کیا برف پگھلنے لگی ہے؟

تحریر : عدیل وڑائچ


پاکستان تحریک انصاف اپنی پرانی قیادت کے منظر عام پرآنے کے بعد متحرک ہوتی دکھائی دے رہی ہے۔ سیاسی اور قانونی محاذ پر پاکستان تحریک انصاف کیلئے آئندہ چند ہفتے اہمیت کے حامل ہیں۔ سنیئر رہنما پاکستان تحریک انصاف چوہدری پرویز الٰہی ضمانت منظور ہونے کے بعد جیل سے رہا ہو کر گھر پہنچ چکے ہیں اور تحریک انصاف کے دیگر اہم رہنماؤں کی صورتحال کے برعکس ان کو ضمانت پر رہائی کے بعد کسی دوسرے کیس میں گرفتار نہیں کیا گیا۔

چوہدری پرویز الٰہی کو من پسند افراد کو ٹھیکے دینے اور پنجاب اسمبلی میں جعلی بھرتیوں کے کیس میں گرفتار کیا گیا تھا اور وہ اس وقت 20 کیسز میں نامزد ہیں جن میں لاہور میں تین ، فیصل آباد میں چار، راولپنڈی میں 11 ، ضلع اٹک میںایک جبکہ گوجرانوالہ میں ایک کیس ہے۔ چوہدری پرویز الٰہی کی اچانک رہائی کے بعد پاکستان تحریک انصاف کو پنجاب میں ایک فعال لیڈر شپ واپس ملی ہے۔ 9 مئی 2023ء کے واقعات کے بعد پاکستان تحریک انصاف کی مین لیڈر شپ میں سے بڑی تعداد نے یا تو پارٹی چھوڑ دی یا وہ منظر عام سے  مکمل طور پر غائب ہیں۔ خاص طور پر پنجاب میں حماد اظہر اور میاں اسلم اقبال کے سیاسی منظر نامے سے غائب ہونے کے بعد صوبے میں تحریک انصاف عملاً غیر فعال ہو چکی ہے ۔ پنجاب میں تحریک انصاف کی احتجاجی سیاست ہو یا صوبائی اسمبلی میں اپوزیشن کا لائحہ عمل ، لیڈر شپ کے بغیر صوبے میں جماعت کے پاس کوئی ڈائریکشن نہیں۔ تحریک انصاف کو سیاسی طور پر صرف خیبر پختونخوا سے چلایا جارہا ہے مگر اب پنجاب میں پارٹی کی صورتحال بدلتی دکھائی دے رہی ہے۔ فواد چوہدری بھی تحریک انصاف میں واپسی کیلئے پر تول رہے ہیں ۔ 9 مئی سے قبل پنجاب کی سیاست میں فواد چوہدری تحریک انصاف کی پالیسیوں پر اثر انداز ہونے کی صلاحیت رکھتے تھے ،اگرچہ ان کی واپسی کیلئے جماعت کے اندر مزاحمت ہے مگر 9 مئی کے بعد تحریک انصاف چھوڑتے ہوئے اور اس کے بعد انہوں نے بانی پی ٹی آئی یا جماعت کے خلاف کوئی بیان بازی نہیں کی بلکہ انہیں اسیری کی صورت میں مزید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ تحریک انصاف کے وہ افراد جو گزشتہ برس سے قید کاٹ رہے ہیں وہ فواد چوہدری کی واپسی کے حوالے سے اختلافی مؤقف رکھتے ہیں مگر اس بات کا امکان ہے کہ فواد چوہدری جلد پاکستان تحریک انصاف میں واپس آجائیں گے۔ تحریک انصاف کے ذرائع کے مطابق فواد چوہدری اسیر ی کے دوران اور رہائی کے بعد بھی بانی پی ٹی آئی کے ساتھ رابطے میں رہے ہیں اور اور پارٹی کے معاملات پر ان کی مختلف ذرائع سے کمیونی کیشن جاری رہتی ہے۔ 

