کیل مہاسے!خوبصورتی کے دشمن

تحریر : ڈاکٹر بلقیس


ایکنی یا کیل مہاسے قدیم اور عام جلدی بیماری ہے۔ یہ تکلیف دہ مرض عموماً آغاز جوانی میں ہارمونز میں عدم توازن کی وجہ سے پیدا ہوتا ہے اور تیس سال کی عمر کے بعد بہت کم ہوتا ہے تاہم بعض لوگوں میں عرصہ دراز تک یہ مسئلہ رہتا ہے۔ تقریباً80فیصد نوجوان لڑکے اور لڑکیاں کم یا زیادہ شدت کے ساتھ ایکنی کا شکار ہو جاتے ہیں۔ زیادہ تر لوگ ایکنی کو عمر کا طبعی تقاضا سمجھ کر علاج معالجہ کو نظر انداز کر دیتے ہیں جو کہ قطعی غلط ہے۔ اگر ایکنی کا بروقت مناسب علاج نہ کیا جائے تو مزید پیچیدگیاں پیدا ہونے کا امکان ہوتا ہے۔

ایکنی کیسے بنتی ہے؟:ہماری جلد میں چکنائی پیدا کرنیوالے غدود پائے جاتے ہیں۔ یہ غدود بالوں کے فولیکل کے ساتھ پائے جاتے ہیں جو ہتھیلی اور تلوے کے سوا سارے جسم میں ہوتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ جسم کے ان دو حصوں میں پسینہ تو آتا ہے مگر چکنائی نہیں ہوتی۔ یہ غدود ایک قسم کی چکنائی پیدا کرتے ہیں۔ ایکنی یا کیل مہاسے جلد پر اس جگہ بنتے ہیں جہاں یہ چربیلے غدود محرک اور سی بم کی بہت زیادہ مقدار خارج کرتے ہیں۔ یہ آئل مردہ خلیوں کے ساتھ مل کر جلد کے مساموں کو بند کر دیتا ہے اور یہ جگہ بیکٹیریا کی نشوونما کیلئے بہت موزوں ہوتی ہے جو سوجن، سرخی اور پیپ کا باعث بنتے ہیں۔

ایکنی کی پہلی حالت میں جلد پر کالے رنگ کی تل نما چیز نمودار ہوتی ہے جو کہ حقیقت میں سی بم گلینڈ کا مواد ہوتا ہے جو جلد پر موجود مساموں کو بند کر دیتا ہے۔ جیسے جیسے ایکنی بڑھتی ہے وہ Pimplesکی شکل اختیار کر لیتی ہے۔ اس حالت میں اگر کیلوں کو انگلیوں سے دبا کر نکالا جائے تو ایکنی اور زیادہ سوزش زدہ ہو جائے گی۔  ایکنی ختم ہو جانے پر جلد پر داغ چھوڑ جاتی ہے۔

اسباب: کیل مہاسوں کا ایک بڑا اور اہم سبب بلوغت کے آغاز پر ہار مونز پیدا کرنے والے غدودوں کی تیز سرگرمی ہے۔ اس کی دیگر وجوہات میں خرابی خون، جلد میں چکنائی کی زیادتی، ضعف ہضم، دائمی قبض، بواسیر، حفظان صحت کے اصولوں سے دوری، غذا میں بے اعتدالی جیسے گرم، مرغن، فاسٹ فوڈز، چائے، کافی اور میٹھی غذائوں کا بکثرت استعمال نیز خواتین میں علاوہ دیگر اسباب ایام حیض کی خرابی اس کے اسباب میں شامل ہیں۔ جذباتی اور ذہنی دبائو کا بھی جسمانی ہارمونی نظام سے گہرا تعلق ہے اس لئے ذہنی دبائو سے ایکنی بڑھ جاتی ہے جیسے بعض لوگوں میں امتحانات میں کیل مہاسے بڑھ جاتے ہیں۔ بعض ادویہ بھی کیل مہاسوں کا سبب بنتی ہیں اور کچھ اندرونی امراض بھی ایکنی کا باعث بنتے ہیں۔ 

