حفیظ تائب :نعت کی شیریں آواز

تحریر : ڈاکٹر سرور حسین نقشبندی


کہ آپ اپنا تعارف۔۔۔۔ اُردو کے جدید نعت گو شعرا میں حفیظ تائب کا نام بڑی اہمیت کا حامل ہے ۔ان کا اصل نام عبدالحفیظ تھا ۔ وہ 14 فروری 1931ء کو پشاور میں پیدا ہوئے تھے۔ ان کے نعتیہ مجموعوں میں ’’صلو علیہ و آلہ‘‘، ’’سک متراں دی‘‘، ’’وسلمو تسلیما‘‘، ’’وہی یٰسیں وہی طہٰ‘‘، ’’لیکھ، تعبیر‘‘ اور ’’بہار نعت‘‘ وغیرہ شامل ہیں جبکہ ان کے علاوہ متعدد نثری کتب بھی شامل ہیں، جن میں تحقیق ان کا پسندیدہ موضوع ہے۔حکومت پاکستان نے ان کی خدمات کے اعتراف کے طور پر انہیں صدارتی ’’تمغہ برائے حسن کارکردگی ‘‘عطا کیا تھا۔وہ 12 اور13جون 2004 ء کی درمیانی شب لاہور میں وفات پاگئے اوراسی شہر میں مدفون ہیں۔

نعت کا فن ہمیشہ ہی سر سبز رہا، ثنا خوانان جمال و کمال نبی ﷺ سدا سدا شمعِ رُوئے جہاں تابِ رسولﷺ سے عقیدت کے دیئے جلاتے رہے۔ یہ مضمون سدا بہار ہے اس پر خزاں نہیں آنا ممکن ہی نہیں، اسے صرصر ایام افسردہ نہیں کر سکتی۔ یہ وہ گل ہے جو ہمیشہ کھلا رہتا ہے لیکن جس دورمیں دلوں کی کھیتیاں جلد جلد خشک اور ویران ہو جاتی ہیں اس دور میںسیرابی و شادابی کی ضرورت بھی بڑھتی جاتی ہے اور جتنی جتنی یہ ضرورت بڑھتی جاتی ہے اتنی اتنی نعت۔ یعنی مدح رسول ﷺ کا جذبہ بھی بڑھتا جاتا ہے۔ کہنا یہ ہے کہ نعت کا گلشن آج بھی خوب پھل پھول رہا ہے جس میں ہمارے بڑے بڑے شعراء کا کردار ناقابل فراموش ہے۔حفیظ تائب بھی ایک ایسے ہی شاعر ہیں۔

حفیظ تائب کی نعت دو لحاظ سے اہمیت رکھتی ہے، ایک تو اس اعتبار سے کہ اس میں اردو کی نعتیہ شاعری کی عام روایت سے ہٹ کر رسول مقبولﷺ سے عقیدت و محبت کا اظہار کیا گیا ہے۔ انہوں نے عام نعتوں کی پیروی میں رسول پاک کے سراپے کو موضوع نہیں بنایا۔ انہوں نے رسول اکرم ﷺ کی ذات کے احترام کو بھی برقرار رکھا ہے اور محبت کے ساتھ اسوہ حسنہ کی تفصیلات بھی بیان کی ہیں۔ دوسری اہم خوبی یہ ہے کہ تائب کے نزدیک نعت کہنا محض ثواب کمانے کا ذریعہ نہیں بلکہ انہوں نے جو کچھ کہا ہے اسے تخلیقی سطح پر محسوس بھی کیا ہے۔ یہ کلام ان اعلیٰ لمحات کی روداد ہے، جو کسی بھی بڑے شاعر کیلئے سرمایہ افتخار ہو سکتی ہے۔ مقصدی شاعری بالعموم پراپیگنڈہ اور صحافت سے ملوث ہو جایا کرتی ہے اور عام طور پر مقصدی شعراء مقصد کی عظمت کو فن پر قربان کردیتے ہیں۔اسی لئے وہ ہمارے دینی و ادبی سرمائے میں گراں قدر اضافہ کرنے کا باعث ہوئے ہیں۔

