مریضوں کی جلد صحت یابی میں خاندان اور دوستوں کا کردار

تحریر : تحریم نیازی


ایک نئے طبی جائزے میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ اگر رشتے داروں اور دوست احباب کی جانب سے گرم جوشی کے ساتھ مریضوں کی تیمارداری کی جائے اور ان کی دیکھ بھال میں دلچسپی لی جائے تو ان کی صحت یابی کی رفتار کافی تیز ہو سکتی ہے۔

گیل وسٹون میں یونیورسٹی آف ٹیکساس میڈیکل برانچ کی جانب سے جمع شدہ اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ جن مریضوں کے اہل خانہ اور دوستوں نے بیماری میں ان کا ساتھ دیا اور ان کی دلجوئی کی انہوں نے ہسپتالوں اور شفاخانوں میں نسبتاً کم وقت گزارا۔ اسی حوالے سے ہسپتالوں پر بھی یہ زور دیا جا رہا ہے کہ وہ مریضوں کی جسمانی بحالی کے ساتھ ان کی نفسیاتی شفایابی کو بھی برابر کی اہمیت دیں۔

UTMBکے ری ہیب لیٹیشن سائنسز  کے شعبے میں ڈاکٹریٹ کی طالبہ زکویالیوسیس نے یہ جائزہ رپورٹ مرتب کی ہے اور ان کا کہنا ہے کہ جب کسی مریض کو اپنے خاندان اور دوستوں کی سماجی حمایت حاصل نہیں ہوتی ہے تو وہ اپنی کمیونٹی اور گھر واپسی میں زیادہ وقت لیتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم یقین کے ساتھ کہہ سکتے ہیں کہ پیاروں کی جانب سے حمایت اور تعاون مریض کی جلد صحت یابی اور بہتر زندگی کی طرف واپسی میں نمایاں کردار ادا کرتا ہے۔ 

یہ پہلا جائزہ ہے جس میں یہ دیکھا گیا ہے کہ سماجی حمایت کی سطح مریضوں کے بحالی مراکز میں قیام کی مدت پر کس طرح اثر انداز ہوتی ہے۔ بعض مخصوص نوعیت کے زخم لگنے یا سرجری مثلاً جسم کے نچلے حصے میں مصنوعی جوڑ لگانے یا فریکچر یا فالج کے بعد ریکوری کیلئے امریکہ میں مریضوں کو اکثر ہسپتال سے منسلک ایک اور جگہ منتقل کردیا جاتا ہے جسے Inpatient Rehabilitation Facilityکہتے ہیں یہاں پوری طرح صحت یاب ہونے کے بعد انہیں گھر بھیج دیا جاتا ہے۔ 

میڈی کیئر کے موجودہ ادائیگی کے نظام کے تحت میڈی کیئر محدود دنوں تک مریضوں کو ان کی حالت کے مطابق ان مراکز میں رکھنے کی پابند ہے۔ یہ دیکھا گیا ہے کہ جن مریضوں کو اپنے گھر والوں اور دوست احباب کی جانب سے بھرپور مدد ملی اور بہتر خبر گیری کی گئی انہوں نے ان بحالی مراکز میں مقررہ مدت سے بھی کم وقت گزارا اور گھر چلے گئے کیونکہ وہ اپنے گھر میں خود کو زیادہ مطمئن اور آسودہ محسوس کر رہے تھے۔

 

روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں
Advertisement

توکل:حقیقت اور اس کے ثمرات

’’جو کچھ اللہ کے ہاں ہے وہ بہتر اور پائیدار ہے، وہ ان لوگوں کیلئے ہے جو ایمان لائے اور اپنے رب پر بھروسہ کرتے ہیں‘‘(سورۃ الشوری:36)

فرضیت واہمیت زکوٰۃ

’’اے ایمان والو خرچ کروپا کیزہ چیزوں میں سے جو تم نے کمائی ہیں اور جو ہم نے تمھا رے لیے زمین سے نکا لی ہیں‘‘ (البقرہ)

طہارت وپاکیزگی کا حکم

’’اگر مجھے یہ ڈر نہ ہوتا کہ میں مسلمانوں کو مشقت میں ڈال دوں گا تو میں انہیں ہر نماز کے وقت مسواک کرنے کا حکم دیتا‘‘(صحیح مسلم)

مسائل اور ان کا حل

مہر کے بدلے خلع یا طلاق دینا سوال : میری بیوی بلاوجہ میکے چلی گئی اور مہرکے طورپر5 تولہ سوناجومیں نے دیاتھاوہ بھی ساتھ لے گئی۔ میںنے وکیل کے ذریعے یہ پیغام بھجوایاکہ آپ سونے سمیت گھرواپس آجاؤتووہ مکان تبدیل کرکے نامعلوم مقام پرچلے گئے۔ اب اس نے تنسیخ نکاح کامقدمہ دائرکر دیا ہے۔وہ یہ چاہتے ہیں کہ میں اسے طلاق دے کر فارغ کروں۔

پاکستان تحریک انصاف کا مستقبل!

پاکستان تحریک انصاف اپنے قیام سے اب تک کی کمزور ترین حالت میں پہنچ چکی ہے اور ایک بحرانی کیفیت کا شکار ہے۔ تحریک انصاف کو 8 فروری کو عوام کی جانب سے بے پناہ حمایت ملی مگر وہ اقتدار میں تبدیل نہ ہو سکی۔

مریم نواز کی حکومت کے لئے چیلنجز

مسلم لیگ(ن) کی چیف آرگنائزر مریم نواز پنجاب کی وزارت اعلیٰ کی ذمہ داریاں سنبھالنے کے بعد حکومتی محاذ پر سرگرم عمل ہیں۔ نو منتخب وزیر اعلیٰ کی مسلسل میٹنگز کا عمل ظاہر کر تا ہے کہ تعلیم، صحت، صفائی نوجوانوں کے امور اور گورننس کے مسائل پر بہت سا ہوم ورک جو انہوں نے کر رکھاہے اب اس پر عمل درآمد کیلئے اقدامات کرتی دکھائی دے رہی ہیں ۔