نیوز الرٹ
  • بریکنگ :- کامیابی پراللہ تعالیٰ کےشکرگزارہیں،علی پرویز ملک
  • بریکنگ :- پنجاب میں پیپلزپارٹی بےنقاب ہوگئی ،علی پرویزملک
  • بریکنگ :- پیپلزپارٹی کی کونسی کارکردگی ہےکہ ووٹ 5 سے 20 ہزارہوگیا،علی پرویز
  • بریکنگ :- بلاول بھٹوکراچی کاکچرانہیں اٹھاسکتے،علی پرویزملک
  • بریکنگ :- ضمنی الیکشن میں ٹرن آؤٹ کم ہوتاہے،علی پرویزملک
Coronavirus Updates

رحمت الٰہی سے مایوسی کفر, اللہ کی رحمت سے ناامید ہونا کبیرہ گناہ ہے (صححیح الجامع: 4603)

خصوصی ایڈیشن

تحریر : مفتی محمد اویس اسماعیل


’’ اے نبی ﷺ! آپ کہہ دیجیے، اے میرے وہ بندو جو اپنی جانوں پر ظلم کر بیٹھے ہو، تم اللہ کی رحمت سے مایوس نہ ہو، بیشک اللہ سارے گناہ معاف فرمادے گا، وہ یقیناً بڑا بخشنے والا، بہت رحم فرمانے والا ہے‘‘ (سورۃ الزمر، 53)۔

یہ ایک حقیقت ہے کہ شیطان انسان کا کھلا دشمن ہے۔ اس کی ہمیشہ یہ کوشش رہتی ہے کہ کسی بھی طرح انسان کو خدا سے دور کر دے، جب ایک بار وہ انسان کو خدا کے راستے سے بھٹکانے میں کامیاب ہو جاتا ہے تو پھر اس کی اگلی چال یہ ہوتی ہے کہ انسان کو خدا کی رحمت سے مایوس کردے۔ اس طرح اسے ہمیشہ رب کی نافرمانی والے راستے پر چلاتا رہے لیکن اللہ تعالیٰ نے انسان کو سب سے زیادہ جس چیز کی امید دلائی ہے وہ اس کی رحمت ہی ہے۔ 

قرآن مجید اور احادیث مبارک میں انسانوں کو مختلف پیرایوں اور انداز میں سب سے زیادہ خدا کی رحمت کی امید دلائی گئی ہے۔ رحمت اللہ تعالیٰ کی صفات میں سے ایک صفت ہے جس سے اس نے اپنے آپ کو متصف کیا ہے اور یہ وہ صفت ہے جو کائنات کی ہر چیزپر حاوی ہے۔ پوری کائنات رحمت الٰہی کی مظہر ہے۔ اسی لیے قرآنِ مجید میں ارشاد فرمایا: ’’میری رحمت ہر چیز سے وسیع ہے‘‘ (الاعراف، 156) اور اسی لیے اللہ تعالی نے اپنے آخری رسولﷺ کو سراپا رحمت بنا کر بھیجا (الانبیاء،107)۔ اسی طرح شرعی احکامات میں بھی رحمت کی صفت کو نمایاں حیثیت دی ہے۔ 

ابو الکلام آزاد لکھتے ہیں: قرآن پاک نے خدا کی کسی صفت کو بھی اس کثرت کے ساتھ نہیں دہرایا اور نہ کوئی مطلب اس درجہ اس کے صفحات میں نمایاں ہے جس قدر رحمت ہے۔ اگر قرآن کے وہ تمام مقامات جمع کیے جائیں جہاں ’’رحمت‘‘ کا ذکر کیا گیا ہے تو تین سو سے زائد ہوں گے۔ اگر وہ تمام مقامات بھی شامل کرلیے جائیں جہاں اگر چہ لفظ رحمت استعمال نہیں ہوا لیکن ان کا تعلق رحمت ہی سے ہے، مثلا ربوبیت، مغفرت، رافت،کرم،حلم، عفو وغیرہ تو پھر یہ تعداد اس حد تک پہنچ جاتی ہے کہ کہا جاسکتا ہے: قرآن اوّل سے آخر تک اس کے سوا کچھ نہیں ہے کہ رحمت ِالٰہی کا پیام ہے (اُم الکتاب، ص 126)۔ اس کی رحمت کی کوئی حد اور انتہا نہیں ہے اس لیے کہ یہ اس خدا کی صفت ہے جس کی اپنی کوئی حد نہیں ہے۔

