بیلین وہیل مچھلی اونچی آواز میں گانے کی شوقین

ڈنمارک :(ویب ڈیسک ) بیلین وہیل اتنی اونچی آواز میں گاتی ہیں کہ ان کے گانے سمندر کے پار سفر کرتے ہیں، لیکن اس کے پیچھے کار فرما طریقہ کار ایک معمہ ہے۔

سائنسدانوں کا خیال ہے کہ اس کی گتھی سلجھانے کے لیے انہیں ایک اشارہ ملا ہے، وہیل میں خصوصی وائس باکس ایسی چیز ہے جو دوسرے جانوروں میں نہیں دیکھی گئی ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ یہ دریافت، اگرچہ ایک تحقیق پر مبنی ہے جو کہ قطعی طور پر بہت چھوٹی ہے، لیکن مستقبل کی تحقیق کی رہنمائی کرے گی کہ وہیل کیسے آواز نکالتی ہے۔

جریدے نیچر میں شائع ہونے والی تحقیق میں، یونیورسٹی آف سدرن ڈنمارک کے کوین ایلیمینز اور ان کے ساتھیوں نے تین مردہ وہیل مچھلیوں کے صوتی خانوں کا مطالعہ کیا۔ منک، ہمپ بیک اور سائی جو کہ تمام بیلین وہیل کی نسلیں ہیں۔

لیبارٹری میں، سائنس دانوں نے ساؤنڈ بکس میں ہوا کو کنٹرول شدہ حالات میں گزارا تاکہ یہ دیکھا جا سکے کہ کون سے ٹشوز ہل سکتے ہیں۔

محققین نے سی وہیل کی آوازوں کے کمپیوٹر ماڈل بھی بنائے اور انہیں سمندر سے لی گئی اسی طرح کی وہیل کی ریکارڈنگ کے ساتھ ملایا۔

ماہرین کا خیال ہے کہ وہیل کے آباؤ اجداد تقریبا 50 ملین سال پہلے خشکی پر آباد تھے جو بعد میں پانی میں چلے گئے۔ ایلیمنز نے کہا کہ ان جانوروں نے ہزاروں ملین سالوں کے دوران پانی کے اندر آوازیں نکالنے کے لیے اپنے آواز کے خانوں کو ڈھال لیا ہے۔

انسانوں اور دوسرے جانداروں کے برعکس، بیلین وہیل کے دانت یا ہڈیوں کی آواز نہیں ہوتی۔

انسانوں میں آواز ارتعاش سے پیدا ہوتی ہے جب ہوا ہمارے گلے میں موجود ووکل فولڈز کہلانے والے ڈھانچے کے اوپر سے گزرتی ہے۔

اس کے بجائے، وہیل کے صوتی خانے ایک بڑے انگریزی حرف یو شکل کی ساخت رکھتے ہیں جس کے اوپری حصے میں چربی کا کشن ہوتا ہے،یہ صوتی اناٹومی وہیل کو ہوا کو ری سائیکل کرکے گانے کی اجازت دیتی ہے، اور یہ پانی کو سانس لینے سے روکتی ہے۔

ایلیمینز نے کہا کہ وہیل چربی اور پٹھوں کے پیڈ کے خلاف ٹشو کو دھکیل کر گاتی ہیں۔

اسٹینفورڈ یونیورسٹی میں سمندری سائنس کے ایک ایسوسی ایٹ پروفیسر جیریمی گولڈ بوگن نے کہا، یہ آج تک کا سب سے جامع اور اہم مطالعہ ہے کہ بیلین وہیل کس طرح آوازیں نکالتی ہیں، جو کہ اس شعبے میں ایک دیرینہ راز ہے۔

Advertisement
روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں