نیوز الرٹ
  • بریکنگ :- مسلم لیگ(ن)کےکارکنوں کومبارکباداورخراج تحسین پیش کرتاہوں،حمزہ شہباز
  • بریکنگ :- مسلم لیگ(ن)نےثابت کیاکہ وہ مقبول ترین جماعت ہے،حمزہ شہباز
  • بریکنگ :- عوام مسائل کےحل کیلئےمسلم لیگ(ن)کی طرف دیکھ رہےہیں،حمزہ شہباز
  • بریکنگ :- عوام اب دعوؤں اورنعروں کےفریب میں آنےوالےنہیں،حمزہ شہباز
  • بریکنگ :- این اے 133ضمنی الیکشن میں کامیابی پرحمزہ شہبازکی مبارکباد
Coronavirus Updates

سسرالی رشتوں کا تقدس, رشتوں کا ادب و احترام نبی کریم ﷺ کی سنت ہے

خصوصی ایڈیشن

تحریر : ڈاکٹر کریم خان


ہماری معاشرتی زندگی رشتوں اور قرابتوں کے گرد گھومتی ہے اور ہر فرد ان رشتوں کی زنجیر میں جکڑا ہوا ہے۔ نکاح کے بعد کچھ رشتے وجود میں آتے ہیں وہ بھی قابل احترام ہوتے ہیں جن کو سسرالی رشتہ کہا جاتا ہے۔ سسرالی رشتہ در حقیقت دو علیحدہ علیحدہ خاندانوں کو ایک دوسرے کا جُز بنا دیتا ہے یعنی یہ رشتہ ایک خاندان کو دوسرے خاندان کے قریب کر دیتا ہے۔ اسلام نے جہاں قریبی رشتوں کے تقدس کا حکم دیا وہاں سُسرالی رشتوں کے احترام کا بھی حکم دیا۔

 مرد و عورت کے ازدواجی تعلق قائم کرنے کے لیے اسلام نے نکاح کا قانون متعارف کروایا ہے اور ازدواجی تعلق قائم ہونے کے بعد کچھ رشتے حرام ہو جاتے ہیں جن کو سسرالی رشتہ سے تعبیر کیا جاتا ہے۔  اللہ نے فرمایا :’’وہی ہے جس نے آدمی کوپانی سے بنایا پھر اس کے (نسلی) رشتے اور سسرالی رشتے بنا دیے اور تمہارا رب بڑی قدرت والا ہے‘‘۔(فرقان:54)

اللہ نے مرد و عورت کو پیدا کیا پھر اس کے لیے نسب کے رشتے دار بنا دیئے پھر کچھ مدّت بعد سسرالی رشتے قائم کر دیے۔ دونوں مل کر ایک مکمل وحدت بنتے ہیں ان کے ہاں بیٹیاں بھی ہوں گی اور بیٹے بھی، کسی کے یہ سسرال بنیں گے اور کوئی ان کے بچوں کے سسرال ہونگے۔اس طرح ایک انسانی معاشرہ معرض وجود میں آئے گا۔ اسلام نے اس شعبہ سے متعلق ایسا قانون اور ضابطہ وضع کیا ہے تا کہ رشتوں کا تقدس پامال نہ ہو۔ محرمات جن کی حرمت بالکل واضح ہو چکی ہو عادتاً انسان ان کے ساتھ ازدواجی تعلق قائم نہیں کرتا کیونکہ وہ رشتے قابل عزت اور لائق احترام بن جاتے ہیں۔

اسلامی معاشرے میں قابلِ قبول رویہ پاک دامنی کا ہے اور اس کے برعکس بے حیائی کا رویہ ناقابلِ قبول ہے۔ اس کے بالمقابل جہاں تک جدید مغربی معاشرے کا تعلق ہے تو ان کے نزدیک عورت اور مرد کے تعلق کے لیے نکاح ضروری نہیں اور وہ رشتوں کے تقدس کا خیال بھی نہیں کرتے۔

ساس اور داماد کا رشتہ شریعت کی نظر میں نہایت پاکیزہ اور مقدس رشتہ ہے، ساس کا درجہ بھی ماں کے قریب ہوتا ہے، اسی لئے ان رشتوں کی پاکیزگی کا اسلام میں بڑا لحاظ رکھا گیا ہے۔ اس تقدس کی بنا پر ساس سے نکاح دائمی اور ابدی طور پر حرام ہے۔ 

