جا رہا ہے، اس سے ادب کا بہت زیادہ نقصان ہو رہا ہے۔ علامہ اقبال ؒ کے وہ اشعار بھی غلط لکھ دیئے جاتے ہیں جو زبان زدِ عام ہیں۔

سید تابش الوری کے بقول ان دنوں اردو شاعری کا جو حشر کیا جا رہا ہے، اسے دیکھ کر سخن سنج و سخن فہم حضرات کا شیشۂ دل پاش پاش ہو کر رہ جاتا ہے۔ ستم بالائے ستم یہ ہوا کہ سوشل میڈیا کے مؤثر ذریعے نے اس آگ پر پٹرول چھڑک دیا، جس سے راہ پا کر ہر متشاعر اپنی بے وزن اور بے معنی شاعری کو مشتہر کر رہا ہے۔

کچھ ضرب الامثال اشعار اتنے غلط انداز میں مشہور ہو گئے ہیں کہ متعلقہ شاعر کی کتاب سے رجوع کریں تو اصل شعر یا مصرعے کو پڑھ کر یقین ہی نہیں آتا کہ ’’اہل قلم‘‘ کسی بھی شعر کا حلیہ اتنا بگاڑ سکتے ہیں۔ میں سمجھتا ہوں کہ اس مسئلے میں ہمارے بزرگ کالم نگاروں، مصنفوں اور ادیبوں کو دوش دیا جا سکتا ہے کہ بنا کسی تحقیق کے، ہمیں غلط ملط انداز میں اشعار پڑھنے کو دیتے رہتے ہیں، کالم لکھنے کے جنون میں مبتلا بعض احباب صحیح یا غلط کے تقاضوں سے بالکل بے پروا ہو کر دھڑا دھڑ بس لکھے جا رہے ہیں۔ اسی جلدی بازی میں کسی بھی شاعر کا کہا گیا مصرعہ یا شعر کھوجنے کی بجائے جو کچھ جیسے ذہن میں آتا ہے اسی کو دوست سمجھا جا رہا ہے،مثلاً ایک کالم میں یہ شعر لکھا گیا!

ہمارا خون بھی شامل ہے تزئین گلشن میں

ہمیں بھی یاد رکھنا چمن میں جب بہار آئے

کچھ لوگ وزن پورا کرنے کیلئے پہلے مصرعے میں ’’گلشن‘‘ کی جگہ ’’گلستاں‘‘ لگا دیتے ہیں، اسی طرح دوسرے مصرعے کا وزن بھی پورا کر دیا جاتا ہے۔ ممکن ہے کچھ شعرا نے حالات یا اپنی ضرورت کے تحت دوسرے مصرعے پر ’’طرح مصرع‘‘ کے طور پر طبع آزمائی کی ہو، مگر وہ شعر جو استاد قمر جلالوی کی کتاب ’’رشک قمر‘‘ کے صفحہ42پر موجود ہے، اس کا پہلا مصرعہ کتابوں میں کہیں گم کردیا گیا ہے’’رشک قمر‘‘ شوکت علی اینڈ سنز پبلشرز، ایم اے جناح روڈ کراچی سے 1977ء میں شائع ہوئی۔ استاد قمر جلالوی کا کہا گیا شعر بھی پڑھ لیجئے! اور دیکھئے کہ ہمیں اس مصرعے سے دور کرکے کیسی چاشنی اور لذت سے محروم کردیا گیا۔

قفس کے ہو لیے ہم تو مگر اے اہل گلشن تم

ہمیں بھی یاد کر لینا چمن میں جب بہار آئے

اسی طرح کا ایک اور شعر آپ کے ذوق مطالعہ کی نذر کرنے لگا ہوں، اسے پڑھ کر بھی یہ اندازہ لگانا چنداں دشوار نہیں کہ لوگ اس شعر کے پہلے مصرعے کو بھی بالکل فراموش کر بیٹھے ہیں۔ یہ شعر شاد لکھنوی کا ہے اور ’’ سخن بے مثال‘‘ کے صفحہ 112پر موجود ہے۔

وصالِ یار سے دُونا ہوا عشق

مرض بڑھتا گیا جوں جوں دوا کی

ہمارے ایک فاضل مضمون نگار نے محمد دین تاثیر کا یہ شعر اپنے مضمون میں لکھ دیا ہے، مگر اس میں معمولی سی تحریف بھی کردی ہے۔

