مناسک حج

تحریر : علامہ ابتسام الٰہی ظہیر


حج اسلام کا پانچواں رکن ہے اور ہر صاحبِ حیثیت مسلمان پر حج کرنا فرض ہے۔ قرآن مجید کے مطابق جو شخص استطاعت کے باوجود حج نہیں کرتا تو اللہ تعالیٰ ایسے منکرین کے افعال سے غنی ہے۔

 کتب احادیث میں حج کی عظمت اور فضیلت کے حوالے سے بہت سی احادیث وارد ہوئی ہیں۔بخاری شریف اور صحیح مسلم کی حدیث ہے، حضرت ابوہریرہؓ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺ سے دریافت کیا گیا کہ (دین اسلام میں) کونسا عمل بہت بہتر ہے؟ حضور ﷺ نے ارشاد فرمایا کہ اللہ اور اس کے رسول ﷺپر ایمان لانا۔ پھرعرض کیا گیا اس کے بعدکونسا عمل (سب سے بہتر ہے؟) حضور ﷺ نے ارشاد فرمایا کہ اللہ کی راہ میں جہاد کرنا۔ پھر عرض کیا گیا کہ اس کے بعد کونسا عمل (سب سے بہتر ہے؟) حضور ﷺ نے ارشاد فرمایا حج مبرور (سب سے بہتر عمل ہے)۔

 صحیح بخاری اور صحیح مسلم میں حدیث شریف ہے، اُم المومنین سیّدہ عائشہ صدیقہ ؓ سے روایت ہے، وہ فرماتی ہیں کہ میںنے نبی کریمﷺ سے جہاد پر جانے کی اجازت طلب کی (کہ اگر آپ حکم دیں تو میں بھی جہاد کیلئے نکلوں) تو حضور ﷺ نے یہ سن کر ارشاد فرمایا کہ تم خواتین کیلئے حج کا سفر ہی جہاد ہے۔ 

صحیح بخاری اور صحیح مسلم میں حدیث شریف ہے، حضرت ابوہریرہ ؓ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ ارشاد فرماتے ہیں کہ جو شخص اللہ تعالیٰ کیلئے حج کرے اور دوران حج (بحالت احرام)اپنی بیوی سے صحبت نہ کرے اور (ساتھیوں سے) بیہودہ کلام یا لڑائی جھگڑا نہ کرے اورکبائر سے بچتا رہے تو وہ حج کرنے کے بعد (گناہوں سے ایسا پاک وصاف ہو جاتا ہے) جیسا کہ وہ اپنی ماں کے پیٹ سے پیدا ہوتے وقت پاک و صاف تھا۔ عمرہ اور حج میں طریقہ ادائیگی کے علاوہ ایک بنیادی فرق یہ ہے کہ عمرہ سال کے دوران کسی بھی وقت کیا جاسکتا ہے جبکہ حج ماہ ذوالحجہ کے دوران ہی کیا جاتا ہے۔

 حج کی تین قسمیں ہیں،حج افراد، حج تمتع اور حج قران۔ حج تمتع افضل ترین ہے اور اس میں حاجی کو اضافی عمرے کا موقع بھی ملتاہے۔حج تمتع کی نیت کرنے والے حاجیوںکو شوال، ذی القعد یا ذی الحج میں میقات پر پہنچ کر احرام پہننا چاہیے۔ اگر وہ احرام اپنے گھر سے پہن کر نکلتے ہیں تو اس صورت میں انہیں میقات پر پہنچ کر احرام کی نیت کر نا ہوگی۔ رسول اللہﷺ نے حج اور عمرے کیلئے مختلف ممالک اور شہروں سے آنے والوں کیلئے مختلف مقامات کو میقات مقرر فرمایا۔ حج تمتع کی نیت کرنیوالا شخص جب احرام پہننا چاہے تو اس کو غسل کر نے کے بعد دو اَن سلی چادریں پہن لینی چاہئیں اور ایسے جوتے پہننے چاہئیں جن میں اس کے ٹخنے ننگے ہوں۔ حضرت عبداللہ بن عمرؓ سے روایت ہے کہ نبی کریمﷺ نے فرمایا: تمہیں تہہ بند، چادر اور جوتوں میں احرام باندھنا چاہیے۔ اگر جوتے نہ ہوں تو موزے پہن لو لیکن انہیں ٹخنوں کے نیچے سے کاٹ لو۔ مسلم شریف میں حدیث مذکور ہے حضرت جابرؓکہتے ہیں رسول اللہﷺ نے فرمایا جسے جوتے نہ ملیں وہ موزے پہن لے اور جسے تہہ بند نہ ملے وہ پائجامہ پہن لے۔

