تیسویں پارے کا خلاصہ

تحریر : مفتی منیب الرحمن


سورۃ النباء: ’’نبا،، خبر کو کہتے ہیں۔ سورت کے شروع میں فرمایا کہ لوگ ایک عظیم خبر کے متعلق، جس کے بارے میں یہ باہم اختلاف کر رہے ہیں، ایک دوسرے سے سوال کرتے ہیں، یعنی قیامت، اس کے وقوع اور حق ہونے کے بارے میں کچھ لوگوں کو اختلاف ہے۔ اللہ تعالیٰ نے فرمایا: عنقریب قیامت برپا ہوگی تو انہیں معلوم ہو جائے گا۔ اس کے بعد اللہ تعالیٰ نے فرمایا کہ فیصلے کے دن کا وقت مقرر ہے اور پھر علامات قیامت کا بیان فرمایا۔ اس کے بعد جہنمیوں کیلئے عذاب اور اہل تقویٰ کیلئے انعامات کا بیان ہوا۔

 سورۃ النازعات میں بتایا کہ موت کے فرشتے جہنمیوں کی روح نہایت سختی سے نکالتے ہیں اور اہل ایمان کی روح کو نہایت نرمی سے، اس کے بعد فرشتوں کا ذکر ہے کہ جنہیں کارخانۂ قدرت کے معاملات کی تدبیر تفویض کی جاتی ہے، پھر اس امر کا بیان ہے کہ فرعون نے خدائی کا دعویٰ کیا تو اللہ تعالیٰ نے اسے عذاب دے کر درس عبرت بنا دیا۔ اس سورہ میں حیات بعد الموت کے منکرین کے اس سوال کا جواب دیا کہ ایک بار مر جانے کے بعد دوبارہ کون زندہ کرے گا؟ اللہ تبارک وتعالیٰ نے زمین و آسمان اور جو کچھ ان کے درمیان ہے کی تخلیق کا حوالہ دے کر فرمایا کہ دوبارہ پیدا کرنا دشوار ہے یا اتنے بڑے نظامِ کائنات کو جو تمہارے سامنے ہے، قائم کرنا؟ 

سورۃ التکویر میں بھی علامات قیامت کا ذکر ہے کہ سورج کی بساط نور کو لپیٹ دیا جائے گا، ستارے جھڑ جائیں گے، پہاڑ چلائے جائیں گے، دس ماہ کی حاملہ اونٹنیاں بے کار چھوڑ دی جائیں گی، وحشی جانور جمع کیے جائیں گے، سمندر بھڑکائے جائیں گے، جانیں ایک بار پھر جسموں سے ملا دی جائیں گی، اعمال کے صحیفے پھیلا دیے جائیں گے، دوزخ بھڑکائی جائے گی، جنت قریب کر دی جائے گی اور ہر شخص جان لے گا کہ اس نے اپنی آخرت کیلئے کیا ذخیرہ عمل آگے بھیجا ہے۔

 سورۃ الانفطار میں فرمایا کہ اللہ تعالیٰ نے ہر بندے کے نامۂ اعمال کو لکھنے کیلئے فرشتے مقرر کر رکھے ہیں، جنہیں ’’کراماً کاتبین‘‘ کہا گیا ہے اور بندہ جو بھی عمل کرتاہے، وہ جانتے ہیں۔

 سورۃ المطففین: ’’تطفیف‘‘کے معنی ناپ تول میں کمی کرنے کے ہیں۔ اللہ تعالیٰ نے فرمایا: ناپ تول میں کمی کرنیوالوں کے لئے شدید عذاب ہے کہ جب وہ لوگ دوسروں سے لیتے ہیں تو پورا پورا ناپ کر لیتے ہیں اور جب دوسروں کو  دیتے ہیں تو ناپ تول میں کمی کر دیتے ہیں۔ فرمایا کہ کافروں کا نامۂ اعمال ’’سجین‘‘ میں ہے جو مہر لگایا ہوا صحیفہ ہے۔ نیکوکاروں کا صحیفۂ اعمال ’’علیین‘‘ میں ہو گا، یہ بھی ایک مہر بند صحیفہ ہے جس پر اللہ کے مقرب بندے گواہ ہیں۔ 