داور محشر مرا نامۂ اعمال نہ دیکھ

اس میں کچھ پردہ نشینوں کے بھی نام آتے ہیں

آپ محمد دین تاثیر کی کتاب ’’آتش کدہ‘‘ کا صفحہ166 پڑھیں گے تو پہلے مصرعے میں ’’محشر‘‘ کی جگہ’’ حشر‘‘ ملے گا۔

داورِ حشر مرا نامۂ اعمال نہ دیکھ

اس میں کچھ پردہ نشینوں کے بھی نام آتے ہیں

میر زاجواں بخت جہاں دار کا ایک شعر اکثر کالموں میں لکھا ہوتا ہے، لیکن اس میں بھی اتنی تحریف کر دی گئی ہے کہ صحیح شعر سامنے آنے پر سب کو عجیب سا لگے گا۔

آخر گِل اپنی صرف میکدہ ہوئی

پہنچی وہیں پہ خاک جہاں کا خمیر تھا

1966ء میں شائع ہونے والے ’’ دیوان جہاں دار‘‘ مرتبہ ڈاکٹر وحید قریشی کے صفحہ 124پر جو شعر موجود ہے، اس کی چاشنی ہی منفرد ہے، آپ بھی مزہ لیجئے!

آخر گِل اپنی صرف در میکدہ ہوئی

پہنچے وہاں ہی خاک جہاں کا خمیر ہو

ایک بزرگ کالم نگار نے اپنے کالم کا عنوان اس مصرعے کو بنا دیا ہے۔

بڑی دیر کی مہرباں آتے آتے

یہ مصرع داغ دہلوی کا ہے مگر انہوں نے مصرعے کے شروع میں ’’بڑی‘‘ کی جگہ ’’ بہت‘‘ کہا ہے۔ ’’دیوان داغ‘‘ جسے فروری1961ء میں شائع کیاگیا کے صفحہ 82 پر یہ شعر موجود ہے۔

نہ جانا کہ دنیا سے جاتا ہے کوئی

بہت دیر کی مہرباں آتے آتے

داغ دہلوی کی اسی غزل کا مقطع بھی ضرب المثل شعر بن چکا ہے، ملاحظہ فرمائیں!

نہیں کھیل اے داغ یاروں سے کہ دو

کہ آتی ہے اردو زباں آتے آتے

قبرستانوں میں کبھی جائیں تو بچوں کی قبروں پر اکثر یہ شعر لکھا نظر آتا ہے۔ 

پھول تو دو دن بہار جاں فزا دکھلا گئے

حسرت ان غنچوں پہ ہے جو بن کھلے مرجھا گئے

لیکن اگر آپ ’’دیوانِ ذوق‘‘ اگر وال بک ڈپو دہلی‘‘ کا صفحہ 171 کا مطالعہ کریں گے تو ’’ذوق‘‘ کا یہ پہلا مصرع پڑھ کر نہ صرف حیران رہ جائیں گے بلکہ شعر کا لطف بھی دو چند ہو جائے گا۔

گل بھلا کچھ تو بہاریں اے صبا دِ کھلا گئے

حسرت ان غنچوں پہ ہے جو بن کھلے مرجھا گئے

مصطفی زیدی کے ایک ضرب المثل شعر کو ہمارے ایک مصروف کالم نگار نے غلط لکھ دیا ہے۔

انھی پتھروں پہ چل کے اگر آ سکو تو آئو

مرے گھر کے راستے میں کوئی کہکشاں نہیں ہے

دوسرے مصرعے میں لفظ ’’کوئی‘‘ لگا کر زیادہ نہیں تو پچاس فیصد شعر کی چاشنی ضرور کم کردی گئی ہے۔ مصطفی زیدی کی کتاب ’’شہر آذر‘‘ کے صفحہ160 پر دوسرے مصرعے میں ’’کوئی‘‘ کی بجائے ’’کہیں‘‘ ہے یعنی:

انہی پتھروں پہ چل کر اگر آ سکو تو آئو

مرے گھر کے راستے میں کہیں کہکشاں نہیں ہے

اردو ادب سے گہرا شغف رکھنے والے ایک کالم نگار نے حیدر علی آتش کا شعر غلط لکھ دیا ہے، آپ غلط شعر کی بجائے یہ درست پڑھ لیں جو ’’کلیاتِ آتش‘‘ سال اشاعت 1929ء کے صفحہ398 اور 1844ء میں شائع ہونے والے ’’ دیوانِ آتش‘‘ کے صفحہ302پر موجود ہے۔