احرام باندھنے کے ساتھ ہی باآواز بلند تلبیہ پڑھنا چاہیے۔ تلبیہ کے الفاظ کاسلیس ترجمہ یہ ہے: ’’حاضر ہوں اے اللہ، میں حاضر ہوں، تیرا کوئی شریک نہیں ہے، بے شک ہر قسم کی تعریف اور نعمت تیری ہی ہے اور بادشاہت بھی تیری ہی ہے اور تیرا کوئی شریک نہیں ہے‘‘۔ تلبیہ پڑھنے کے بعد انسان کو اللہ تعالیٰ کی خوشنودی اورجنت کا سوال کرنا چاہیے اور آگ سے پنا ہ مانگنی چاہیے، اس لیے کہ یہ عمل مسنون ہے۔ بلند آواز سے تلبیہ پڑھنے سے حج اورعمرے کے اجر وثواب میں اضافہ ہوجاتا ہے۔ 

مسجد الحرام میں داخل ہوتے ہوئے وہی دعا مانگنی چاہیے جو رسول اللہﷺ مساجد میں داخل ہوتے ہوئے مانگتے کہ ’’اللہ کے نام سے داخل ہوتا ہوں‘ اللہ کے رسولﷺ پر سلام ہو۔ اے اللہ میرے گناہوں کو معاف فرما اور اپنی رحمت کے دروازے میرے لیے کھول دے‘‘۔ 

صحیح بخاری و صحیح مسلم شریف میں روایت ہے کہ حضرت عروہ بن زبیرؓکہتے ہیں کہ نبی کریمﷺ کے حج کے بارے میں حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نے مجھے بتایا کہ جب رسو ل کریمﷺ مکہ میں تشریف لائے تو سب سے پہلے آپﷺ نے وضو کیا پھر بیت اللہ شریف کا طواف کیا۔ طواف کی ابتداء حجر ِاسود کو بوسہ دینے، چھونے یا اس کی طرف اشارہ کرنے سے ہوتی ہے۔ طواف سات چکروں میں مکمل کیا جاتا ہے اور یہ سات چکر گھڑی کی سوئیوں کی حرکت سے الٹی جہت پر لگائے جاتے ہیں۔ طواف کا سنت طریقہ یہ ہے کہ پہلے تین چکر تیزی سے اور باقی چکر عام رفتار سے مکمل کیے جائیں۔