سورۃ الانشقاق میں بھی آثار واحوال قیامت کا بیان ہے اور یہ کہ قیامت کے دن جس کا صحیفۂ اعمال دائیں ہاتھ میں دیا جائے گا، اُس کا اخروی حساب بہت آسان ہو گا اور وہ اپنے اہل کی طرف خوشی خوشی لوٹے گا اور جس کا نامۂ اعمال پیٹھ پیچھے سے دیا جائے گا، وہ کہے گا: کاش کہ مجھے موت آ جائے اور اسے جہنم کی بھڑکتی ہوئی آگ میں جھونک دیا جائے گا۔

 سورۃ البروج میںاللہ تعالیٰ نے فرمایا کہ اللہ عزیز و حمید پر ایمان لانے کی پاداش میں ’’اصحاب اخدود‘‘ (خندقوں والے) کو اس طرح قتل کیا گیا کہ انہیں بھڑکتی آگ میں ڈال دیا گیا۔ 

سورۃ الطارق میں انسان کو اس کے مادۂ تخلیق اور کیفیت تخلیق کی جانب توجہ دلاتے ہوئے اللہ تعالیٰ نے فرمایا: جس دن چھپی باتیں ظاہر کر دی جائیں گی، اس وقت اللہ کے سوا نہ کوئی مدد گار ہوگا اور نہ کسی کے پاس طاقت ہو گی۔

 سورۃ الاعلیٰ کے آخر میں فرمایا؛ جس نے اپنا باطن صاف کرلیا اور اپنے رب کا نام لے کر نماز پڑھی وہ کامیاب ہوا۔ سورۃ الغاشیہ کے شروع میں ان لوگوں کے انجام کا ذکر ہے جو آخرت میں عذاب سے دوچار ہوں گے۔ اس کے بعد ان خوش نصیب مومنوں کا ذکر ہے۔

 سورۃ الفجر میں قومِ عاد، ثمود اور فرعون کا ذکر ہے، ان اقوام نے طاقت کے زعم میں آکر سرکشی اختیار کی تو اللہ تعالیٰ نے ان پر عذاب نازل کیا۔ پھر فرمایا کہ تم یتیم کی عزت نہیں کرتے، ایک دوسرے کو یتیم کے کھلانے کی ترغیب نہیں دیتے، وراثت میں ملا ہوا سارے کا سارا مال ہڑپ کر جاتے ہو۔ اس کے بعد فرمایا کہ آخرت میں اس مال کی ناپائیداری کا احساس ہوگا، انسان پچھتائے گا مگر یہ پچھتاوا کچھ کام نہیں آئے گا۔ آخری آیت میں فرمایا کہ ’’نفس مطمئنہ‘‘ یعنی اعلیٰ درجے کے ایمان کے حاملین کا وفات کے وقت اعزاز واکرام کے ساتھ استقبال کیا جائے گا۔

 سورۃ البلد میں فرمایا کہ ہم نے انسان کو دیکھنے کیلئے دو آنکھیں، بولنے کیلئے زبان اور دو ہونٹ عطا کیے اور نیکی اور بدی کا شعور عطا کیا۔

 سورۃ اللیل میں اللہ تعالیٰ نے فرمایا کہ انسان کی جدوجہد دو مختلف سمتوں میں ہوتی ہے، ایک طبقہ وہ ہے جو اللہ کے عطا کردہ مال میں سے اس کی راہ میں خرچ کرتا ہے ، تقویٰ پر کاربند رہتا ہے تو ہم اس کیلئے آسانی، یعنی جنت تک رسائی کی منزل آسان کر دیں گے۔ دوسرا طبقہ وہ ہے کہ جو اللہ کے دیے ہوئے مال میں سے بخل کی وجہ سے خرچ نہیں کرتا، وہ دولت کی فراوانی میں مست ہوکر اللہ سے بے پروا ہو جاتا ہے اور نیک باتوںکو جھٹلاتا ہے تو اس کیلئے ہم مشکل منزل یعنی دوزخ کا راستہ آسان کر دیتے ہیں۔ 