نکاح ایک مقدس رشتہ ہے جس کو برقرار رکھنا ضروری ہے شریعت اسلامیہ میں یہ بڑے اہم مسائل ہیں جن سے اکثر لوگ ناواقف ہیں۔ عصرِ حاضر میں عریا نی اور فحاشی عروج پر ہے۔ محارم رشتوں کے تقدس کو پامال کیا جا رہا ہے۔ آئے روز اخبارات میں ایسے واقعات شائع ہو رہے ہیں۔ عصر حاضر میں اجتماعی رہن سہن عام ہو چکا ہے اورخاص طور پروہ مقامات جہاں ایک کمرہ ہوتا ہے میاں بیوی اور بچے اکٹھے زندگی بسر کر رہے ہوتے ہیں ان حالات میں نبی رحمت ﷺ نے امت کی اصلاح کے لیے فرمایا:عمرو بن شعیب ؒ اپنے والد مکرم سے اور وہ اپنے دادا سے روایت کرتے ہیں کہ نبی رحمت ﷺنے ارشاد فرمایا کہ ’’جب تمہارے بچے سات برس کے ہو جائیں تو انہیں نماز پڑھنے کا حکم دو اور جب وہ دس برس کے ہو جائیں (تو نماز چھوڑ نے پر) انہیں مارو، نیز ان کے بستر علیحدہ کردو‘‘(مشکوۃ شریف: 539)۔بہن بھائی اگر ایک ہی بستر میں سوتے ہوں تو اس عمر میں ان کے بستر الگ کر دینے کی ضرورت ہے۔ اسی طرح والد کو بھی چاہیے کہ اپنی جوان بیٹیوں اور ماں کو چاہیے کہ جوان بیٹوں کے ساتھ نہ سوئے۔

سسرالی رشتہ کی حرمت کا مسئلہ انتہا ئی اہمیت کا حامل ہے۔ لوگوں میں اس مسئلہ کا شعور دینا بہت ضروری ہے کہ رشتہ ازدواج میں منسلک ہونے کے بعد کون کون سے رشتے حرام ہو جاتے ہیں تاکہ ان رشتوں کی حرمت برقرار رہے۔ جاہل عرب کے بعض طبقوں میں رواج تھا کہ باپ کی منکوحات بیٹے کو وراثت میں ملتی تھیں اور بیٹے اُنہیں بیوی بنا لینے میں کوئی قباحت محسوس نہیں کرتے تھے۔ قرآن پاک نے اسے نہایت قابل نفرت فعل قرار دیا ہے جبکہ رسول اللہ ﷺنے ایسے شخص کو قتل کرنے اوراس کی جائیداد ضبط کرنے کا حکم دیا ہے۔

 اسلام نے عورت پربہت بڑا احسان کیا ہے کہ انتہائی بے ر اہ روی کے دور میں انتہائی مضبوط اخلاقی بنیاد فراہم کی۔ عورت کے سب سے محترم مقام یعنی ماں اور اس کی ہر حیثیت یعنی بہن، بیوی اور بیٹی کے لحاظ سے اس کو عزت ملی جبکہ یورپ آج رشتوں کی حرمت کو تباہ کرنے کا کارنامہ سرانجام دے رہا ہے۔ 

عصر ِحاضر میں قریبی رشتوں کے ساتھ بدکاری کے واقعات عام ہو رہے ہیں۔ ایسے حالات میں علماء سے رائے لی جائے اور اس پر پروگرام منعقد کیے جائیں تاکہ رشتوں کے تقدس کا لحا ظ رکھا جاسکے۔ عصرِحاضر میں مصاہرت کے مسائل سے عدم واقفیت کی بنا پر رشتوں کا تقدس پامال ہو رہا ہے۔ آج کے اس نا زک دور میں جب رسم و رواج عام ہیں ،وہ لوگ کیسے اچھی زندگی گزاریں گے جن کا خاندانی نظام خراب ہو چکا ہے۔ ضرورت اس بات کی ہے کہ جن سسرالی رشتوں کی حرمت ہے انہیں واضح کیا جا ئے تا کہ امت کی دین کی طرف رہنمائی ہو سکے۔ 

رشتوں کا تقدس

رشتوں کا توازن برقرار رکھنے لیے ضروری ہے کہ ہم اسلامی تعلیمات کے مطابق زندگی گزاریں۔اللہ تعالیٰ کی بنائی ہو ئی یہ کا ئنات خوبصورت اور حسن سے آراستہ ہے۔ اس کائنات کی بقاء و تسلسل کے لیے جو طریقہ اپنایا گیا ہے وہ بھی خوبصورت ہے۔ اللہ نے ہر چیز کے جوڑے بنائے اور توالد و تناسل کا خوبصورت سلسلہ قائم فرمایا،رشتوں کے متعلق قرآن حکیم میں ہے:’’اے لوگو!اپنے رب سے ڈرو جس نے تمہیں ایک جان سے پیدا کیا اور اسی میں سے اس کا جوڑا پیدا کیا اور ان دونوں سے کثرت سے مردو عورت پھیلا دیے اور اللہ سے ڈرو جس کے نام پر ایک دوسرے سے مانگتے ہواور رشتوں کا لحاظ رکھو بے شک اللہ تم پر نگہبان ہے‘‘(سورۃ النساء:01)۔

