عادل حکمران

تحریر : دانیال حسن چغتائی


پیارے بچو! ایران کا ایک منصف مزاج بادشاہ نوشیرواں گزرا ہے۔ اس نے ایک محل بنوانا چاہا۔ جس کیلئے زمین کی ضرورت تھی اور اس زمین پر ایک غریب بڑھیا کی جھونپڑی بنی ہوئی تھی۔

سرکاری ملازمین نے بڑھیا سے زمین خریدنا چاہی تاہم اس نے فروخت کرنے سے انکار کر دیا۔ نوشیرواں تک جب یہ خبر پہنچی تو اس نے حکم دیا کہ محل چوکور بنے یا نہ بنے مگر اس عورت پر جبر مت کرنا۔ بادشاہ کے احکامات پر شاہی محل ایک طرف سے ٹیڑھا بن گیا۔

جب محل بن گیا تو ایک دن بڑھیا دربار میں حاضر ہوئی اور کہا، جہاں پناہ! شاہی محل میری زمین کے بغیر ترچھا بنا ہے اور دیکھنے میں اچھا معلوم نہیں ہو رہا۔ تو لیجئے میری زمین اب بلا قیمت بطور تحفہ حاضر ہے۔ 

نوشیرواں نے حیران ہو کر پوچھا تو پہلے تم نے دینے سے انکار کیوں کر دیا تھا۔

بڑھیا نے جواب دیا۔ عالم پناہ صرف اس لئے کہ رہتی دنیا تک آپ کے انصاف کا ڈنکا بج جائے۔اس پر نوشیرواں بہت خوش ہوا۔ اس نے بڑھیا کو انعام و اکرام دے کر رخصت کیا۔ اس کی زمین بھی نہیں لی اور محل کو بدستور ترچھا ہی رہنے دیا۔

 بچو! یہ ایک بہت ہی پرانی داستان ہے۔ پیارے بچو، نوشیرواں اور وہ بڑھیا تو سیکڑوں سال پہلے اس دنیا سے چل بسے مگر انصاف کی یہ داستان اب تک زبان زد عام ہے۔ انصاف کی یہ کہانی لوگوں کو اب تک یاد ہے۔ اور ہر ایک اس منصف بادشاہ کی تعریف کرتا ہے۔ اسی طرح اگر شخص اپنے ہر کام میں انصاف اور مروت سے کام لے تو اس سے خالق اور مخلوق دونوں خوش ہوں گے۔

 پیارے نبی کریمﷺ نے کیا خوب فرمایا۔ عدل و انصاف بہت اچھی چیز ہے۔ لیکن اگر یہ حاکم میں ہو تو پھر اس سے بہتر چیز کوئی نہیں ہے۔

 

روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں

T-20 کرکٹ کا سنسنی خیز فارمیٹ

آئی سی سی ٹی 20 ورلڈکپ 2024ء کے آغاز میں 6 روز باقی رہ گئے،انٹرنیشنل کرکٹ کونسل یکم جون2024ء سے کیریبین اور ریاست ہائے متحدہ امریکہ میں مردوں کے ٹی 20 ورلڈ کپ کے نویں ایڈیشن کی میزبانی کر رہی ہے۔ٹی 20، کرکٹ کا سب سے دلچسپ اور سنسنی خیز فارمیٹ ہے، قارئین کیلئے ٹی 20ورلڈکپ کی مختصر تاریخ پیش خدمت ہے۔

بھیڑ اور بھیڑیا

بھیڑیا اپنے گھر میں بیٹھا آرام کر رہا تھا جب اسے باہر سے اونچی ،اونچی آوازیں آئیں۔پہلے تو وہ آنکھیں موندے لیٹا رہا لیکن جب شور مسلسل بڑھنے لگا تو اس نے سوچا باہر نکل کر دیکھناتو چاہیے کہ آخر ہو کیا رہا ہے۔گھر سے باہر جا کر دیکھا تو سامنے 2 بھیڑیں کھڑی آپس میں لڑ رہی تھیں۔

سچی توبہ

خالد بہت شرارتی بچہ تھا۔ سکول اور محلے کا ہر چھوٹا بڑا اس کی شرارتوں سے تنگ تھا۔ وہ جانوروں کو بھی تنگ کرتا رہتا ، امی ابو اسے سمجھاتے مگر خالد باز نہ آتا۔

ذرامسکرائیے

اُستاد(شاگرد سے) انڈے اور ڈنڈے میں کیا فرق ہے؟ شاگرد: ’’کوئی فرق نہیں‘‘۔ اُستاد: ’’وہ کیسے‘‘؟شاگرد: ’’دونوں ہی کھانے کی چیزیں ہیں‘‘۔٭٭٭٭

پہیلیاں

مٹی سے نکلی اک گوری سر پر لیے پتوں کی بوری جواب :مولی٭٭٭٭

ادائیگی حقوق پڑوسی ایمان کا حصہ

اسلام کی تعلیمات کا خلاصہ دو باتیں ہیں۔اللہ تعالیٰ کی اطاعت و بندگی اور اللہ تعالیٰ کے بندوں کے ساتھ حسن سلوک۔ اسی لیے جیسے شریعت میں ہمیں اللہ تعالیٰ کے حقوق ملتے ہیں، اسی طرح ایک انسان کے دوسرے انسان پر بھی حقوق رکھے گئے ہیں۔