بقول احسان دانش ’’حفیظ تائب ایسے نعت گو ہیں جن کے کلام میں ان کا عشق و عقیدہ جھلکتا ہے وہ دل سے نعت کہتے ہیں اور زبان و  قلم سے ادا کرتے ہیں۔ لوگ ان پر رشک کرتے ہیں اور دعائیں دیتے ہیں‘‘۔ 

احمد ندیم قاسمی کا کہنا ہے کہ جدید اردو نعت گوئی میں حفیظ تائب کی آواز سب سے منفرد، نہایت بھرپور اور انتہائی شیریں آواز ہے، ان کی نعت میں عشق و عقیدت کی وارفتگی پر سلیقہ مندی کا پہرہ ہے۔ ساتھ ہی حفیظ تائب کی نعت تمام ممکنہ فنی محاسن سے آراستہ ہے اور ایک کڑی حد ادب قائم رکھ کر اس اعلیٰ معیار کی نعت کہنا، جو اس دور میں سند کا درجہ رکھتی ہے صرف حفیظ تائب کا اعزاز ہے۔

ڈاکٹر سید عبداللہ نے ان کے نعتیہ مجموعے ’’صلو علیہ‘‘ میں اپنے تفصیلی مضمون میں لکھا کہ حفیظ تائب گلشن کا ایک بلبل خوش نوا ہے، جس کی نعت، ایک زمانے پر اپنا نقش قائم کر چکی ہے۔ لہٰذا تعریف و تعارف کی کوئی سعی، ان کے کمال فن کی تنقیص کے برابر ہو گی۔یہ تو ظاہر ہے کہ ہر صنف کی طرح، نعت میں بھی ہر شاعر یا نعت گو کی ایک انفرادی آواز ہوتی ہے، جو اسے دوسروں سے ممتاز کرتی ہے۔ حفیظ تائب کی نعت کی بھی ایک انفرادی آواز ہے، جو عصر کے دوسرے نعت گوئوں سے انہیں ممتاز کرتی ہے۔

یہ آواز ہے، وفور شوق و عقیدت۔ وہ لہجہ جو ادب و لحاظ کا پاسدار ہے۔ حفیظ تائب کی نعت کو پڑھ کر کچھ یوں محسوس ہوتا ہے کہ وہ ایک ایسا وصاف ہے، جو حضور ﷺ کے رو برو کھڑا ہے، اس کی نگاہیں جھکی ہوئی ہیں اور اس کی آواز احترام کی وجہ سے دھیمی ہے، مگر نہ ایسی کہ سنائی ہی نہ دے اور نہ ایسی اونچی کہ سوئے ادب کا گمان گزرے۔ شوق ہے کہ اُمڈا آتا ہے اور ادب ہے کہ سمٹا جا رہا ہے۔

حفیظ کی ہر نعت میں یہ کیفیت موجود رہتی ہے، مگر ان کی نعت صرف آواز اور لہجہ ہی نہیں، اس میں حرف ِمطلب بھی ہے، یعنی وصف حسن بھی ہے، مگر غزل کا سا نہیں، اظہارِ شوق بھی ہے مگر گیت کا سا نہیں، توصیف بھی ہے، مگر قصیدے کے مانند نہیں، اس میں التجا و تمنا بھی ہے مگر گدایانہ نہیں۔ اس میں طلب و تقاضا بھی ہے مگر زر و مال اور متاع قلیل دنیا کا نہیں، انسانیت کیلئے چارہ جوئی کا حفیظ تائب اپنی نعت کا تجزیہ یوں کرتے ہیں۔

مدح نبیﷺ وہ چشمہ نور و حضور ہے

جس سے ہیں تابناک مرے خدو خالِ فن

شیرازہِ حیات ہے وابستہ حضورﷺ

پروردہ نگاہِ کرم اعتدالِ فن

حفیظ تائب نبی اکرم ﷺ کے حضور میں جب پیش ہوتے ہیں تو آج کے انسان اور آج کے مسلمان کی حاجتیں لے کر جاتے ہیں۔ وہ آج کے انسان اور آج کے مسلمان کی زبان میں آج کے تصورات کے حوالے سے بات کرتے ہیں۔ان سب باتوں کے ساتھ حفیظ تائب نے اپنی نعت کو مادی اغراض کے شوائب سے پاک رکھنے کی کوشش کی ہے اور اس روش سے بچے ہیں جو مادیت نواز شاعروں کے یہاںعام ہے کہ نعت جیسے پاک و صاف اور منزہ و مصفّا مضمون کو بھی مادی نظریات و تصورات کی تبلیغ کا ذریعہ بنا لیتے ہیں ۔