خدا کے نافرمان اور رحمت ِالٰہی 

ہمارے معاشرے میں ایسے افراد بھی موجود ہیں جن کا خیال ہوتا ہے کہ وہ بہت گناہ گار ہیں وہ کیسے نماز کے لیے مسجد جائیں اور خدا کے حضور سجدہ ریز ہوں! یاد رہے کہ یہ شیطانی وسوسہ ہے اور اس طرح کے خیالات کے ذریعے شیطان ہمیں اللہ کے قریب ہونے سے روکنا چاہتا ہے۔ اس لیے ان خیالات کو جھٹک کر فوراً اللہ کے حضور سجدہ کر لینا چاہیے ۔ قرآن مجید میں بڑے سے بڑے گناہ گار کو حتیٰ کہ خدا کو نہ ماننے والوں کو بھی اس کی رحمت کی امید دلا کر خدا کے قریب ہوجانے اور اس کی فرمانبرداری اختیار کرنے کی طرف بلایا گیاہے۔ خدا کی طرف لوٹ آنے پر پچھلے تمام گناہ معاف کر دینے کی نوید سنائی گئی ہے۔ اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں: اے نبی ﷺآ!پ کہہ دیجیے اے میرے وہ بندوجو اپنی جانوں پر ظلم کر بیٹھے ہو تم اللہ کی رحمت سے مایوس نہ ہو، بیشک اللہ سارے گناہ معاف فرمادے گا،وہ  یقینا بڑا بخشنے والا، بہت رحم فرمانے والا ہے‘‘ (الزمر، 53)۔ اس آیت مبارکہ کو قرآنِ مجید کی امید بھری آیت کہا گیا ہے۔ اس میں اللہ تعالیٰ نے تمام انسانوں کو چاہے وہ مسلمان ہو یا نہ ہو اپنا بندہ کہا ہے اور چاہے وہ بڑے سے بڑا گناہ گار ہی کیوں نہ ہو، صرف ایک دو گناہ کرنے والا نہیں بلکہ گناہوں میں حد پار کر دینے والے کو بھی اس آیت میں مخاطب کیا گیا ہے۔ سب کو یہ امید دلائی کہ تم اس کی رحمت سے مایوس نہ ہو، بے شک وہ تمام گناہ بخش دے گا۔

ابو ہریرہ ؓ ایک حدیث روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہﷺ نے ارشاد فرمایا: ’’جب اللہ نے مخلوق کو پیدا کیا تو اپنی کتاب میں جو اس کے عرش کے پاس رکھی ہوئی ہے اپنے بارے میں لکھا کہ میری رحمت میرے غضب پر غالب رہے گی (بخاری، 7404) یعنی اللہ تعالیٰ کو انسانوں کو سزا دے کر نہیں بلکہ انہیں معاف کرکے خوشی ہوتی ہے۔ اسی لیے اللہ تعالیٰ اپنے بندوں سے کتنی محبت کرتے ہیں اور انہیں اپنی رحمت کی کتنی امید دلاتے ہیں ایک حدیث مبارک میں اللہ کے رسول ﷺ نے اس کو واضح کیا ہے۔ حضرت عمر ؓ یہ حدیث روایت کرتے ہوئے فرماتے ہیں کہ نبی کریمﷺ کے پاس کچھ قیدی لائے گئے۔ ان قیدیوں میں سے ایک عورت ادھر سے ادھر دوڑتی پھر رہی تھی۔ جیسے ہی اسے ایک بچہ نظر آیا اس نے اس بچے کو پکڑ کے اپنے سینے سے لگالیا اور دودھ پلانے لگی۔ رسول اللہ ﷺنے صحابہ کرامؓ سے پوچھا: تمہارا کیا خیال ہے، کیا یہ عورت اپنے بچے کو آگ میں ڈال سکتی ہے؟صحابہ کرام ؓ نے عرض کی نہیں۔ آپﷺ نے ارشادفرمایا: یہ عورت جتنی اپنے بچے پر مہربان ہے اللہ تعالیٰ اپنے بندوں پر اس سے بھی زیادہ مہربان ہے (بخاری ، 5999)۔ یہ حدیث رب کے نافرمانوں کو اس کی رحمت کی امید دلاتی ہے اور انہیں رب کی طرف لوٹ جانے کی ترغیب دیتی ہے۔ 