رکن یمانی اور حجر اسود کے درمیان’’ربنا اتنا فی الدنیا حسنۃ وفی الآخرۃ حسنۃ وقنا عذاب النار‘‘ کا کثرت سے ورد کرنا چاہیے۔ جب سات چکر مکمل ہوجائیں تو اس کے بعد مقام ابراہیم پر آکر دو نوافل ادا کرنے چاہئیں اوراگر مقام ابراہیم پر جگہ نہ مل سکے تو اس جگہ کے دائیں، بائیں یا عقب میں جہاں بھی جگہ ملے دو نوافل ادا کرلیں۔ طواف مکمل کرنے کے بعد حاجی کو صفا پہاڑی کا قصد کرنا چاہیے اور وہاں پہنچ کر وہ دعا مانگنی چاہیے جو نبی کریمﷺ نے مانگی تھی۔ حضرت جابر بن عبد اللہ ؓ فرماتے ہیں کہ آپﷺباب الصفا سے صفا پہاڑی کی طرف نکلے۔ جب پہاڑی کے قریب پہنچے تو آپﷺ نے اس آیت کی تلاوت فرمائی: ’’بے شک صفا اور مروہ اللہ کی نشانیاں ہیں‘‘۔ آپﷺ نے فرمایا: میں سعی کی ابتدا اسی پہاڑی سے کرتا ہوں جس کے ذکر سے اللہ تعالیٰ نے قرآن مجید میں ابتدا کی ہے۔ پس آپﷺ نے سعی کی ابتدا صفا سے کی۔ آپﷺ صفا پہاڑی کی اتنی بلندی پر چڑھے کہ بیت اللہ شریف نظر آگیا پھر قبلہ رخ ہوئے اور اللہ کی توحید اور تکبیر ان الفاظ میں بیان فرمائی: ’’اللہ کے سوا کوئی الٰہ نہیں وہ اکیلا ہے، اس کا کوئی شریک نہیں، بادشاہی اور حمد اسی کیلئے ہے اور وہ ہر چیز پر قادر ہے۔ اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں وہ اکیلا ہے اس نے وعدہ پورا کیا،اپنے بندے کی مدد فرمائی اور تمام لشکروں کو تنہا شکست دی‘‘۔ اس کے بعد آپﷺ نے دعا فرمائی اور یہ عمل آپﷺ نے تین مرتبہ کیا۔

 صفا پر کی جانیوالی دعائوں سے سعی کا آغاز ہوتا ہے اور حاجی مروہ تک جاتا ہے۔ صفا کی طرف جاتے ہوئے جب نشیبی علاقہ آئے تو حاجی کو تیز قدم اٹھانے چاہئیں اور جب نشیبی علاقہ ختم ہوجائے تو رفتار دوبارہ معمول پر لے آنی چاہیے۔ تیز رفتار سے چلنے والے علاقے کے تعین کیلئے صفا اور مروہ کے درمیان چھت پر سبز نشان لگا دیے گئے ہیں، ان نشانات کے درمیان تیز چلنا چاہیے اور باقی حصے میں آرام سے چلنا چاہیے۔ اگر بڑھاپے یا بیماری کی وجہ سے کوئی تیز نہ چل سکے تو آرام سے چلنا بھی درست ہے۔ صفا سے مروہ تک ایک چکر اور مروہ سے صفا تک دوسرا چکر مکمل ہوتا ہے۔جب سات چکر مکمل ہو جائیں تو بال منڈوانے یا کتروانے چاہئیں، خواتین بال اکٹھے کرکے آخر سے کاٹ یا کٹوائیں۔ بال کٹوانے کے بعد عمرہ مکمل ہوجاتا ہے اور حاجی عمرے کا احرام اتارسکتے ہیں۔

