نیوز الرٹ
  • بریکنگ :- پیپلزپارٹی پاکستان کودولخت کرنیوالی جماعت ہے،وسیم اختر
  • بریکنگ :- کرپٹ اورنااہل حکومت سندھ کوتباہ کررہی ہے،وسیم اختر
  • بریکنگ :- کراچی:ہم پاکستان بچانے نکلےہیں،ایم کیوایم رہنماوسیم اختر
  • بریکنگ :- کراچی کےعوام اپنےحق کیلئےقربانیاں دینےکوتیارہیں،وسیم اختر
  • بریکنگ :- ہم حقوق حاصل کرکےرہیں گے،ایم کیوایم رہنماوسیم اختر
  • بریکنگ :- پیپلزپارٹی کراچی کےساتھ دشمنی کررہی ہے،وسیم اختر
Coronavirus Updates

نعت ِ شریف

خصوصی ایڈیشن

تحریر : روزنامہ دنیا


رہتے تھے ان کی بزم میں یوں با ادب چراغ,جیسے ہوں اعتکاف کی حالت میں سب چراغ,جتنے ضیا کے روپ ہیں، سارے ہیں مستعار

اپنے ہنر سے جلتے ہیں دنیا میں کب چراغ!

 

گزری جہاں جہاں سے سواری حضور ؐکی 

حیراں تھی کہکشائیں تو ششدر تھے شب چراغ

 

ہر ہر قدم رفیق ہے سنت کی روشنی

جینے کا یوں سکھاتے ہیں دنیا کو ڈھب چراغ

 

رب سے دعا وہ ؐ کرتے تھے امت کے واسطے

راتوں کو بجھنے لگتے تھے گلیوں کے جب چراغ

 

دیکھو تو ان میں نور ِ ازل کی ہیں جھلکیاں

یہ جو دکھائی دیتے ہیں رستوں میں اب چراغ

 

امجدمیرے حضورؐ مجسم تھے روشنی

چہرہ تھا آفتاب تو لگتے تھے لب چراغ

امجد اسلام امجد

…٭٭…

نبی ؐ کاعشق ملا نعت تک رسائی ہوئی

تمام عمر کا حاصل یہی کمائی ہوئی

 

حرم میں اب بھی اذان ِ بلالی گونجتی ہے

یہ بستی سجدہ گزاروں کی ہے بسائی ہوئی

 

اسیؐ کے چشم کرم سے دلوں کے قفل کھلے 

اسی ؐکے دم سے اسیران کی رہائی ہوئی

 

اسیؐ کے پاس پڑی تھیں امانتیں ساری

اسیؐ کی جان کو خلق خدا تھی آئی ہوئی

 

سکوت شب کہیں پاتال میں اترا ہوا

سحر بہار کے مانند چہچہائی ہوئی

 

قلم سنوارا گیا،لوح کو نکھارا گیا

جمال حرف محبت سے روشنائی ہوئی

 

یقیں اجال دیا،راستہ بحال کیا

بٹھائی گرد گماں نے جو تھی اڑائی ہوئی

 

پھر اہل مکہ نے قدموں میں رکھ دئیے دل بھی

فضا اخوت و رحمت کی رنگ لائی ہوئی

 

دیا وہ آخری خطبہ،وہ آخری دستور 

ہر آنے والے زمانے کی رہنمائی ہوئی

اشرف جاوید

 

روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں
Advertisement

ویسٹ انڈیز کا دورہ پاکستان ،شائقین اسٹیڈیم جانے کو بے چین، ’’اومیکرون‘‘ کے سائے بھی منڈلانے لگے

کرکٹ دیوانوں کے لیے اچھی خبریں آنے کا موسم شروع ہونے کو ہے۔ پاکستان کے میدان آباد ہی نہیں بلکہ رونق افروز ہونے کو ہیں۔ ویسٹ انڈیز کادورہ اس حوالے سے شہر قائد سمیت ملک بھر کے تماشائیوں کیلئے بہت ہی مبارک ہے۔ کیربینز ٹیم نے 2018ء میں تین ٹی 20میچ کراچی میں کھیلے تھے، جس میں میزبان گرین شرٹس نے کامیابیاں سمیٹی تھیں۔ وائٹ واش شکست کھانے کے تقریبا ًپونے چار سال بعد وِیسٹ انڈیز پھر ہمارے مہمان بن رہے ہیں۔ اسے ایک سیریز کے بجائے کرکٹ میلہ کہا جائے تو غلط نہ ہو گا کہ خوش قسمتی سے سوفیصد تماشائیوں کو اسٹیڈیم آنے کی اجازت دے دی گئی ہے۔