علامات: ایکنی کی صورت میں جلد پر بلیک ہیڈز یا وائٹ ہیڈز، سرخ یا سفید چھوٹی چھوٹی پھنسیاں نکل آتی ہیں ۔ ان پھنسیوں کو دبانے پر ان سے پیپ جیسا مواد خارج ہوتا ہے اور اس جگہ گڑھا پڑ جاتا ہے اور آرام آنے کے بعد چہرے پر سیاہ رنگ کا داغ نمودار ہو جاتا ہے۔ایکنی کی سب سے زیادہ پائی جانیوالی قسم بلیک ہیڈز ہے جس سے متاثر ہونے والی جگہوں میں ناک، پیشانی، رخسار، ٹھوڑی، سینہ اور پشت ہے۔ 

علاج: کیل مہاسوں کے علاج کیلئے ضروری ہے کہ جسم کو ان فاسد اور زہریلے مادوں سے پاک کیا جائے۔ اس کیلئے ضروری ہے کہ متوازن غذا کا استعمال کیا جائے اور پانی کا استعمال زیادہ کریں۔ ثقیل، گرم اور تلی ہوئی اشیاء انڈا مچھلی اور تیز مرچ مصالحہ جات سے احتیاط کی جائے ۔ چاکلیٹ، کیک، پیسٹری، چائے، کافی، کولا مشروبات وغیرہ ایکنی کا موجب بنتے ہیں لہٰذا ان سے پرہیز کیا جائے اور زندگی حفظان صحت کے اصولوں کے مطابق گزارنے کی کوشش کریں۔

روایتی موثر طریقہ علاج:ایلوویرا جراثیم کش خصوصیت کی وجہ سے چہرے کے دانوں، کیل مہاسوں اور داغ دھبوں کو دور کرنے کیلئے اہم کردار ادا کرتی ہے چہرے پر لگانے کیلئے اس کے پتوں کو کاٹ کر گودا نکال لیں اور 15منٹ کیلئے لگائیں۔

شہد اور دارچینی میں قدرت نے ایسی خصوصیات رکھی ہیں کہ یہ ہر قسم کے بیکٹیریا کو زائل کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔ ایکنی کیلئے شہد دو چمچ اور دارچینی پائوڈر ایک چمچ مکس کرکے چہرے پر لگائیں۔لہسن کو چھیل کر اس کا رس دن میں دو مرتبہ متاثرہ مقام پر لگانے سے کیل اور پھنسیاں داغ چھوڑے بغیر تحلیل ہو جاتے ہیں۔ اگر دو تریاں روزانہ نگل لی جائیں توخون صاف ہو گا ایکنی اور دیگر جلدی امراض سے نجات ملے گی۔

 

 

روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں
Advertisement

بے وقت کی بھوک اور ڈائٹنگ

بہت سی لڑکیوں کو ہر وقت کچھ نا کچھ کھانے پینے اور منہ چلانے کی عادت ہوتی ہے، ایسی لڑکیاں اپنی بے وقت کی بھوک کو برداشت نہیں کر پاتیں اور اپنی ڈائٹنگ کو بالائے طاق رکھتے ہوئے کچھ نہ کچھ کھانے لگ جاتی ہیں۔

سسرال کو اپنا ہمنوابنانا مشکل نہیں

جب بھی کوئی لڑکی بابل کا انگنا چھوڑ کر پیا دیس سدھارتی ہے تو جہاں زندگی کے اس نئے موڑ پر بہت سی خوشیاں اس کی منتظر ہوتی ہیں وہیں کچھ مسائل اور الجھنیں بھی حصہ میں آتی ہیں۔ نئے گھر اور نئے ماحول میں خود کو ایڈجست کرنا آسان کام نہیں، کیونکہ لڑکی کی شادی تو محض ایک فرد سے ہوتی ہے لیکن مشرقی روایات کے مطابق گزارہ اسے پورے کنبے کے ساتھ کرنا ہوتا ہے۔