8 ذوالحجہ تک حاجی کو چاہیے کہ کثرت سے دعائیں، استغفار، درود شریف کا ورد، بیت اللہ شریف کا طواف کرتا رہے۔ 8 ذوالحجہ آجائے تو اپنی قیام گاہوں میں ہی دوبارہ احرام باندھ لینے چاہئیں۔ حضرت عبداللہ بن عباس ؓ فرماتے ہیں کہ رسول اللہﷺ نے میقات کے اندر رہنے والوں کے بارے میں فرمایا کہ وہ اپنی رہائش گاہ سے احرام باندھیں حتیٰ کہ مکہ مکرمہ میں رہائش پذیر لوگ مکہ مکرمہ سے ہی احرام باندھیں۔ احرام باندھنے کے بعد حاجیوں کو ظہر سے پہلے منیٰ پہنچنے کی کوشش کرنی چاہیے۔ حضرت جابر ؓسے روایت ہے کہ جب یومِ ترویہ آیا تو صحابہ کرامؓ ؓنے مکہ مکرمہ سے ہی احرام باندھا اور منیٰ کیلئے روانہ ہوئے۔ رسول کریمﷺ سواری پر نکلے اور منیٰ میں ظہر، عصر، مغرب، عشا اور فجر کی نمازیں ادا کیں، پھر تھوڑی دیر رکے یہاں تک کہ سورج طلوع ہوگیا۔ اگرچہ 8ذوالحجہ کو ظہر سے قبل منیٰ پہنچنا سنت ہے لیکن اگر کوئی شخص وقت پر نہ پہنچ سکے تو اس کا حج ادا ہوجاتا ہے۔ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہامکہ مکرمہ سے جب منیٰ پہنچیں تو ایک تہائی رات بیت چکی تھی۔8ذوالحجہ کو منیٰ پہنچنے کے بعد پانچ نمازوں کی ادائیگی مکمل ہونے پر 9ذوالحجہ کا آغاز ہوجاتا ہے۔ 

 

روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں

پیرس اولمپکس:پاکستانی دستہ فائنل

کھیلوں کا مقبول ترین میگا ایونٹ سجنے کو تیار، پاکستان نے بھی اپنے دستے کو حتمی شکل دے دی۔ اولمپک کھیلوں کو دنیا کا اہم ترین مقابلہ تصور کیا جاتا ہے۔ اولمپک کھیلوں میں موسم سرما اور موسم گرما کے مقابلے ہر چار سال بعد منعقد ہوتے ہیں، یعنی دو اولمپک مقابلوں کے درمیان دو سال کا وقفہ ہوتا ہے۔ان مقابلوں میں دنیا بھر سے ہزاروں کھلاڑی شرکت کرتے ہیں۔

یورو کپ:فائنل معرکہ آج

15جون سے جاری فٹ بال کا دوسرا بڑا ایونٹ ’’یورو کپ‘‘ آج اپنے اختتام کو پہنچ جائے گا۔ ٹورنامنٹ کے فائنل میں سپین اور انگلینڈ کی ٹیمیں مدمقابل ہوں گی۔ فائنل آج پاکستانی وقت کے مطابق رات 12 بجے جرمنی کے شہر برلن میں کھیلا جائے گا۔

مالینگ اور جادو کا برش

یہ ایک چینی کہانی ہے ۔ مالینگ ایک غریب لڑکا تھا۔ اس کے ماں باپ بھی اب دنیا میں نہیں تھے۔ مالینگ کے پاس اتنے پیسے بھی نہیں تھے کہ وہ ٹھیک سے کھانا کھا سکتا یا سکول میں تعلیم حاصل کر سکتا۔

سورج کی شعاعیں

سورج جو کہ نظامِ شمسی کا مرکز ہے اتنا روشن ہے کہ ہم اس کی جانب چند لمحوں کیلئے بھی دیکھ نہیں سکتے۔اس کا قطر زمین کے قطر سے سو گنا زیادہ ہے اور اس کی سطح اُبلتے ہوئے پانی سے بھی ساٹھ گنا زیادہ گرم ہے۔

چھوٹا پھول

ایک باغ میں بہت سے پودے اور درخت تھے، جن پر ہر طرح کے پھول اور پھل لگے ہوئے تھے۔ درختوں پر پرندوں کی چہچہاٹ اور پھولوں کی خوشبو باغ کو خوبصورت بنائے ہوئے تھی۔ ایک دفعہ گلاب کے بہت سے پھول کرکٹ کھیل رہے تھے کہ ایک چھوٹا سا پھول آیا اور کہنے لگا ’’کیا میں آپ کے ساتھ کرکٹ کھیل سکتا ہوں‘‘۔

پہیلیاں

(1)ہے اک ایسا بھی گھڑیال جس کی سوئیاں بے مثال وقت بتائے نہ دن بتائےسب کچھ بس دکھلاتا جائے٭٭٭