حفیظ تائب کی عقیدت، بے لوث، بے غرض ہر مادی مدعا سے پاک ایک سادہ انسان کے اس عشق سے مشابہت رکھتی ہے جو محبت برائے محبت کرتا ہو اور اسے یہ بھی معلوم نہ ہو کہ اسے کچھ مانگنا بھی ہے۔حفیظ تائب کی نعتیں، ہر دوسرے نعت گو سے الگ پہچانی جاتی ہیں۔ خلوص،ادب، دم بخود احترام، آنکھ میں نم، دل میں شوق اور شوق میں دبا ہوا غم۔

اسی لئے زبان و بیان میں کمال درجے کی شستگی اور شائستگی، سکون و سکوت اور برجستگی کے باوجود متانت جو لازمہ ادب ہے۔ آرائش کا یہ رنگ اور زیبائش کا یہ ڈھنگ ان کے کلام میں ہر جگہ جلوہ افزا ہے۔

ڈاکٹر غلام مصطفی خاں کا کہنا ہے کہ نعت بھی اظہار محبت و عقیدت کا ایک ذریعہ ہے جس کی ابتدا قرآن  مجیدسے ہوئی اور پھر صحابہ کرام ؓ میں حضرت کعب بن زبیر ؓ  اور حضرت حسان بن ثابت ؓ سے لے کر آج تک بے شمار مسلمانوں نے اسے اپنے لیے ذریعہ مغفرت سمجھا۔ حفیظ تائب بھی ان خوش نصیب نعت گو شعراء میں امتیازی شان رکھتے ہیں جنہوں نے شاعری ہی اس لئے کی کہ :

وقفِ ذکرِ شہِ ﷺ حجاز رہوں

نعت

پائی نہ تیرے لطف کی حد سید الوریٰﷺ

تجھ پر فدا مرے اب وجد سید الوریٰﷺ

تیری ثنا ورائے نگاہ و خیال ہے

فخرِ رُسل، حبیب صمد، سید الوریٰﷺ

تو مہرِ لازوال سرِ مطلعِ ازل

تو طاقِ جاں میں شمعِ ابد سید الوریٰﷺ

عرفان و علم، فہم و زکا تیرے خانہ زاد

اے جانِ عشق، روحِ خرد، سید الوریٰ ﷺ

تو اک اٹل ثبوت خدا کے وجود کا

تو ہر دلیلِ کفر کا رد، سید الوریٰ ﷺ

اہلِ جہاں کو ایسی نظر ہی نہیں ملی

دیکھے جو تیرا سایۂ قد سید الوریٰﷺ

گزرے جو اس طرف سے وہ گرویدہ ہو ترا

یوں عنبریں ہو میری لحد سید الوریٰﷺ

تائب کی یہ دُعا ہے کہ اس کی بیاضِ نعت

بن جائے مغفرت کی سند سید الوریٰﷺ

نعت

اے روحِ تخلیق! اے شاہ ﷺ لولاک!

ہو جائے پُر نُور کشکول ادراک

انوار تیرے، آثار تیرے

از دامنِ خاک تا اوجِ افلاک

تیرے سوالی، تیرے طلبگار

کیا قلب محزوں، کیا چشمِ نمناک

عالم ہے تجھ سے گلشن بداماں

عالم میں تھا کیا جُز خار و خاشاک

تیری نظر سے ہر دم رہے شاد

آباد، آزاد، یہ خطۂ پاک

شاہا! بہا کر مجھ کو نہ لے جائے

یہ سیلِ لحاد، یہ موجِ بے باک

تو جس کو چاہے جیسے نوازے

دنیا و دیں ہیں سب تیری املاک

روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں

عید کی خریداری خواتین کی سب سے بڑی پریشانی

عید کا کوئی دوسرا نام سوچا جائے تو وہ خوشی ہی ہو سکتاہے ،چاند رات کے گزرنے کے بعد آنے والی صبح وہ نوید لے کر آتی ہے جسے عید کہا جاتا ہے۔جب چہرے جگمگانے لگتے ہیں،ہتھیلیوں پر مہندی کے گہرے رنگ دیکھے جاتے ہیں، کپڑوں کی بہار اور چمک چہروں پر بھی نظر آنے لگتی ہیں۔بچے،خواتین اور مرد، بڑے ،بوڑھے سبھی اپنے اپنے انداز میںخوشی کے اظہار کے طریقے سوچنے لگتے ہیں۔