اسی طرح ایک حدیث قدسی ہے (وہ حدیث جس میں رسول اللہ ﷺ رب سے روایت کرتے ہیں) جسے حضرت انس ؓ نے رسول اللہ ﷺ سے روایت کیا وہ کہتے ہیں کہ: میں نے رسول اللہﷺ کو فرماتے ہوئے سنا کہ ’’اللہ تعالیٰ فرماتا ہے، اے ابن آدم! جب تک تو مجھے پکارتا رہے گا اور مجھ سے امیدیں وابستہ رکھے گا تو میں تجھے معاف کرتا رہوں گا۔چاہے تیرے اعمال جیسے بھی ہوں مجھے تیرے گناہوں کی کوئی پروا نہیں، اے ابن آدم! تیرے گناہ آسمان کی بلندیوں تک بھی پہنچ جائیں اور تومجھ سے معافی مانگے تو میں تجھے معاف کردوں گا۔ اے ابن آدم! اگر تو اتنے گناہ لے کر آئے کہ روئے زمین بھر جائے تو میں تب بھی تیری مغفرت کر دوں گا،بشرطیکہ تو نے شرک نہ کیا ہو۔ (ترمذی،3540)۔اسی لیے اللہ تعالیٰ سے اچھاگمان رکھنا واجب ہے۔ بندہ رب کے بارے میں جیسا گمان کرے گا اللہ تعالیٰ اسی طرح اس سے برتاؤ کرے گا۔ حدیث قدسی ہے: ’’اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں: میں اپنے بندے کے میرے بارے میں گمان کے مطابق ہوتا ہوں۔ (بخاری، 7505)۔ 

ہمیں اس کی رحمت سے ہرگز مایوس نہیں ہونا چاہیے، اگر وہ چاہے تو کسی کے ایک گناہ پر ایسی پکڑ کرے کہ ساری نیکیاں کم پڑ جائیں اور اگر وہ چاہے تو کسی کو ایک نیکی پر اپنی رحمت سے ایسا نوازے کہ بڑے بڑے گناہوں سے درگزر کر دے۔ یہ رب کی رحمت ہی ہے کہ وہ گناہوں پر فوراً انسان کی پکڑ نہیں کرتا ۔’’اگر اللہ لوگوں کے گناہوں پر ان کی پکڑ شروع کردے تو زمین میں کوئی ذی روح باقی نہ رہے لیکن وہ انسانوں کو ڈھیل دیتا ہے۔‘‘(سورۃ فاطر، 45)

رحمت خدائی صفت اور انسانی کردار

خدا کا ہم سے بھی یہ مطالبہ ہے کہ ہم خدا کی یہ صفت اپنے اندر پیدا کریں اور اس کی مخلوق پر رحم کریں تاکہ اللہ تعالیٰ ہم پر رحم کرے۔ نبی کریمﷺ نے ارشاد فرمایا:’’رحم کرنے والوں پر رحمن (اللہ تعالیٰ) مہربان ہو گا۔ اس لیے جو زمین پر ہیں ان پر رحم کرو تم پر وہ ذات رحم کریگی جو آسمان میں ہے۔(شعب الایمان، 10537)