سورۃ الضحیٰ سیدالمرسلینﷺ کی عظمت کو بیان کر رہی ہے۔ اللہ عزوجل نے فرمایا کہ اے رسولِ مکرمﷺ! آپ کے رب نے نہ آپ کو چھوڑا ہے، نہ آپ سے وہ ناراض ہوا ہے، آپ کی ہر آنے والی ساعت آپ کی پہلی ساعت سے بہترہو گی اور عنقریب آپ کا رب آپ کو اتنا عطا فرمائے گا کہ آپ راضی ہو جائیں گے۔

سورۃ الانشراح میں رسولﷺ کے شرحِ صدر کا ذکر ہے۔ ایک آیت رفعت شان مصطفیﷺ کیلئے غیر معمولی عطائے ربانی ہے کہ اللہ نے فرمایا ’’اور ہم نے آپ کیلئے آپ کا ذکر بلند کر دیا ہے‘‘۔ 

سورۃ التین میں فرمایا ’’بے شک ہم نے انسان کو بہترین ساخت میں پیدا کیا اور پھر اُس کو سب سے نچلے طبقے میں لوٹا دیا۔ اس سے مراد یہ ہے کہ اللہ کی بارگاہ میں تقرب اور عِزّو شرف کامدار انسان کی ظاہری صورت پر نہیں بلکہ ایمان و عمل پر ہے۔

 سورۃ العلق کی پہلی پانچ آیات وہ پہلی وحیٔ ربانی ہے، جو غار حرامیں سید المرسلینﷺ پر نازل ہوئی اور آپﷺ کی نبوت کا اعلان ہوا۔

 سورۃ القدر شبِ قدر کی فضیلت میں نازل ہوئی۔ اسے ہزار مہینوں سے بہتر قرار دیا۔ شبِ قدر کو قطعیت کے ساتھ متعین نہیں فرمایا تاکہ بندوں کے ذوق اور خیر کی جستجو کا امتحان ہو۔ 

سورہ زلزال میں قیامت کا منظر بیان کیاگیا کہ زمین کے سینے میں جو بھی راز چھپے ہیں، وہ سارے اگل دے گی یا جو بھی میتیں مدفون ہیں، اُنہیں نکال باہر کرے گی اور ہر ایک اپنی معمولی سے معمولی نیکی یا بدی کا انجام دیکھ لے گا۔ 

سورۃ العادیات میں اللہ تعالیٰ نے مجاہدین کے گھوڑوں کی مختلف کیفیات کو قسم کیساتھ بیان فرمایا۔ 

سورہ التکاثر میں بتایا کہ زیادہ سے زیادہ مال جمع کرنے کی خواہش نے انسان کو اللہ سے غافل کر دیا مگر جب قبروں میں پہنچیں گے تو اس کا انجام معلوم ہوجائے گا۔ سورۃ العصر میں بتایا کہ انسان خسارے میں ہے اور اس سے نکلنے کی صورت صرف یہی ہے کہ ایمان لائیں، عمل صالح کریں اور ایک دوسرے کو حق اور صبر کی وصیت کریں ۔

 سورۃ الھمزہ میں اللہ تعالیٰ نے طعنہ زنی اور عیب جوئی کی شدید مذمت فرمائی اور بتایا کہ ایسے لوگوں کا انجام اللہ کی بھڑکائی ہوئی ایسی آگ ہے جو چورا چورا کر دے گی۔ سورۃ الماعون میں اللہ تعالیٰ نے یتیم کے ساتھ ناروا سلوک اور مسکین کو کھانا کھلانے کی ترغیب نہ دینے جیسے مذموم عمل کو قیامت کے جھٹلانے سے تعبیر کیا اور نمازوں میں ریاکاری کی مذمت بیان فرمائی ۔

 سورۃ الکوثرمیں اللہ عزوجل کی جانب سے رسول اللہﷺ کو کوثر عطاکیے جانے کا ذکر ہے، اس سے مراد خیر کثیر ہے، جس کا ایک حصہ حوض کوثر بھی ہے جہاں محشر میں رسول اللہﷺ اہلِ ایمان کو سیراب کریں گے۔ 