موسم گرما کی عید:میک اپ کیساکیا جائے !

ماہ ذی الحج کا چاند نظر آتے ہی عید کی تیاریوں میں تیزی آجاتی ہے۔عید کے دن ہر کسی کی کوشش اور خواہش یہ ہی ہوتی ہے کہ اس کی ڈریسنگ اورمیک اپ اچھے سے اچھا ہو تاتاکہ وہ سب سے خوبصورت اور الگ نظرآسکیں۔اس لیے آج ہم آپ کوچند ایسی باتیں بتائیں گے جن پر عمل کر کے آپ سب سے الگ اور منفرد نظر آ سکیں گی۔

آج کا پکوان

عید کی خاص بریانی اجزاء: چکن1/2کلو،نمک ایک چائے کا چمچ، لونگ دس سے بارہ عدد،دہی ایک کپ،ثابت گرم مصالحہ دو چائے کے چمچ،ادرک حسبِ ضرورت، کُٹی لال مرچ ایک چائے کا چمچ،ہری الائچی چار عدد،کالی الائچی چار عدد،ٹماٹر دو عدد،ہری مرچ چھ سے آٹھ عدد،کالا زیرہ 1/4 چائے کا چمچ،لہسن حسبِ ضرورت، کھانے کا پیلا رنگ ایک چُٹکی،کیوڑا 1/2چائے کا چمچ،گھی یا تیل ایک کپ،پیاز دوعدد،دودھ حسبِ ضرورت، چاول دو کپ،نمک حسبِ ذائقہ،دار چینی ایک ٹکڑا، لونگ چار عدد

کلاسیکی شاعری اور تفہیم غالب

اردو نثر اور شاعری کے عظیم ترین اساتذہ میں غالب کا مقام نمایاں حیثیت رکھتا ہے جو ان کی وفات کے ایک صدی اور تقریباً تین دہائیاں گزرنے کے بعد بھی ناقابل تسخیر رہا ہے۔ دراصل 1857ء آتے آتے ہی، جو جنوبی ایشیا کی سماجی، سیاسی اور ادبی و تہذیبی تاریخ کا نقطہ انقلاب تھا، غالب کی شہرت و مقبولیت روایت کے عظیم نمائندے اور نئے عہد کے پیش رو کی حیثیت سے قائم ہو چکی تھی اور اس کے بعد ہر نسل نے ان کی کلاسیکی توجہ انگیزی کی توثیق کی ہے۔

عبرتناک شکست کے بعد آج کڑا امتحان

ٹی 20 کرکٹ پر حکمرانی کی عالمی جنگ، امریکہ اور ویسٹ انڈیز کے میدانوں میں جاری، 20ٹیمیں مدمقابل ہیں۔دنیائے کرکٹ کے شائقین چوکوں چھکوں کی بہار سے لطف اندوز ہو رہے ہیں۔پاکستان کرکٹ ٹیم ٹی 20 کرکٹ کی عالمی جنگ میں اپنے پہلے ہی معرکے میں بری طرح ناکام رہی اور دنیائے کرکٹ کی نووارد ٹیم میزبان امریکہ کے ہاتھوں ٹی20ورلڈکپ کی سب سے بڑی اپ سیٹ شکست کا سامنا کرنا پڑا۔

جھوٹ کی سزا

پیارے بچو!دور کسی جنگل میں بلیوں کا ایک گروہ رہا کرتا تھا۔ان سب کی آپس میں گہری دوستی تھی۔تمام بلیاں مل جُل کر کھیلا کرتیں اور کھانے پینے بھی اکٹھی ہی نکلا کرتیں۔