ادھربدھ کے روز تحریک انصاف کے اہم رہنما حماد اظہر نے اچانک روپوشی ختم کر دی ۔ وہ اسلام آباد میں پارٹی سیکرٹریٹ پہنچ گئے اور میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ گزشتہ روز بانی پی ٹی آئی کا پیغام ملا کہ روپوشی ختم کرکے آپ کے باہرآنے کا وقت آگیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بانی پی ٹی آئی نے اس سے قبل خود کہا تھا کہ آپ نے محفوظ رہنا ہے اور منظر عام پر نہیںآنا۔  پیغام ملا ہے کہ اب آ کر قیادت کرنے کا وقت آچکا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ رؤف حسن سے ملنے آیا ہوں، پشاور جا کر ضمانتیں لے کر پنجاب میں مقدمات کا سامنا کروں گا۔ انہوں نے یہ انکشاف بھی کیا کہ مراد سعید سمیت تمام روپوش رہنما اب باہر  آئیں گے۔ تحریک انصاف پنجاب کی قیادت میں سے چوہدری پرویز الٰہی کا رہاہونا ، حماد اظہر کا اچانک منظر عام پرآنا اور فواد چوہدری کی واپسی کی تیاریاں صوبے میں پی ٹی آئی کے متحرک ہونے کی خبر دے رہی ہیں۔کچھ حلقے اس اچانک پیشرفت کو کسی ڈیل سے تعبیر کر رہے ہیں مگر معتبر ذرائع اس بات کی تصدیق کرتے ہیں کہ بانی پی ٹی آئی کے ساتھ کسی قسم کی نہ تو ڈیل ہو رہی ہے نہ ہی ڈھیل دی جارہی ہے ۔ حماد اظہر اور چوہدری پرویز الٰہی کا معاملہ مختلف ہے۔ چوہدری پرویز الٰہی رہائی کے بعد بغیر کسی انتظامی رکاوٹ کے اپنے گھر پہنچے تو حماد اظہر کے پی ٹی آئی کے سنٹرل سیکرٹریٹ پہنچنے کے آدھے گھنٹے بعد پولیس انہیں گرفتار کرنے پہنچ گئی مگر وہ پولیس کے پہنچنے سے قبل ہی پشاور روانہ ہونے میں کامیاب ہو گئے۔ دوسری جانب چوہدری پرویز الٰہی نے رہائی کے بعد ایک مرتبہ پھر اعادہ کیا کہ وہ بانی پی ٹی آئی کے ساتھ پوری طرح کھڑے ہیں اورآنے والے دنوں میں وہ پارٹی کے حوالے سے متحرک ہوتے دکھائی دے رہے ہیں۔ 

کچھ حلقے بانی پی ٹی آئی کو عدالتوں سے ملنے والے ریلیف کو نرمی کا رنگ دے رہے ہیں مگر اس کا حقیقت سے تعلق نہیں ہے۔ منگل کے روز اسلام آباد ہائیکورٹ نے بانی تحریک انصاف کے خلاف کاغذات نامزدگی میں مبینہ بیٹی ٹیریان کو چھپانے سے متعلق کیس خارج کر دیا جبکہ ایک ہفتہ قبل اسلام آباد ہائیکورٹ کی جانب سے 190 ملین پاؤنڈ سکینڈل کیس میں بانی تحریک انصاف کی ضمانت منظور کرتے ہوئے ان کی رہائی کا حکم دیا گیا ۔ سابق وزیر اعظم اب صرف دو کیسز میں گرفتار ہیں، ایک دورانِ عدت نکاح کا کیس اوردوسرا سائفر سے متعلق کیس ہے۔ دونوں کیسز میں سزاؤں کے خلاف اپیلیں اپنے آخری مراحل میں ہیں اور ان کے فیصلے جلد آسکتے ہیں۔ ماتحت عدالتوں میں توڑ پھوڑ کے کیسز میں بھی بانی پی ٹی آئی کیخلاف مقدمات میں بریت انہی دنوں میں ہوئی ہے۔حقائق یہ ہیں کہ ان کیسز میں ضمانتوں اور بریت کے احکامات عدالتوں نے سامنے موجود میرٹس کو دیکھتے ہوئے دیے ہیں ، پراسیکیوشن کی جانب سے اس میں کوئی نرمی نہیں دکھائی گئی، یہی وجہ ہے کہ بانی پی ٹی آئی کیخلاف آنے والے دنوں میں کچھ نئے کیسز تیار ہوتے دکھائی دے رہے ہیں۔ نیب ان کے خلاف توشہ خانہ کا ایک نیا کیس تیار کر رہی ہے جو توشہ خانہ سے لئے گئے تحائف کی فروخت سے متعلق ہے۔ ایسے میں سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ اگر کوئی ڈیل نہیں ہے تو سابق وزیر اعظم نے حماد اظہر و دیگر کو منظر عام پرآنے کا کیوں کہا ہے ؟ بانی پی ٹی آئی سمجھتے ہیں کہ عدلیہ اور ایگزیکٹو میں کچھ ایشوز پر تناؤ کی موجودہ صورتحال میں عدالتی محاذ پر ان کیلئے مشکلات کم ہوتی دکھائی دے رہی ہیں ، جس کے بعد انہوں نے فرنٹ فٹ پر کھیلنے کا فیصلہ کیا ہے۔