غم و غصہ و رنج و اندوہ و حرماں

ہمارے بھی ہیں مہرباں کیسے کیسے

اسی غزل کے یہ دو اشعار بھی بہت مشہور ہیں

زمین چمن گل کھلاتی ہے کیا کیا

بدلتا ہے رنگ آسماں کیسے کیسے

نہ گور سکندر نہ ہے قبر دارا

مٹے نامیوں کے نشاں کیسے کیسے

روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں

موسم گرما کے ملبوسات

موسم گرما اپنے جوبن پر ہے، جھلسا دینے والی دھوپ اور گرم لو کے تھپیڑوں نے باہر نکلنا مشکل بنا دیا ہے۔ اس موسم میں خواتین کو شدید احتیاط کی ضرورت ہوتی ہے۔ پاکستان میں چونکہ موسم گرما بہت طویل ہوتا ہے اس لیے خواتین کو چاہیے کہ وہ صرف موسم کی مناسبت کے ساتھ تیارکردہ ملبوسات زیب تن کریں۔ گرمیوں کا موسم ایسا ہے کہ کپڑوں کے انتخاب میں تنوع مل جاتا ہے، لیکن اس بات کا خیال رکھیں کہ گرمیوں میں ہمیشہ ہلکے پھلکے ڈیزائن اور ہلکے رنگوں کا انتخاب کریں۔

نامناسب کلینزنگ پراڈکٹس کا انتخاب خطرناک

ہم عموماً یہ سمجھتے ہیں کہ اپنی جلد کے بارے میں سب سے زیادہ ہم خو د جانتے ہیں لیکن یہ سوچ ہی انتہائی غلط ہے ۔کہ بنا کسی ماہر سے مشورہ لئے ہم اپنی جلد کی حساسیت سے واقف ہو سکتے ہیں۔کوئی اچھی بیوٹیشن یا سکن سپیشلسٹ ہی بہتر بتا سکتی ہے کہ ہمیں اپنی جلد کے بارے میں کیا جان لینا ضروری ہے اور کس قسم کی کاسمیٹکس ہمارے لئے فائدہ مند ہو سکتی ہیں اور کس قسم کی پراڈکٹس کا استعما ل ہماری سکن کی خوبصورتی کے لئے خطرہ بن سکتا ہے۔

مفید طبی مشورے

دانت سفید کرنے کا طریقہ لونگ کا تیل دو سے تین قطرے ٹوتھ برش پر ٹپکا کر اچھی طر ح برش کریں، پھر دیکھیں دانت کیسے موتیوں کی طر ح چمک اُٹھتے ہیں۔ ہفتے میں ایک بار بھی کرلیں تو کافی ہے ،یہ کرنے کے بعد آپ کو کسی اور ٹوٹکے کی ضرروت نہیں پڑے گی۔

آج کا پکوان

لاہوری پٹھورے پٹھورے کے اجزا: چاول کا آٹا ایک پیالی، مسور کی دال کا آٹا آدھی پیالی، نمک حسب ذائقہ، کوکنگ آئل دو کھانے کے چمچ۔

شاہد احمد دھلوی

دلچسپ انسان، فاضل مدیر، بہترین مترجم، صاحب زبان 57ویں برسی کے حوالے سے خصوصی تحریر ان کی دلکش اور شگفتہ عبارت میں محاوروں اور لفظوں کا اس قدر صحیح استعمال ہوتا ہے کہ ہر لفظ زندہ اور جیتا جاگتا نظر آتا ہے ان کی نثرمیں اُس خوشبو کا احساس ہوتا ہے جو عہد ِحاضر میں کمیاب ہو چکی ہے

شاعری اور موسیقی کا رشتہ؟

شاعری کا تخلیقی عمل ایک طلسماتی عمل ہے جسے الفاظ میں بیان کرنا دشوار ہے لیکن جسے ذوقی اور وجدانی سطح پر محسوس کیا یا کروایا جا سکتا ہے۔ شاعری کے اسرار میں سے ایک شاعری کی موسیقیت اور نغمگی بھی ہے جو شاعری کی روح ہے۔شاعری کی موسیقیت کیوں کر پیدا ہوتی ہے اور شاعری اور موسیقی کا کیا رشتہ ہے۔