 اسی طرح ایک اور حدیث میں ارشاد فرمایا: رحم کرو، تم پر بھی رحم ہوگا، اور بخش دو تمہیں بھی بخش دیا جائیگا (مسند احمد)۔ حضرت جریر ؓ کہتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ ﷺ کو فرماتے ہوئے سنا: جو لوگوں پر رحم نہیں کریگا اللہ بھی اس پر رحم نہیں کریگا(مسند احمد) ۔

رحمت ِالٰہی کے مستحقین 

قرآن و حدیث میں رحمت ِالٰہی کا حقدار بننے کے لیے ہدایات دی گئی ہیں جو بھی ان صفات کو اپنے اندر پیدا کرے گا، خدا اس کو اپنی رحمت کے سائے میں لے لے گا۔ چند مستحقین رحمت درج ذیل ہیں۔

اللہ پر ایمان رکھنے والے (النساء، 175)، اللہ اور اس کے رسول ﷺ کی اطاعت کرنے والے (آل عمران، 132)، قرآن پر عمل کرنے والے (الانعام، 155)، قرآن مجید کی تلاوت کو بغور سننے والے (الاعراف، 204)، توبہ و استغفار کرنے والے (المائدہ، 39)، تقویٰ اختیار کرنے والے (الانعام، 155)، صبر کرنے والے(النحل، 110)، احسان کرنے والے (الاعراف،56)، صلح کرانے والے (الحجرات، 10)،راہِ خدا میں خرچ کرنے والے (التوبہ، 99)، منکر سے روکنے والے (التوبہ، 17)، درگزر کرنے والے (التغابن، 14)، نبی کریم ﷺ پر درود بھیجنے والے (مسلم، 408)۔

اس لیے زندگی کے کسی بھی مرحلے پر ہمیں خدا کی رحمت سے مایوس ہونے کی ضرورت نہیں ہے اور ہم بھی اپنے اندر رحم کرنے کی صفت پیدا کریں تاکہ ہمارے ساتھ بھی اسی طرح کا معاملہ کیا جائے۔ 

(مفتی محمد اویس اسماعیل اسلامی سکالر اور الاخوان مجلسِ افتاء کراچی کے ایگزیکٹیو ڈائریکٹر ہیں)

روزنامہ دنیا ایپ انسٹال کریں
Advertisement

ویسٹ انڈیز کا دورہ پاکستان ،شائقین اسٹیڈیم جانے کو بے چین، ’’اومیکرون‘‘ کے سائے بھی منڈلانے لگے

کرکٹ دیوانوں کے لیے اچھی خبریں آنے کا موسم شروع ہونے کو ہے۔ پاکستان کے میدان آباد ہی نہیں بلکہ رونق افروز ہونے کو ہیں۔ ویسٹ انڈیز کادورہ اس حوالے سے شہر قائد سمیت ملک بھر کے تماشائیوں کیلئے بہت ہی مبارک ہے۔ کیربینز ٹیم نے 2018ء میں تین ٹی 20میچ کراچی میں کھیلے تھے، جس میں میزبان گرین شرٹس نے کامیابیاں سمیٹی تھیں۔ وائٹ واش شکست کھانے کے تقریبا ًپونے چار سال بعد وِیسٹ انڈیز پھر ہمارے مہمان بن رہے ہیں۔ اسے ایک سیریز کے بجائے کرکٹ میلہ کہا جائے تو غلط نہ ہو گا کہ خوش قسمتی سے سوفیصد تماشائیوں کو اسٹیڈیم آنے کی اجازت دے دی گئی ہے۔

