ہمدردی

تحریر : محمد متقی


سردیوں کی یخ بستہ شامیں میرے لئے ہمیشہ یادوں کے زخم لے کر آتی ہیں۔سرد ہوائوں کے تھپیڑے چہرے پر پڑتے ہیں تو آنکھوں کے کونے بے اختیار نم سے ہو جاتے ہیں اور جسم پر کپکپی سی طاری ہو جاتی ہے۔ اس کی وجہ ایک واقعہ ہے ۔

یہ چار برس قبل کا واقعہ ہے میں اپنی گاڑی میں ہوسٹل سے اپنے شہر جا رہا تھا۔ رات کا وقت تھا اور آسمان پر تارے ماں کی گود میں بیٹھے بچوں کی طرح لگ رہے تھے۔ کار کے شیشے لاک تھے اور ہیٹر آن تھا اس لئے سردی کا احساس ہی نہیں ہو رہا تھا۔

تین گھنٹے قبل ابو کا فون آیا تھا کہ فوراً شہر واپس آ جائوں کیونکہ میری امی کی طبیعت ٹھیک نہیں ہے۔ دراصل میری امی کی طبیعت کبھی کبھی بے حد خراب ہو جاتی تھی۔ اس مرتبہ بھی ایسا ہی ہوا تھا۔ میں چونکہ ان کی اکلوتی اولاد تھا، اس لئے اعلیٰ تعلیم کیلئے یونیورسٹی میں زیر تعلیم تھا۔ فارمیسی میں میرا یہ دوسرا سال تھا۔

 میں اپنے شہر کی جانب رواں دواں تھا کہ اچانک گاڑی کو ہلکے ہلکے جھٹکے لگے اور بند ہو گئی۔ گاڑی سے اتر کر میں اسے ایک طرف دھکیل کر کھڑا ہو گیا اور گاڑی کا بونٹ اٹھا دیا۔ اندر سے دھواں باہر کی طرف نکلا، میں نے ہاتھ سے دھوئیں کو ادھر اُدھر کیا۔ اور تاروں کے جال کو دیکھنے لگا۔ کئی تاریں جل کر کالی ہو چکی تھیں۔ میں چند لمحے تاروں کو تکتا رہا مگر کچھ سمجھ میں نہ آیا کہ کونسا تار کہاں فٹ ہوگا۔ سردی کا احساس بڑھتا جا رہا تھا، سڑک سنسان لگ رہی تھی اور میں اتنا اناڑی تھا کہ گاڑی کو ٹھیک بھی نہیں کر سکتا تھا۔ جب آخر تک میری سمجھ میں کچھ نہ آیا تو میں نے مکا مار کر بونٹ گرا دیا۔ اچانک ایک پہاڑی کی طرف سے روشنی نمودار ہوئی۔وہ روشنی آہستہ آہستہ میری سمت ہی آ رہی تھی۔ میں خوش ہو گیا مگر اگلے لمحے میری خوشی ماند پڑ گئی کیونکہ آنے والا ایک گیارہ بارہ سال کا بچہ تھا۔ اس نے سلام کیا تو میں نے سلام کا جواب دے کر گاڑی کو تاسف سے گھورا۔

’’کیا گاڑی خراب ہو گئی ہے؟‘‘ اس نے معصومیت سے دریافت کیا۔

’’ہاں بھئی، اسی لئے تو اس ویرانے میں کھڑا سردی برداشت کر رہا ہوں‘‘

میں نے آپ کی جھلک دیکھی تو اس طرف آ گیا، میں ابھی گاڑی کو دیکھتا ہوں، آپ ذرا یہ لالٹین پکڑیں‘‘

’’تم۔۔ کیا تم ٹھیک کر سکتے ہو گاڑی کو ‘‘

جی ہاں!میں اوپر پہاڑی کے اس پار گیراج میں کام کرتا ہوں‘‘۔میں نے لالٹین پکڑی تو وہ گاڑی پر جھک گیا۔

’’تمہارا نام کیا ہے بھئی‘‘؟ وقت گزاری کیلئے میں نے پوچھا۔

’’غلام‘‘

’’کیا۔۔۔۔غلام؟‘‘

’’ہاں پہلے غلام حسین تھامگر اب سب مجھے غلام غلام کہہ کر پکارتے ہیں‘‘۔اس نے تار جوڑتے ہوئے کہا۔ اس کے ہاتھ تیزی کے ساتھ چل رہے تھے۔

’’تم بارہ سال کے تو ہو گئے، کیا پڑھتے بھی ہو‘‘؟

’’نہیں جی‘‘

’’کیوں؟‘‘

میں نے پوچھا تو اس نے درد بھری نظروں کے ساتھ مجھے دیکھا۔’’ یہاں کوئی سکول ہی نہیں ہے‘۔