 

روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں

عید الاضحی:صبرووفا،اطاعت ربانی کی عظیم داستان

عید الاضحی ایک اسلامی تہوار ہے اور عبادت و خوشی کے اظہار کا دن بھی ہے۔ ہر قوم میں خوشی کے اظہار کے کچھ دن ہوا کرتے ہیں۔ زمانہ جہالیت میں بھی سرکار دوعالم ﷺجب ہجرت کرکے مدینہ منورہ تشریف لے گئے تو وہاں کے لوگ دو دن ناچ گانے کھیل کود میں گزارا کرتے۔

عید کے دن کیسے گزاریں؟

ادیان عالم میں ہر مذہب سے وابستہ ہر قوم اپنا ایک مذہبی تہوار رکھتی ہے۔ جس میں وہ اپنی خوشی کے اظہار کے ساتھ ساتھ اپنے جداگانہ تشخص کا اظہار بھی کرتی ہے۔مسلمانوں کی عید دیگر مذاہب و اقوام کے تہواروں سے بالکل مختلف حیثیت رکھتی ہے۔اہل اسلام کی عید اپنے اندر اطاعتِ خداوندی،اسوہ نبوی ،جذبہ ایثار و قربانی، اجتماعیت،غریب پروری، انسانی ہمدردی رکھتی ہے۔ جانور کی قربانی کرنا دراصل اسلامی احکامات پر عمل کرنے کیلئے خواہشات کی قربانی کا سنگ میل ہے۔

فلسفہ قربانی:تاریخ،اسلامی اور معاشی حیثیت

اقوام عالم کی تاریخ کا مطالعہ کرنے سے یہ بات سامنے آتی ہے کہ ہر قوم میں قربانی کا تصور کسی نہ کسی شکل میں موجود رہا ہے۔ ہزاروں سال پہلے جب انسان اپنے حقیقی خالق و مالک کو بھول چکا تھا اور اپنے دیوتاؤں کی خوشنودی حاصل کرنے کیلئے یا ان کے نام کی نذر و نیاز مانتے ہوئے جانور کو ذبح کر کے ان کے سامنے رکھ دیتا تھا اور یہ عقیدہ رکھتا کہ اب دیوتا مجھے آفات سے محفوظ رکھیں گے۔

پیغمبروں کی عظیم قربانی

ماہ ذوالحجہ قمری سال کا آخری مہینہ ہے، رب ذوالجلال نے جس طرح سال کے بارہ مہینوں میں سے رمضان المبارک کو اور پھر رمضان المبارک کے تین عشروں میں سے آخری عشرہ کو جو فضیلت بخشی ہے بعینہ ماہ ذوالحجہ کے تین عشروں میں سے پہلے عشرہ کو بھی خاص فضیلت سے نوازاہے۔

گرین شرٹس کو واپسی

آئی سی سی مینز ٹی20ورلڈکپ کے گزشتہ 8 ایڈیشنز میں تین بار سیمی فائنل اور تین بار فائنل کھیل کر ایک بار ورلڈ چیمپئن بننے والی پاکستان کرکٹ ٹیم امریکہ اور ویسٹ انڈیز میں جاری ٹی20ورلڈ کپ کے 9ویں ایڈیشن میں گروپ مرحلے سے ہی آئوٹ ہو گئی ہے اور یہ پہلا موقع ہے کہ ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ میں متاثر کن ریکارڈ کا حامل پاکستان فائنل یا سیمی فائنل تو بہت دور کی بات، سپرایٹ مرحلے کیلئے بھی کوالیفائی نہ کر سکا۔

ٹی 20 ورلڈ کپ 2024 اب تک کے ریکارڈز

بہترین بلے بازورلڈ کپ 2024ء میں اب تک سب سے زیادہ رنز بنانے والے کھلاڑی افغانستان کے رحمت اللہ گرباز ہیں، جنہوں نے 3 میچ کھیل کر 167رنز بنائے ہیں۔ اس فہرست میں امریکہ کے ارون جونز141 رنز کے ساتھ دوسرے، آسٹریلیا کے وارنر 115 رنز کے ساتھ تیسرے، افغانستان کے ابراہیم زردان 114 رنز کے ساتھ چوتھے اور امریکہ کے غوث 102 رنز کے ساتھ پانچویں نمبر پر ہیں۔