اس آیت میں واضح طور پر کہا گیا ہے کہ رشتوں کا لحاظ رکھو کہ کون سے رشتوں سے عقد جائز ہے اور کون سے رشتے ایسے ہیں جن سے عقد یا ازدواجی تعلق جائز نہیں ہے۔

مردو عورت کے درمیان راز

میاں بیوی کے آپس کے تعلق وراز کے بارئے میں اللہ تعالیٰ نے فرمایا:

’’وہ تمہارا لباس ہیں اور تم ان کا لباس ہو‘‘۔ (البقرۃ: 187)

دین اسلام میں زوجین کے باہمی معاملات سے متعلق جو ہدایات دی گئی ہیں اس کی غرض یہی ہے کہ تعلقِ زوجیت مضبوط و پائیدار رہے، اس رشتہ محبت میں مزید پختگی آئے اور ناموافق حالات پیدا نہ ہوں۔ مرد و عورت کے درمیان جو رشتہ کی نزاکت و حساسیت ہے اس کا دائرہ راز میں رہنا ضروری ہے تب ہی ایک دوسرے کے عیب ظاہر ہونے سے بچ سکتے ہیں اور رشتوں کا تقدس بھی محفوظ رہ سکتا ہے۔

قریبی رشتوں کے ساتھ بدکاری کے واقعات ہمارے معاشرے میں شروع ہو گئے تو اس سے آنے والی نسل پر تباہ کن اثرات مرتب ہو ں گے۔ اس قسم کے واقعات ملک کے مستقبل کو مجروح کر رہے ہیں، اگر سد باب نہ کیا گیا تو رشتوں کا تقدس پامال ہو تا رہے گا۔

قریبی رشتوں کے تقدس کے بارے میں شاہ ولی اللہؒ لکھتے ہیں:’’اگر لوگوں میں یہ دستور ہوتا کہ ماں کو بیٹی کے شوہر کے ساتھ اور مردوں کو اپنے بیٹوں کی عورتوں کے ساتھ اور ازواج کی بیٹیوں کے ساتھ رغبت ہوتی (یعنی نکاح جائز رکھا جاتا) تو اس کا نتیجہ یہ برآمد ہوتا کہ اس تعلق کو توڑنے کی کوشش ہوتی یا اس شخص کے قتل کے درپے ہو جاتا جس کی طرف سے خواہش پائی جاتی ہے، اگر آپ قدیم یونان کے اس سلسلہ کے قصے سنیں یا اپنے زمانہ کی ان قوموں کے احوال کا مطالعہ کریں جن کے یہاں یہ مبارک سنت (حرمت مصاہرت) نہیں ہے تو آپ کو وہاں بھیانک ماحول اور گھٹا ٹوپ ظلم و جبر کا مشاہدہ ہوگا۔ پس اس رشتہ داری میں رفاقت لازمی ہے اور پردہ نہایت دشوار ہے اور ایک دوسرے سے حسد کرنا برا ہے اور جانبین سے ضرورتیں ٹکراتی ہیں پس مصاہرت کا مسئلہ ماؤں اور بیٹیوں جیسا ہے یا دو بہنوں جیسا ہے۔

(مفتی ڈاکٹر محمد کریم خان معروف عالم دین ہیں، سربراہ مدرسہ علمیہ اور صدر اسلامک ریسرچ کونسل، 20 سے زائد کتب کے مصنف ہیں)

روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں
Advertisement

ویسٹ انڈیز کا دورہ پاکستان ،شائقین اسٹیڈیم جانے کو بے چین، ’’اومیکرون‘‘ کے سائے بھی منڈلانے لگے

کرکٹ دیوانوں کے لیے اچھی خبریں آنے کا موسم شروع ہونے کو ہے۔ پاکستان کے میدان آباد ہی نہیں بلکہ رونق افروز ہونے کو ہیں۔ ویسٹ انڈیز کادورہ اس حوالے سے شہر قائد سمیت ملک بھر کے تماشائیوں کیلئے بہت ہی مبارک ہے۔ کیربینز ٹیم نے 2018ء میں تین ٹی 20میچ کراچی میں کھیلے تھے، جس میں میزبان گرین شرٹس نے کامیابیاں سمیٹی تھیں۔ وائٹ واش شکست کھانے کے تقریبا ًپونے چار سال بعد وِیسٹ انڈیز پھر ہمارے مہمان بن رہے ہیں۔ اسے ایک سیریز کے بجائے کرکٹ میلہ کہا جائے تو غلط نہ ہو گا کہ خوش قسمتی سے سوفیصد تماشائیوں کو اسٹیڈیم آنے کی اجازت دے دی گئی ہے۔