تھوڑی دیر بعد اس نے گاڑی کا بونٹ گرا دیا اور مجھے گاڑی اسٹارٹ کرنے کیلئے کہا۔میں نے چابی گھمائی تو گاڑی اسٹارٹ ہو گئی۔ میں نے انتہائی مسرت بھرے انداز میں جیب سے سو روپے کا نوٹ نکال کر اسے دینا چاہا۔

’’یہ لو غلام حسین سو روپے،تمہارا انعام‘‘

ایک دم اس کا رنگ بدل گیا۔ پھر وہ آہستہ سے بولا ’’شکریہ جناب! میں نے تو انسانی ہمدردی کے تحت یہ کام کیا ہے‘‘۔

میں اس کے خلوص سے بے حد متاثر ہوا اور صرف اتنا ہی کہہ سکا ’’ بہت بہت شکریہ غلام حسین ‘‘۔

’’جی کوئی بات نہیں‘‘

’’میری امی بیمار ہیں ان کیلئے دعا ضرور کرنا، تم ایک اچھے بچے ہو‘‘۔

’’اللہ آپ کی امی کو صحت دے‘‘ یہ کہہ کر وہ اندھیرے میں گم ہو گیا۔ میں نے اطمینان کا طویل سانس لیا پھر میں گھر تک بغیر کسی رکاوٹ کے پہنچ گیا۔

 حیرت انگیز طور پر امی کی صحت اچھی ہو گئی۔ ایک ہفتے بعد میں واپس وطن جا رہا تھا، راستے میں اسی مقام پر میں نے بے اختیار گاڑی روک دی جہاں غلام حسین ملا تھا۔ اوپر پہاڑی پر چڑھنا کچھ دشوار نہ تھا۔ میں اوپر پہنچ گیا۔ وہاں چند گھر تھے۔ مگر ان گھروں سے پہلے ایک چھوٹی سی قبر بنی ہوئی تھی۔ کتبے پر نام پڑھ کر میں دنگ رہ گیا، دماغ میں بھونچال سا آ گیا، لکھا تھا ۔

’’غلام حسین (موٹر مکینک)، عمر بارہ سال، تاریخ وفات 1990ء رات بارہ بجے‘‘۔

’’وہ بیس برس پہلے فوت ہو چکا تھا۔ اس معمے کو میں آج تک نہ سمجھ سکا‘‘۔

 

روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں
Advertisement

توکل:حقیقت اور اس کے ثمرات

’’جو کچھ اللہ کے ہاں ہے وہ بہتر اور پائیدار ہے، وہ ان لوگوں کیلئے ہے جو ایمان لائے اور اپنے رب پر بھروسہ کرتے ہیں‘‘(سورۃ الشوری:36)

فرضیت واہمیت زکوٰۃ

’’اے ایمان والو خرچ کروپا کیزہ چیزوں میں سے جو تم نے کمائی ہیں اور جو ہم نے تمھا رے لیے زمین سے نکا لی ہیں‘‘ (البقرہ)

طہارت وپاکیزگی کا حکم

’’اگر مجھے یہ ڈر نہ ہوتا کہ میں مسلمانوں کو مشقت میں ڈال دوں گا تو میں انہیں ہر نماز کے وقت مسواک کرنے کا حکم دیتا‘‘(صحیح مسلم)

مسائل اور ان کا حل

مہر کے بدلے خلع یا طلاق دینا سوال : میری بیوی بلاوجہ میکے چلی گئی اور مہرکے طورپر5 تولہ سوناجومیں نے دیاتھاوہ بھی ساتھ لے گئی۔ میںنے وکیل کے ذریعے یہ پیغام بھجوایاکہ آپ سونے سمیت گھرواپس آجاؤتووہ مکان تبدیل کرکے نامعلوم مقام پرچلے گئے۔ اب اس نے تنسیخ نکاح کامقدمہ دائرکر دیا ہے۔وہ یہ چاہتے ہیں کہ میں اسے طلاق دے کر فارغ کروں۔

پاکستان تحریک انصاف کا مستقبل!

پاکستان تحریک انصاف اپنے قیام سے اب تک کی کمزور ترین حالت میں پہنچ چکی ہے اور ایک بحرانی کیفیت کا شکار ہے۔ تحریک انصاف کو 8 فروری کو عوام کی جانب سے بے پناہ حمایت ملی مگر وہ اقتدار میں تبدیل نہ ہو سکی۔

مریم نواز کی حکومت کے لئے چیلنجز

مسلم لیگ(ن) کی چیف آرگنائزر مریم نواز پنجاب کی وزارت اعلیٰ کی ذمہ داریاں سنبھالنے کے بعد حکومتی محاذ پر سرگرم عمل ہیں۔ نو منتخب وزیر اعلیٰ کی مسلسل میٹنگز کا عمل ظاہر کر تا ہے کہ تعلیم، صحت، صفائی نوجوانوں کے امور اور گورننس کے مسائل پر بہت سا ہوم ورک جو انہوں نے کر رکھاہے اب اس پر عمل درآمد کیلئے اقدامات کرتی دکھائی دے رہی ہیں ۔