جونیئرہاکی ورلڈکپ میں مایوس کن کارکردگی، ہاکی کا جنازہ ہے ذرا دھوم سے نکلے۔۔۔

4 بارکا عالمی چیمپیئن 2014ء میں ورلڈ کپ کیلئے کوالیفائی ہی نہیں کرسکا تھاجونیئرہاکی ورلڈکپ کاتاج کس کے سر سجے گا اس کافیصلہ آج ارجنٹائن اور جرمنی کے درمیان کھیلے جانے والے فائنل کے بعدہوگا۔ دونوں ٹیمیں آج ٹائٹل ٹرافی کیلئے دوسری بارمدمقابل ہوں گی۔آج کون سی ٹیم اچھا کھیلتی ہے اورکس کومایوسی کاسامنا کرنا پڑتاہے، ہمیں اس سے کیا؟ ہمیں تو صرف اس بات کا دکھ ہے کہ پاکستان میں قومی کھیل ہاکی مسلسل تنزلی کاشکار ہے۔ پاکستان ہاکی فیڈریشن کے حکام محض سیاست، اختیارات اور فنڈز کے حساب کتاب میں لگے رہتے ہیں اورکسی کو سبزہلالی پرچم کی سربلندی کااحساس نہیں ہے۔ ہمیں تو یہی افسوس ہے کہ ماضی میں ہاکی کے بے تاج بادشاہ پاکستان کی جونیئر ہاکی ورلڈکپ میں کارکردگی انتہائی مایوس کن رہی ،جس کاتسلسل درجہ بندی کے لیے کھیلے جانے والے میچز میں بھی جاری رہا اورپاکستانی ٹیم جنوبی افریقہ سے شکست کھا کر ٹاپ ٹین میں بھی جگہ بنانے میں ناکام رہی ہے۔ بھارت میں کھیلے جانے والے ہاکی کے جونیئر عالمی کپ میں جنوبی افریقہ نے قومی ٹیم کو شوٹ آئوٹ پر ہرادیا۔پاکستان اور جنوبی افریقہ کے درمیان میچ مقررہ وقت میں 3،3گول سے برابر رہا تھااور فیصلہ شوٹ آئوٹ پر ہوا جس میں جنوبی افریقہ نے1-4 سے کامیابی حاصل کی۔

تلاش

افریقہ کے دور دراز گائوں میں ایک غریب کسان رہتا تھا۔ وہ ایک خوش مزاج، خوشحال اور قناعت پسند انسان تھا اور پر سکون زندگی گزار رہا تھا۔

شریر چوہا

جمیلہ کا گھر ایک خوبصورت باغ کے درمیان تھا۔اطراف میں رنگ برنگے پھولوں کی کیاریاں لگی تھیں۔ ان کے علاوہ اس میں آم، امرود، کیلے، چیکو اور ناریل وغیرہ کے درخت بھی تھے۔ جمیلہ بڑی اچھی لڑکی تھی۔ صبح سویرے اٹھتی نماز اور قرآن پڑھتی اور پھر باغ کی سیر کو نکل جاتی۔ گھر آکر اپنی امی کا ہاتھ بٹاتی اور پھر سکول چلی جاتی۔ اس کی استانیاں اس سے بہت خوش رہتی تھیں، کیوں کہ وہ ماں باپ کی طرح ان کا کہنا بھی مانتی تھی اور خوب جی لگا کر پڑھتی تھی۔ جمیلہ کے کمرے میں کتابوں اور کھلونوں کی الماریاں خوب سجی ہوئی تھیں۔ فرصت کے اوقات میں وہ کتابیں پڑھتی اور کبھی نت نئے کھلونوں سے بھی کھیلتی۔

چرواہے کا احسان

انگریز جب ہندوستان آئے تو اپنے ساتھ مشینیں بھی لائے۔ اس وقت تک یورپ میں ریل اور دوسری مشینیں ایجاد ہو گئی تھیں۔ انگریزوں نے ہندوستان میں ریلوں کی تعمیر کا کام شروع کیا۔ برصغیر پاک و ہند میں ریل کی پہلی لائن بمبئی سے تھانے تک پہنچائی گئی۔ اس کے بعد مختلف حصوں میں پٹریاں بچھائی جانے لگیں۔ پہاڑی علاقوں میں پٹریوں کا بچھانا ایک بے حد مشکل کام تھا۔ انجینئروں نے پہاڑوں میں سرنگیں کھود کر لائنوں کو گزارا۔ ہمارے ہاں کوئٹہ لائن اس کی ایک شاندار مثال ہے۔

پہیلیاں

گونج گرج جیسے طوفان،چلتے پھرتے چند مکانجن کے اندر ایک جہان،پہنچے پنڈی سے ملتان(ریل گاڑی)