جونیئرہاکی ورلڈکپ میں مایوس کن کارکردگی، ہاکی کا جنازہ ہے ذرا دھوم سے نکلے۔۔۔

4 بارکا عالمی چیمپیئن 2014ء میں ورلڈ کپ کیلئے کوالیفائی ہی نہیں کرسکا تھاجونیئرہاکی ورلڈکپ کاتاج کس کے سر سجے گا اس کافیصلہ آج ارجنٹائن اور جرمنی کے درمیان کھیلے جانے والے فائنل کے بعدہوگا۔ دونوں ٹیمیں آج ٹائٹل ٹرافی کیلئے دوسری بارمدمقابل ہوں گی۔آج کون سی ٹیم اچھا کھیلتی ہے اورکس کومایوسی کاسامنا کرنا پڑتاہے، ہمیں اس سے کیا؟ ہمیں تو صرف اس بات کا دکھ ہے کہ پاکستان میں قومی کھیل ہاکی مسلسل تنزلی کاشکار ہے۔ پاکستان ہاکی فیڈریشن کے حکام محض سیاست، اختیارات اور فنڈز کے حساب کتاب میں لگے رہتے ہیں اورکسی کو سبزہلالی پرچم کی سربلندی کااحساس نہیں ہے۔ ہمیں تو یہی افسوس ہے کہ ماضی میں ہاکی کے بے تاج بادشاہ پاکستان کی جونیئر ہاکی ورلڈکپ میں کارکردگی انتہائی مایوس کن رہی ،جس کاتسلسل درجہ بندی کے لیے کھیلے جانے والے میچز میں بھی جاری رہا اورپاکستانی ٹیم جنوبی افریقہ سے شکست کھا کر ٹاپ ٹین میں بھی جگہ بنانے میں ناکام رہی ہے۔ بھارت میں کھیلے جانے والے ہاکی کے جونیئر عالمی کپ میں جنوبی افریقہ نے قومی ٹیم کو شوٹ آئوٹ پر ہرادیا۔پاکستان اور جنوبی افریقہ کے درمیان میچ مقررہ وقت میں 3،3گول سے برابر رہا تھااور فیصلہ شوٹ آئوٹ پر ہوا جس میں جنوبی افریقہ نے1-4 سے کامیابی حاصل کی۔

تلاش

افریقہ کے دور دراز گائوں میں ایک غریب کسان رہتا تھا۔ وہ ایک خوش مزاج، خوشحال اور قناعت پسند انسان تھا اور پر سکون زندگی گزار رہا تھا۔

شریر چوہا

جمیلہ کا گھر ایک خوبصورت باغ کے درمیان تھا۔اطراف میں رنگ برنگے پھولوں کی کیاریاں لگی تھیں۔ ان کے علاوہ اس میں آم، امرود، کیلے، چیکو اور ناریل وغیرہ کے درخت بھی تھے۔ جمیلہ بڑی اچھی لڑکی تھی۔ صبح سویرے اٹھتی نماز اور قرآن پڑھتی اور پھر باغ کی سیر کو نکل جاتی۔ گھر آکر اپنی امی کا ہاتھ بٹاتی اور پھر سکول چلی جاتی۔ اس کی استانیاں اس سے بہت خوش رہتی تھیں، کیوں کہ وہ ماں باپ کی طرح ان کا کہنا بھی مانتی تھی اور خوب جی لگا کر پڑھتی تھی۔ جمیلہ کے کمرے میں کتابوں اور کھلونوں کی الماریاں خوب سجی ہوئی تھیں۔ فرصت کے اوقات میں وہ کتابیں پڑھتی اور کبھی نت نئے کھلونوں سے بھی کھیلتی۔

چرواہے کا احسان

انگریز جب ہندوستان آئے تو اپنے ساتھ مشینیں بھی لائے۔ اس وقت تک یورپ میں ریل اور دوسری مشینیں ایجاد ہو گئی تھیں۔ انگریزوں نے ہندوستان میں ریلوں کی تعمیر کا کام شروع کیا۔ برصغیر پاک و ہند میں ریل کی پہلی لائن بمبئی سے تھانے تک پہنچائی گئی۔ اس کے بعد مختلف حصوں میں پٹریاں بچھائی جانے لگیں۔ پہاڑی علاقوں میں پٹریوں کا بچھانا ایک بے حد مشکل کام تھا۔ انجینئروں نے پہاڑوں میں سرنگیں کھود کر لائنوں کو گزارا۔ ہمارے ہاں کوئٹہ لائن اس کی ایک شاندار مثال ہے۔

پہیلیاں

گونج گرج جیسے طوفان،چلتے پھرتے چند مکانجن کے اندر ایک جہان،پہنچے پنڈی سے ملتان(ریل گاڑی)