جونیئرہاکی ورلڈکپ میں مایوس کن کارکردگی، ہاکی کا جنازہ ہے ذرا دھوم سے نکلے۔۔۔

4 بارکا عالمی چیمپیئن 2014ء میں ورلڈ کپ کیلئے کوالیفائی ہی نہیں کرسکا تھاجونیئرہاکی ورلڈکپ کاتاج کس کے سر سجے گا اس کافیصلہ آج ارجنٹائن اور جرمنی کے درمیان کھیلے جانے والے فائنل کے بعدہوگا۔ دونوں ٹیمیں آج ٹائٹل ٹرافی کیلئے دوسری بارمدمقابل ہوں گی۔آج کون سی ٹیم اچھا کھیلتی ہے اورکس کومایوسی کاسامنا کرنا پڑتاہے، ہمیں اس سے کیا؟ ہمیں تو صرف اس بات کا دکھ ہے کہ پاکستان میں قومی کھیل ہاکی مسلسل تنزلی کاشکار ہے۔ پاکستان ہاکی فیڈریشن کے حکام محض سیاست، اختیارات اور فنڈز کے حساب کتاب میں لگے رہتے ہیں اورکسی کو سبزہلالی پرچم کی سربلندی کااحساس نہیں ہے۔ ہمیں تو یہی افسوس ہے کہ ماضی میں ہاکی کے بے تاج بادشاہ پاکستان کی جونیئر ہاکی ورلڈکپ میں کارکردگی انتہائی مایوس کن رہی ،جس کاتسلسل درجہ بندی کے لیے کھیلے جانے والے میچز میں بھی جاری رہا اورپاکستانی ٹیم جنوبی افریقہ سے شکست کھا کر ٹاپ ٹین میں بھی جگہ بنانے میں ناکام رہی ہے۔ بھارت میں کھیلے جانے والے ہاکی کے جونیئر عالمی کپ میں جنوبی افریقہ نے قومی ٹیم کو شوٹ آئوٹ پر ہرادیا۔پاکستان اور جنوبی افریقہ کے درمیان میچ مقررہ وقت میں 3،3گول سے برابر رہا تھااور فیصلہ شوٹ آئوٹ پر ہوا جس میں جنوبی افریقہ نے1-4 سے کامیابی حاصل کی۔

تلاش

افریقہ کے دور دراز گائوں میں ایک غریب کسان رہتا تھا۔ وہ ایک خوش مزاج، خوشحال اور قناعت پسند انسان تھا اور پر سکون زندگی گزار رہا تھا۔

شریر چوہا

جمیلہ کا گھر ایک خوبصورت باغ کے درمیان تھا۔اطراف میں رنگ برنگے پھولوں کی کیاریاں لگی تھیں۔ ان کے علاوہ اس میں آم، امرود، کیلے، چیکو اور ناریل وغیرہ کے درخت بھی تھے۔ جمیلہ بڑی اچھی لڑکی تھی۔ صبح سویرے اٹھتی نماز اور قرآن پڑھتی اور پھر باغ کی سیر کو نکل جاتی۔ گھر آکر اپنی امی کا ہاتھ بٹاتی اور پھر سکول چلی جاتی۔ اس کی استانیاں اس سے بہت خوش رہتی تھیں، کیوں کہ وہ ماں باپ کی طرح ان کا کہنا بھی مانتی تھی اور خوب جی لگا کر پڑھتی تھی۔ جمیلہ کے کمرے میں کتابوں اور کھلونوں کی الماریاں خوب سجی ہوئی تھیں۔ فرصت کے اوقات میں وہ کتابیں پڑھتی اور کبھی نت نئے کھلونوں سے بھی کھیلتی۔

چرواہے کا احسان

انگریز جب ہندوستان آئے تو اپنے ساتھ مشینیں بھی لائے۔ اس وقت تک یورپ میں ریل اور دوسری مشینیں ایجاد ہو گئی تھیں۔ انگریزوں نے ہندوستان میں ریلوں کی تعمیر کا کام شروع کیا۔ برصغیر پاک و ہند میں ریل کی پہلی لائن بمبئی سے تھانے تک پہنچائی گئی۔ اس کے بعد مختلف حصوں میں پٹریاں بچھائی جانے لگیں۔ پہاڑی علاقوں میں پٹریوں کا بچھانا ایک بے حد مشکل کام تھا۔ انجینئروں نے پہاڑوں میں سرنگیں کھود کر لائنوں کو گزارا۔ ہمارے ہاں کوئٹہ لائن اس کی ایک شاندار مثال ہے۔

پہیلیاں

گونج گرج جیسے طوفان،چلتے پھرتے چند مکانجن کے اندر ایک جہان،پہنچے پنڈی سے ملتان(ریل گاڑی)