سورۃ الکافرون میں یہ پیغام دیاگیا کہ حق اور باطل میں کوئی مفاہمت نہیں ہو سکتی۔

 سورۃ النصر میں اللہ تعالیٰ نے اپنی نصرت سے اسلام کی فتح کو اپنی نعمت کے طور پر بیان کیا۔

 سورہ اخلاص میں اللہ تعالیٰ کی توحیدِ خالص کا بیان ہے کہ وہ بے نیاز ہے، ابنیت اور اُبوّت کی نسبت سے پاک ہے اور اُس کاکوئی ہمسر نہیں۔ 

سورۃ الفلق اور سورۃ الناس میں اللہ تعالیٰ نے تعلیم فرمائی کہ اس کی مخلوق کے شر، ہر قسم کی ظلمت کے شر، جادوگروں کے شر، حاسدین کے شر، چھپ کر وسوسے ڈالنے والوں کے شر سے اللہ تعالیٰ کی پناہ مانگی جائے۔ رسول اللہﷺ کا معمول تھاکہ آپ صبح و شام ان آخری تین سورتوں کی تلاوت فرماکر اپنے ہاتھوں پر دَم فرماتے اور پھر ہاتھوں کو اپنے سر اور چہرۂ مبارک اور پورے بدن مبارک پر پھیر دیتے اور یہ عمل آپ تین مرتبہ فرماتے۔ 

 

روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں

T-20 کرکٹ کا سنسنی خیز فارمیٹ

آئی سی سی ٹی 20 ورلڈکپ 2024ء کے آغاز میں 6 روز باقی رہ گئے،انٹرنیشنل کرکٹ کونسل یکم جون2024ء سے کیریبین اور ریاست ہائے متحدہ امریکہ میں مردوں کے ٹی 20 ورلڈ کپ کے نویں ایڈیشن کی میزبانی کر رہی ہے۔ٹی 20، کرکٹ کا سب سے دلچسپ اور سنسنی خیز فارمیٹ ہے، قارئین کیلئے ٹی 20ورلڈکپ کی مختصر تاریخ پیش خدمت ہے۔

بھیڑ اور بھیڑیا

بھیڑیا اپنے گھر میں بیٹھا آرام کر رہا تھا جب اسے باہر سے اونچی ،اونچی آوازیں آئیں۔پہلے تو وہ آنکھیں موندے لیٹا رہا لیکن جب شور مسلسل بڑھنے لگا تو اس نے سوچا باہر نکل کر دیکھناتو چاہیے کہ آخر ہو کیا رہا ہے۔گھر سے باہر جا کر دیکھا تو سامنے 2 بھیڑیں کھڑی آپس میں لڑ رہی تھیں۔

سچی توبہ

خالد بہت شرارتی بچہ تھا۔ سکول اور محلے کا ہر چھوٹا بڑا اس کی شرارتوں سے تنگ تھا۔ وہ جانوروں کو بھی تنگ کرتا رہتا ، امی ابو اسے سمجھاتے مگر خالد باز نہ آتا۔

ذرامسکرائیے

اُستاد(شاگرد سے) انڈے اور ڈنڈے میں کیا فرق ہے؟ شاگرد: ’’کوئی فرق نہیں‘‘۔ اُستاد: ’’وہ کیسے‘‘؟شاگرد: ’’دونوں ہی کھانے کی چیزیں ہیں‘‘۔٭٭٭٭

پہیلیاں

مٹی سے نکلی اک گوری سر پر لیے پتوں کی بوری جواب :مولی٭٭٭٭

ادائیگی حقوق پڑوسی ایمان کا حصہ

اسلام کی تعلیمات کا خلاصہ دو باتیں ہیں۔اللہ تعالیٰ کی اطاعت و بندگی اور اللہ تعالیٰ کے بندوں کے ساتھ حسن سلوک۔ اسی لیے جیسے شریعت میں ہمیں اللہ تعالیٰ کے حقوق ملتے ہیں، اسی طرح ایک انسان کے دوسرے انسان پر بھی حقوق رکھے گئے ہیں۔