رہنمائے گھر داری

جلد میں جلن اکثر خواتین جلد میں جلن کی شکایت کرتی ہیں، ایسے محسوس ہوتا ہے جیسے جلد جھلس گئی ہو، وہ کسی بھی قسم کی کریم بھی استعمال نہیں کر سکتیں۔ ایسی خواتین کیلئے ایک انتہائی مفید نسخہ بتانے جا رہی ہوں۔امرود پکا ہوا ایک عدد، دہی 2چمچ، Coca powerایک کھانے کا چمچہ، انڈا ایک عدد۔ امرود کو اچھی طرح میش کر لیں، پھر اس میں باقی اجزاء ملا کر پیسٹ بنا لیں۔ اگر جلد میں زیادہ جلن ہو تو اس میں پودینہ یا کافور بھی مکس کر سکتی ہیں۔ اس پیسٹ کو 1گھنٹہ لگا کر سادہ پانی سے واش کر لیں۔

آج کا پکوان: چکن جلفریزی

اجزاء:چکن اسٹرپس آدھا کلو، تیل ایک چوتھائی کپ، پیاز2عدد کٹی اور درمیانی، ادرک2کھانے کے چمچ جولین کٹا ہوا، لال مرچ ایک کھانے کا چمچ پسی ہوئی، ہلدی ایک چوتھائی چائے کا چمچ، کالی مرچ آدھا چائے کا چمچ، گرم مصالحہ ایک چوتھائی چائے کا چمچ، مسٹرڈپائوڈر آدھا چائے کا چمچ، نمک 3چوتھائی چائے کا چمچ، سویا سوس ایک کھانے کا چمچ، کیچپ ایک چوتھائی کپ، ٹماٹر2عدد کیوبز میں کٹے ہوئے، شملہ مرچ ایک عدد اسٹرپس میں کٹی ہوئی، ہری مرچ 3عدد اسٹرپس میں کٹی ہوئی، ہرا دھنیا ایک کھانے کا چمچ کٹا ہوا۔

شاد عظیم آبادی اور جدید غزل

:تعارف اردو زبان کے ممتاز شاعر، نثر نویس اور محقق شاد عظیم آبادی 17جنوری 1846ء کو بھارتی صوبہ بہار کے دارالخلافہ پٹنہ میں پیدا ہوئے ۔ان کا تعلق ایک متمول گھرانے سے تھا۔ ان کا اصل نام نواب سید علی محمد تھا۔ ابتدائی تعلیم شاہ ولایت حسین سے حاصل کی۔ وہ کل وقتی شاعر تھے اور شاعری کا تحفہ انہیں قدرت کی طرف سے ملا تھا۔ شاعری میں ان کے کئی استاد تھے لیکن شاہ الفت حسین فریاد کو صحیح معنوں میں ان کا استاد کہا جا سکتا ہے۔ شاد عظیم آبادی نے غزل اور مثنوی کے علاوہ مرثیے، قطعات ،رباعیات اور نظمیں بھی لکھیں۔ 1876ء میں ان کا پہلا ناول ’’صورت الخیال‘‘شائع ہوا۔ ان کی دیگر تصنیفات میں ’’حیات فریاد نوائے وطن، انٹکاب کلام شاد، میخانہ الہام، کلام شاد‘‘ شامل ہیں۔ کچھ حلقوں کے مطابق انہوں نے نظم و نثر کی 60 کتابیں چھوڑی ہیں۔ انہوں نے 1927ء میں 81برس کی عمر میں وفات پائی۔

مستنصر کے ناولوں میں المیوں کا تسلسل

مستنصر حسین تارڑ کے ناول اس شعر کی فکری تاریخی اور عمرانی توسیع و تفسیر معلوم ہوتے ہیں وقت کرتا ہے پرورش برسوںحادثہ ایک دم نہیں ہوتا